Friday , August 18 2017
Home / شہر کی خبریں / خاکی ڈریس کے بغیر نعیم کا انکاونٹر اسپیشلسٹ کے طور پر پولیس کیلئے کام

خاکی ڈریس کے بغیر نعیم کا انکاونٹر اسپیشلسٹ کے طور پر پولیس کیلئے کام

پولیس کی پشت پناہی سے ڈان بن گیا ، مقتول ۔ پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں کا مہمان خصوصی
حیدرآباد ۔ 10 ۔ اگست : ( سیاست نیوز ) : مشیر آباد سنٹرل جیل میں پولیس کا مخبر بننے والے نعیم کو ڈان بننے میں پولیس نے اہم رول ادا کیا ۔ نکسلائٹس اور ان کے حامیوں کا بے رحمانہ قتل کرنے میں بھونگیر نعیم نے بغیر خاکی ڈریس کے انکاونٹر اسپیشلسٹ کے طور پر پولیس کے لیے کام کیا ۔ نعیم کی والدہ اور سیول لبرٹیز کی تنظیموں نے پولیس پر مبینہ یہ الزامات عائد کیے ہیں ۔ سابق نکسلائٹس نعیم آئی اے ایس آفیسر ویاس کے قتل کے الزام میں گرفتار ہو کر مشیر آباد جیل پہونچ گیا تھا جہاں اس کی نکسلائٹس کے اہم قائدین پٹیل سدھاکر ریڈی ، ایم بالا کرشنا ، شاکھا موری اپا راؤ سے ہوئی ۔ اسی اثناء پولیس کے ایک اعلیٰ عہدیدار سے نعیم کی ملاقات ہوئی اور نکسلائٹس کی معلومات فراہم کرنے کے لیے وہ پولیس کا مخبر بن گیا ۔ نکسلائٹس ایدنا کا بے رحمی سے قتل کرتے ہوئے نعش کے دو ٹکڑے کردئیے ۔ سر کے حصے کو چنچل گوڑہ جیل اور دوسرے حصے کو مشیر آباد سنٹرل جیل کے قریب پھینک دیا ۔ اس قتل کے بعد نعیم نے محکمہ پولیس میں اس کی پشت پناہی کرنے والے اعلی عہدیداروں کا بھروسہ جیت لیا ۔ اس قتل سے نعیم کی مخبر کی زندگی کا آغاز ہوا ۔ اس کے بعد نعیم نے ، بیلی للیتا ، کروناکرن ، کنکاچاری ، اعظم علی ، پروشوتم کے علاوہ کئی افراد کا مبینہ قتل کردیا ۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ تلاشی مہم کے دوران پولیس کے ہاتھ لگنے والے نکسلائٹس اپنے ٹھکانے اور مستقبل کی حکمت عملی کے بارے میں پولیس کے سامنے راز نہ اگلنے پر پولیس انہیں نعیم کے حوالے کردیتی تھی ۔ تب نعیم ایک پولیس عہدیدار بن کر انہیں اذیت پہونچاتے ہوئے نکسلائٹس کے اسلحہ کے علاوہ دوسرے معلومات حاصل کیا کرتا تھا ۔ اور پولیس کے چند عہدیداروں کی نعیم کو سرپرستی حاصل ہوا کرتی تھی ۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہے کہ نکسلائٹس تنظیم سے برطرف کردئیے جانے کے بعد نعیم نکسلائٹس کا دشمن بن گیا تھا اور نکسلائٹس کی نقل و حرکت کی پولیس کو اطلاع دیا کرتا تھا ۔ نکسلائٹس سرگرمیوں کا خاتمہ کرنے میں نعیم پولیس کے لیے معاون و مددگار ثابت ہورہا تھا ۔ ڈی ایس پی سے آئی جی سطح کے عہدیدار محکمہ پولیس میں نعیم کے ساتھ خصوصی مہمان جیسا سلوک کررہے تھے ۔ نکسلائٹس کے خاتمہ کے لیے اسی وقت مرکزی و ریاستی حکومتوں نے خصوصی فنڈز جاری کیا تھا ۔ پولیس کے عہدیدار زیادہ تر یہ فنڈز نعیم کے ذریعہ ہی خرچ کرایا کرتے تھے ۔ نکسلائٹس سرگرمیوں سے دستبردار ہو کر عام زندگی میں شامل ہونے والے نکسلائٹس کو نعیم اپنی جال میں پھنسایا کرتا تھا اور ان کے ضروریات کی تکمیل کرتے ہوئے ان سے نکسلائٹس کے اہم قائدین ، ان کی نقل و حرکت اسلحہ کے مراکز ، علاج کرانے والے نکسلائٹس کے بارے میں معلومات حاصل کرتے ہوئے پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں تک پہونچایا کرتا تھا ۔ 2001 میں رئیل اسٹیٹ کا کاروبار عروج پر تھا اس وقت سابق نکسلائٹس کی خدمات کو حیدرآباد اور اس کے اطراف و اکناف کے علاقوں میں اراضیات کے تنازعات کے لیے استعمال کیا کرتا تھا ۔ اس طرح پولیس کے تعاون سے نعیم نے اپنے جرائم کی دنیا کو توسیع دی تھی ۔۔

TOPPOPULARRECENT