Saturday , September 23 2017
Home / شہر کی خبریں / خانگی دواخانوں میں من مانی کے خلاف حکومت کے جلد اقدامات

خانگی دواخانوں میں من مانی کے خلاف حکومت کے جلد اقدامات

غیر ضروری معائنوں اور مریضوں کی شکایتوں سے نمٹنے کی حکمت عملی
حیدرآباد۔14اگسٹ (سیاست نیوز) خانگی دواخانوں کی من مانی کے خلاف حکومت کی جانب سے بہت جلد اقدامات کا آغاز کیا جائے گا اور حکومت ان دواخانوں کے خلاف کاروائی کی منصوبہ بندی میں مصروف ہے جو مریضوں کو غیر ضروری معائنوں اور مالی بوجھ عائد کرنے میں مصروف ہے۔خانگی دواخانوں میں مریضوں کو غیر ضروری معائنہ جات کروانے کے علاوہ مریض کے رشتہ داروں کو خوف میں مبتلاء کرتے ہوئے بھاری بل عائد کرنے کی شکایات عام ہوتی جا رہی ہیں اور حکومت نے ان شکایات سے نمٹنے کے لئے متعدد اقدامات کرنے کا ذہن تیار کرلیا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ ریاستی حکومت کی جانب سے ریاست میں چلائے جانے والے خانگی دواخانو ںکی صورتحال کے متعلق مکمل آگہی حاصل کی جائے گی اور جن دواخانوں کے انتظامیہ کے متعلق شکایات موصول ہوگی ان کے خلاف فوری کاروائی کے اقدامات کئے جائیں گے۔ محکمہ صحت کے ذرائع کے مطابق یہ بات درست ہے کہ کئی دواخانو ںمیں اس طرح کی لوٹ کھسوٹ جاری ہے لیکن اس پر کوئی کنٹرول حاصل کرنا مشکل ہے کیونکہ مریضوں کی صورتحال کے متعلق ڈاکٹرس ہی فیصلہ کرنے کے متحمل ہیں لیکن محکمہ کی جانب سے خاموشی کے نتیجہ میں دواخانہ انتظامیہ نے من مانی شروع کردی ہے اور خانگی و کارپوریٹ دواخانو ں میں جاری اس من مانی لوٹ کھسوٹ کے خاتمہ کے لئے حکومت نے محکمہ کے عہدیداروں کو حکمت عملی تیار کرنے کی ہدایت جاری ہے ۔ محکمہ صحت نے حکومت کی ہدایات کی بنیاد پر من مانی رقومات وصول کرنے اور بیجا معائنہ جات کروانے والے دواخانوں کے خلاف کاروائی کا فیصلہ کیا ہے اور اس سلسلہ میں حکمت عملی کی تیاری شروع کردی گئی ہے۔ محکمہ صحت کے اعلی عہدیدار نے بتایا کہ تلنگانہ میں حکومت کی جانب سے سرکاری دواخانوں کی حالت کو بہتر بنانے کیلئے متعدد اقدامات کئے جا رہے ہیں تاکہ ریاست میں خانگی اور کارپوریٹ دواخانہ کا رخ کرنے والے شہریوں کو معیاری سہولتیں فراہم کی جاسکیں۔ حکومت نے سرکاری دواخانوں کو کارپوریٹ دواخانوں کے طرز پر فروغ دینے کا فیصلہ کیا ہے اوراس فیصلہ کا مقصد عوام کو معیاری بنیادی سہولتوں کی فراہمی کے علاوہ عوا م میں سرکاری دواخانوں کے متعلق اعتماد میں اضافہ کرنا ہے اور خانگی دواخانو ںکی لوٹ کھسوٹ سے انہیں بچانا ہے۔

TOPPOPULARRECENT