Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / خانگی اسکولوں کی تعلیمی فیس کی حد مقرر کرنا ضروری،قانون وضع کرنے کا مطالبہ ، پیرنٹس اسوسی ایشن کا بیان

خانگی اسکولوں کی تعلیمی فیس کی حد مقرر کرنا ضروری،قانون وضع کرنے کا مطالبہ ، پیرنٹس اسوسی ایشن کا بیان

حیدرآباد ۔ 11 ۔ اگست : ( سیاست نیوز) : حیدرآباد اسکولس پیرنٹس اسوسی ایشن نے حکومت تلنگانہ سے مطالبہ کیا کہ وہ اولیائے طلباء سے طلباء کی اسکولی فیس کی بے تحاشہ اور من مانی وصولی کے مرتکب شہر حیدرآباد میں واقع تمام خانگی اسکولوں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کرتے ہوئے خانگی اسکولوں کی تعلیمی فیس کی حد مقرر کرنے سے متعلق قانون وضع کرے تاکہ اولیائے طلباء کی محنت کی کمائی کو خانگی تعلیمی ادارہ جات کی نذر کرنے سے محفوظ رکھا جاسکے ۔ یہ بات آج یہاں صدر حیدرآباد اسکولس پیرنٹس اسوسی ایشن مسٹر وی وکرانت ، ارکان مسرز سبرامنیم ، اشیش نے پریس کانفرنس میں بتائی ۔ انہوں نے بتایا کہ شہر میں موجود خانگی اسکولوں کی جانب سے لاکھوں روپئے سالانہ وصول کئے جارہے ہیں۔ اس کے باوجود تعلیمی معیار میں کوئی تبدیلی نہیں ہے ۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ پر الزام عائد کیا کہ وہ ریاست کے خانگی اور کارپوریٹ اسکولوں کی پشت پناہی کررہی ہے جس کے نتیجہ میں تعلیم ایک تجارت میں تبدیل ہوگئی ہے ۔ اور کہا کہ حکومت اور خانگی و کارپوریٹ اسکولوں کی ملی بھگت کے نتیجہ میں خانگی مدارس کا انتظامیہ اپنی من مانی کررہا ہے ۔ جس کی وجہ سے غریب اور متوسط طبقات کے لیے حصول تعلیم ایک اہم اور سنگین مسئلہ بنا ہوا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ایک طالب علم کو کے جی تا دسویں جماعت تک تعلیم حاصل کرنے کے لیے لاکھوں کروڑوں روپئے کا سرمایہ درکار ہورہا ہے ۔ اس کے باوجود حکومت خانگی مدارس کے خلاف کوئی کارروائی کرنے سے گریز کررہی ہے ۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ پر زور دیا کہ وہ ریاست کے تمام خانگی اسکولوں کی سالانہ فیس کی حد کو مقرر کرنے کے ساتھ ساتھ ناقص اور غیر معیاری تعلیم ، اور قانون حق تعلیم کی خلاف ورزی کے مرتکب خانگی مدارس کے خلاف کارروائی کرے تاکہ ریاست کو سنہرے تلنگانہ میں تبدیل کرنے کے خواب کو پورا کیا جاسکے ۔۔

TOPPOPULARRECENT