Saturday , August 19 2017
Home / شہر کی خبریں / خانگی تعلیمی اداروں کو من مانی پر روک لگانے کا مطالبہ

خانگی تعلیمی اداروں کو من مانی پر روک لگانے کا مطالبہ

اسکول فیس ریگولیشن جے اے سی کی کانفرنس ، سیاسی قائدین کی شرکت و مخاطبت
حیدرآباد۔11مارچ(سیاست نیوز) جوائنٹ ایکشن کمیٹی فار اسکول فیس ریگولیشن کے زیراہتمام ایک کل جماعتی گول میز کانفرنس  کے موقع پر پیش کردہ قرارداد کے ذریعہ کل جماعتی قائدین نے مشترکہ طور پر خانگی تعلیمی اداروں کی من مانی سے متوسط طبقے اور معاشی طور پر پسماندہ خاندانوں کے طلبہ کو درپیش مشکلات دور کرنے کے لئے ریاستی حکومت سے ٹھوس اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا گیا ۔ ایس وی کیندرم ‘ باغ لنگم پلی میں منعقدہ کل جماعتی کانفرنس میں رکن اسمبلی وکانگریس قائدملو بھٹی وکرامارکا‘ بی جے پی ایم ایل اے ڈاکٹر کے لکشمن‘ سی پی آئی سابق رکن اسمبلی گنڈہ ملیش ‘سی پی آئی ایم گریٹر حیدرآباد سکریٹری ڈی جی نرسنگ رائو‘ بی سی سنگم لیڈر شارادھا گوڑ‘ پروفیسر کے ویملا‘ لوک ستہ پارٹی تلنگانہ یونٹ صدر پانڈو رنگاریڈی‘ عام آدمی پارٹی تلنگانہ اسٹیٹ کنونیر پربھاکر ریڈی‘ ڈاکٹر ونئے کمار‘ چیرپرسن جے اے سی ایس ایف آر ارویندہ جاٹا‘جنرل سکریٹری ناگٹی نارائنہ‘ وائس چیرمن وکرانت ورشانے کے علاوہ دیگر سماجی تنظیموں کے قائدین نے شرکت کی ۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے حکومت تلنگانہ کو تعلیمی میدان میںاصلاحات کے ساتھ ساتھ سرکاری ذریعہ تعلیم کو بنیادی سہولتوں سے لیس کرنے کا مطالبہ کیا۔ مقررین نے کہا کہ سرکاری اسکولوں میںبنیادی سہولتوں کی کمی کے سبب غریب سے غریب شخص بھی اپنے بچوں کو خانگی اسکولوں میںتعلیم دلانے پر مجبور ہے اور نتیجے میںخانگی اسکول انتظامیہ کی من مانی فیس وصولی کے سبب بچوں کی تعلیم کا سلسلہ منقطع ہورہا ہے ۔ اس حساس موضوع پر تمام سیاسی جماعتوں کو ایک پلیٹ فارم پر آتے ہوئے خانگی ذریعہ تعلیم میںجاری من مانی فیس وصولی کے عمل پر کنٹرول کے لئے ریاستی حکومت پر دبائو کی حکمت عملی تیار کرنے کے متعلق بھی مذکورہ کانفرنس میں فیصلہ لیا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT