Saturday , September 23 2017
Home / Top Stories / حیدرآباد میں گرفتار نوجوان اجمیر منتقل

حیدرآباد میں گرفتار نوجوان اجمیر منتقل

ہوٹل دربار پیالس پر دھاوا ، اہم شواہد اکھٹا
حیدرآباد ۔ 15 جولائی (سیاست نیوز) حیدرآبادی نوجوانوں کا داعش سے مبینہ رابطہ کیس کی تحقیقات میں قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آ ئی اے) نے شدت پیدا کرتے ہوئے پولیس تحویل میں موجود دو نوجوانوں کو راجستھان کے شہر اجمیر منتقل کیا اور وہاں پر بعض ہوٹل و گیسٹ ہاؤز پر دھاوے کرتے ہوئے اہم شواہد اکھٹا کئے۔ بتایا جاتا ہیکہ این آئی اے کی خصوصی ٹیم نے ابراہیم یزدانی اور اس کے ایک ساتھی کو اجمیر منتقل کرتے ہوئے درگاہ بازار میں واقع ہوٹل دربار پیالیس پر دھاوا کیا جہاں سے چیک ان رجسٹرس اور سی سی ٹی وی کیمروں کی ریکارڈنگ حاصل کی گئی۔ سرکاری ذرائع نے دعویٰ کیا کہ مذکورہ نوجوان اجمیر کی ایک ہوٹل میں 10 تا 14 جون تک وہاں مقیم تھے وہاں مبینہ دہشت گرد سرگرمیوں کے سلسلہ میں بعض افراد سے رقومات حاصل کئے۔ اس سلسلہ میں ربط پیدا کئے جانے پر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس ضلع اجمیر مسٹر نتن دیپ بلوگن نے بتایا کہ یزدانی اور اس کے ساتھیوں نے 10 جون کو ہوٹل میں داخلہ لیا اور وہ اپنی سرگرمیاں جاری رکھے ہوئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ گرفتار نوجوانوں کی نقل و حرکت پر انٹلیجنس ایجنسیاں نظر رکھی ہوئی تھیں۔ این آئی اے نے اس کارروائی میں ملزمین کی جانب سے ہوٹل کی شناخت کروائی اور بعدازاں اہم شواہد اکھٹا کئے۔ واضح رہیکہ این آئی اے نے پرانے شہر کے 10 مقامات پر بیک وقت دھاوے کرتے ہوئے پانچ نوجوانوں کو گرفتار کیا تھا اور انہیں 12 دن کی تحویل میں لے کر پوچھ تاچھ کی تھی۔ تحویل ختم ہونے پر این آئی اے نے یزدانی برادران کو مزید 8 دن یعنی 19 جولائی تک پولیس تحویل میں توسیع کروائی تھی اور ان تحقیقات کے سلسلہ میں اجمیر اور ناندیڑ منتقل کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT