Friday , July 28 2017
Home / Top Stories / دارجیلنگ میں جلوسوں کا انعقاد ، معمول کی زندگی مفلوج

دارجیلنگ میں جلوسوں کا انعقاد ، معمول کی زندگی مفلوج

انٹرنٹ سرویس بدستور معطل ۔ علاقے میں سکیورٹی فورسیس کی سخت نگرانی

دارجیلنگ ، 21 جون (سیاست ڈاٹ کام) دارجیلنگ کی پہاڑیوں میںجی جے ایم کی سرپرستی میں غیرمعینہ ہڑتال کے آج ساتویں روز احتجاجی جلوس نکالے گئے، جہاں معمول کی زندگی پہلے سے ہی مفلوج ہے اور انٹرنٹ سرویسیس معطل ہیں اور سکیورٹی فورسیس سخت نگرانی کررہے ہیں۔ تاہم ، دارجیلنگ میں کہیں سے بھی کوئی ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ملی ، جہاں ہفتہ کو جی جے ایم کارکنوں اور سکیورٹی فورسیس کے درمیان وسیع تر جھڑپیں دیکھنے میں آئی تھیں۔ گورکھا جن مکتی مورچہ (جی جے ایم) علحدہ گورکھالینڈ ریاست کیلئے ایجی ٹیشن چلا رہا ہے، جسے مغربی بنگال میں سے نکالنا ہوگا۔ مورچہ نے علاقے کے مختلف بورڈنگ اسکولس کیلئے 23 جون کو 12 گھنٹے کی رعایت دی ہے کہ اپنے اسٹوڈنٹس کو سلیگوڑی اور رونگپو کو منتقل کرلیں۔ آج احتجاجی جلوسوں کے علاوہ مقامی شہریوں نے موم بتیاں جلاکر بھی جلوس نکالا اور پہاڑی علاقوں میں امن کی فوری بحالی کا مطالبہ کیا۔ احتجاجیوں پر سکیورٹی فورسیس کے مبینہ مظالم کو پیش کرتے ہوئے سرعام ڈرامہ کا اہتمام بھی کیا گیا۔ گورکھالینڈ کیلئے مطالبہ کی تائید میں منعقدہ اس پروگرام کے دوران گیت بھی بجائے گئے۔ دریں اثناء ایک عہدہ دار نے کہا کہ ضلع نظم و نسق نے سرویس پروائیڈرس کو مکتوب تحریر کرتے ہوئے انٹرنٹ کی بدستور معطلی کو یقینی بنانے کیلئے کہا ہے۔ انھوں نے کہا کہ یہ سرویسیس جو چار روز قبل منقطع کی گئیں، مزید کم از کم سات یوم بند رکھی جائیں گی۔ مقامی لوگوں نے اس اقدام کو جمہوری تحریک کے خلاف جابرانہ اقدام قرار دیا۔ غیرمعینہ ہڑال کے ساتویں روز علحدہ ریاست کیلئے مطالبہ کی تائید میں پہاڑیوں کے مختلف مقامات پر احتجاجی مارچ منعقد کئے گئے۔ پولیس اور سکیورٹی فورسیس نے بند سے متاثرہ پہاڑی علاقوں کے راستوں پر طلایہ گردی کی اور دارجیلنگ کے آمد ورفت کی راہوں پر پولیس پکٹس متعین کردیئے گئے۔ فارمیسی شاپس کے سوا تمام دیگر دکانات، ہوٹلیں اور رسٹورنٹس بدستور بند ہیں۔ جی جے ایم کی جانب سے گزشتہ روز طلب کردہ کل جماعتی اجلاس نے ایک قرارداد منظور کرتے ہوئے واضح کردیا کہ یہ ہڑتال جاری رکھی جائے گی تاوقتیکہ سکیورٹی فورسیس کو خطہ سے دستبردار نہیں کرلیا جاتا۔ سینئر جی جے ایم لیڈر بینئے تمانگ نے یہاں اخباری نمائندوں کو بتایا کہ یہاں کے حالات کو مدنظر رکھتے ہوئے 23 جون کو صبح 6 تا شام 6 بجے تک اسٹوڈنٹس کو صرف اسکول بسوں میں سلیگوڑی اور رونگپو کو جانے کی اجازت دی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT