Saturday , August 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / خوف اور دہشت کے ماحول میں ملک کی ترقی ممکن نہیں

خوف اور دہشت کے ماحول میں ملک کی ترقی ممکن نہیں

ایس آئی او بیدر کے زیر اہتمام سمینار، ریاستی صدر بسید شافعی کا خطاب
بیدر۔18؍اکتوبر۔(سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)۔بیدر شہر کے آروی بیڈپ لاکالج ، قریب گمپا بیدر میں اسٹوڈنٹس اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا (ایس آئی او ) بیدر کی جانب سے ریاستی سطح پر ’’دہشت سے آزاد ہندوستان‘‘ نامی مہم کے تحت ایک سیمینار منعقد ہوا۔ جس کاعنوان ’’انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہندوستان میں‘‘ رکھاگیاتھا۔  مذکورہ عنوان پر خطاب کرتے ہوئے ایس آئی او کرناٹک کے ریاستی صدر لبید شافعی نے کہاکہ خوف اور دہشت کے ماحول میں کوئی ملک آگے نہیں بڑھ سکتا۔ آج سینئر ادیب کلبرگی ، نریند ردابھولکر اور پنسارے کو قتل کیاجاتاہے ، اس قتل کے ذریعہ جو دہشت پھیلائی گئی ہے ، بلالحاظ مذہب وملت ہم اس کی مذمت کرتے ہیں۔انھوں نے سوال کیاکہ ملک کی حفاظت کے نام پر خوف کاماحول پیدا کرنا آیادرست ہے؟۔ بنگلور سے تشریف لائے APCRکے ریاستی ذمہ دار جناب ارشاداحمد دیسائی نے اپنے خطاب میںکہاکہ ہندوستانی دستور کو بھارت کے کلچر،اور سسٹم کو سامنے رکھ کر بنایاگیاہے‘اور جو تہذیب یہاں ہے اس کو گنگاجمنی تہذیب کہتے ہیں ۔ دستور نے تمام شہریوں کو یکساں حقوق دئیے ہیں لیکن اس کے باوجود حقوق مارے جاتے ہیں اور یہ انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔ ووٹ بینک کے نام پر سماج کو بانٹاجارہاہے۔ سیاستدان کارپوریٹس کو لے کر ملک میں خطرناک کھیل کھیل رہے ہیں۔ آتنگ وادی کے نام پر خوف اور دہشت کے ماحول کو پروان چڑھایاجارہاہے۔ پولیس نے اپنے پرموشن، میڈل اور ترقی کیلئے معصوم افراد کو پکڑ کر جیلوں میں ٹھونس دیا ہے۔ انسانی حقوق کی خلاف ورزی میں پولیس سب سے آگے ہے۔ہم چاہتے ہیں کہ آپ ملک کے امن کو ختم کرنے والی طاقتوں کے خلاف ہمت کے ساتھ اٹھ کھڑے ہوں ۔ جناب رشی کیش دیسائی نامہ نگار ’’داہندو‘‘ بیدر نے اپنے خطاب میں بنیادی باتوں جیسے انسانی حقوق، عدم برداشت، خوف اور دہشت، آئیڈیالوجی کیا ہے ؟، شناخت ، فرقہ وارانہ زیادتی وغیرہ اوربتایاکہ جتنے بڑے لوگوں جیسے مہاتماگاندھی ، اندراگاندھی اور سری لنکا کے سابق صدر کو ماراگیا ان تمام کے پیچھے مذہبی افراد کے رول سے انکار نہیں کیاجاسکتاہے۔ اس لئے جو شخص جتنا مذہبی ہوتا ہے وہ اتناہی اپنی آئیڈیالوجی کے ساتھ سخت ہوتاہے۔ اس لئے ہونا یہ چاہئے کہ جہاں کہیں ملٹی کلچر ل معاشرہ ہوتاہے وہاں مکمل برداشت لازمی ہے۔ اچھے افراد آگے بڑھیں ۔ ذات پات ، مذہب ، فرقہ ، اپنا یادوسرانہ دیکھاجائے۔ طلباء کوسوالا ت کا موقع بھی دیاگیاتھا۔  شہ نشین پر بیڈپ لاکالج کے پرنسپل آروی ڈکشت، مولوی محمدفہیم الدین سابق رکن شوریٰ جماعت اسلامی کرناٹک، محمد معظم امیرمقامی جماعت اسلامی ہند ، عاصم نعمان صدر ایس آئی اوبیدر اور دیگر موجودتھے۔ برادر عبدالرزاق رضوان نے نظامت کا فریضہ انجام دیا جبکہ مہم کے کنوینر برادر ابوالبیان نے اظہارتشکرکیا۔بعدازاں ریفرشمنٹ کا اہتمام دیکھاگیا ۔ایس آئی او کے کارکنان میں برادرم محمداحتشام ، محمدسیف الدین ، محمدسیف اللہ ، محمد متحیر، اور سوید یاسر نے انتظامی امور کی دیکھ بھال کی ۔

TOPPOPULARRECENT