Wednesday , August 16 2017
Home / دنیا / داعش نے تین افراد کو ستونوں سے بارود سمیت باندھ کر اڑا دیا

داعش نے تین افراد کو ستونوں سے بارود سمیت باندھ کر اڑا دیا

بیروت ، 27 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) شدت پسند گروپ دولت اسلامی (داعش) نے شام کے تاریخی شہر تدمر میں تین افراد کو تاریخی عمارتوں کے ستونوں کے ساتھ بارود سمیت باندھ کر دھماکے سے اڑا دیا۔ انسانی حقوق کی تنظیم آبزورویٹری کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں بتایا گیا ہے کہ داعشی جنگجوؤں نے حال ہی میں تین یرغمالیوں کو تدمر شہر کی تاریخی عمارتوں کے ستونوں کے ساتھ بارود سمیت باندھا اور پھر انہیں دھماکے سے عمارتوں سمیت اڑا دیا۔ انسانی حقوق کی تنظیم کا کہنا ہے کہ داعشی جنگجو اپنے مخالفین کو موت کے گھاٹ اتارنے کیلئے نت نئے طریقے اختیار کررہے ہیں۔ حال ہی میں انہوں نے تدمر کے آثارقدیمہ کو تباہ کرنے کے دوران تین افراد کو تین الگ الگ عمارتوں کے ستونوں کے ساتھ باندھا۔ ان کے ساتھ بھاری مقدار میں دھماکہ خیزمواد بھی باندھا گیا جس کے بعد انہیں دھماکے سے اڑا دیا، جس کے نتیجے میں نہ صرف تینوں افراد ہلاک ہوگئے بلکہ جن عمارتوں کے ساتھ انہیں باندھ کر دھماکہ کیا وہ بھی زمین دوز ہوگئیں۔

تدمر کے ایک مقامی سماجی جہدکار خالد لحمصی نے نیوز ایجنسی ’اے ایف پی‘ کو بتایا کہ ستونوں کے ساتھ تین افراد کو باندھ کر ہلاک کرنے کے وقت کسی مقامی شہری کو وہاں نہیں بلایا گیا۔ عموماً داعشی جنگجو مخالفین کو قتل کرتے وقت شہریوں کو خوفزدہ کرنے کیلئے لوگوں کو جمع کرکے مخالفین کو عبرت دلاتے ہیں۔ تاہم تدمر میں مقامی شہریوں کو وہاں سے دور رہنے کا حکم دیا گیا تھا۔ ستونوں کے ساتھ بارود سمیت باندھ کر مخالفین کو ہلاک کرنے کا داعشی طریقہ واردات پہلی بار دیکھا گیا ہے۔ حال ہی میں انٹرنیٹ پر ایک ویڈیو ڈالی گئی تھی جس میں یرغمال بنائے گئے ایک شامی فوجی کو ٹینک تلے کچل کر ہلاک کرنے کا منظر دکھایا گیا تھا۔ اس سے قبل یرغمالیوں سے خود اُن کی قبریں کھدوانے کے بعد انہیں قتل کرکے ان میں اتار دیا جاتا رہا ہے۔ داعش نے شام کے تاریخی شہر ’تدمر‘ پر رواں سال مئی میں قبضہ کیا تھا۔ یہ شہر اقوام متحدہ کے ذیلی ادارہ یونیسکو کے ہاں عالمی تاریخی مقامات میں شامل ہے۔ ایک ماہ پیشتر داعش نے اس شہر میں عیسائیوں کی مذہبی یادگار ’’قوس النصر‘‘ کو دھماکے سے اڑا دیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT