Monday , August 21 2017
Home / ہندوستان / خاتون ملازمین کے ساتھ جنسی ہراسانی کے واقعات

خاتون ملازمین کے ساتھ جنسی ہراسانی کے واقعات

شکایات کی یکسوئی میں ناکامی پر آج مشاورتی اجلاس
نئی دہلی۔/25اکٹوبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیر بہبود خواتین و اطفال مینکا گاندھی نے کل 3مرکزی وزارتوں کے نمائندوں کا اجلاس طلب کیا ہے تاکہ خاتون ملازمین کی جانب سے جنسی ہراسانی کی شکایتوں کی یکسوئی میں ناکامی پر مشاورت کی جائے۔ وزارت ریلوے، اسپورٹس اور فروغ انسانی وسائل میں داخلی شکایتی کمیٹی کے سربراہان مینکا گاندھی سے ملاقات کریں گے۔ کئی ایک خاتون ملازمین ( ویمن ایمپلائیز) نے وزارت کو یہ تحریری اطلاع دی ہے کہ جنسی ہراسانی سے متعلق شکایتوں کی یکسوئی میں تاخیر کی جارہی ہے۔ ایک سینئر عہدیدار نے بتایا کہ شکایتوں میں اضافہ تشویشناک حد تک پہنچ گیا ہے جبکہ تین چار شکایتیں راست منیکا گاندھی کو روانہ کی گئی ہیں جبکہ بیشتر شکایات مذکورہ وزارتوں میں گذشتہ دو سال سے معرض التواء ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ایک شکایت وزارت ریلوے میں جوائنٹ سکریٹری رتبہ کے عہدیدار کی ہے۔ جب انٹرنل کمپلینٹ کمیٹی سے کارروائی کے بارے میں دریافت کیا گیا تو بتایا گیا کہ کوئی شکایت درج نہیں کروائی گئی ہے جبکہ شکایت کی ایک کاپی ( نقل ) ہمارے پاس دستیاب ہے، ایک اور کیس میں واقعہ جرم کے عینی شاہدین ہونے کے باوجود شکایت کو بند کردیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ کل کے اجلاس میں مذکورہ وزارتوں ( ریلوے۔ اسپورٹس اور ایچ آر ڈی ) میں شکایات کی یکسوئی کے مروجہ طریقہ کار پر نظر ثانی کی جائے گی اور تمام سرکاری اداروں کی سخت گیر رہنمایانہ خطوط جاری کئے جائیں گے جو کہ خانگی شعبہ کیلئے بھی قابل اطلاق ہوں گے۔ واضح رہے کہ سرکاری دفاتر اور اداروں میں خاتون ملازمین کے ساتھ جنسی ہراسانی کی روک تھام کیلئے 2013 میں ایک قانون نافذ کیا گیا ہے اور کسی بھی ادارہ 10یا اس سے زائد ملازمین ہونے پر ایک داخلی شکایات کمیٹی کی تشکیل ضروری ہوگی جوکہ جنسی ہراسانی کی شکایات کا جائزہ لے کر مناسب کارروائی کرے گی۔ اگر یہ کمیٹی اندرون 90 یوم شکایت کی یکسوئی میں ناکام ہوجانے پر ادارہ کو 50ہزار روپئے جرمانہ ادا کرنا پڑیگا۔

TOPPOPULARRECENT