Thursday , June 29 2017
Home / Top Stories / درگاہ اجمیر شریف کی سجادہ نشینی کا تنازعہ

درگاہ اجمیر شریف کی سجادہ نشینی کا تنازعہ

میری برطرفی کا چھوٹے بھائی کو اختیار نہیں ، دیوان زین العابدین کا بیان

اجمیر ۔ 5 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) درگاہ حضرت خواجہ غریب النواز ؒ کے سجادہ نشینی کا تنازعہ شدت اختیار کرگیا ہے۔ دیوان اجمیر سید زین العابدین نے پرزور تردید کی کہ ان کے چھوٹے بھائی کو ان کی برطرفی کا اختیار نہیں ہے۔ دیوان کے چھوٹے بھائی سید علاء الدین علیمی نے درگاہ دیوان سید زین العابدین علی خان کو تین طلاق اور گائے کی نسل کے جانوروں کی گوشت کے معاملے میں دیئے گئے بیان پر انہیں عہدہ سے ہٹا کر خود درگاہ دیوان بننے کا اعلان کردیا۔ چھوٹے قُل کی رسم کے ساتھ غیررسمی طور پر ختم ہوئے 805 ویں سالانہ عرس کے بعد رات گئے خواجہ صاحب کے وارث سجادہ نشیں اور روحانی سربراہ درگاہ دیوان سید زین العابدین علی خان اور ان کے بھائی سید علاء الدین علیمی کے مابین ’’درگاہ دیوان کی گدی‘‘کے سلسلہ میں تنازعہ بڑھ گیا ہے۔ سید علاء الدین علیمی نے رات گئے تلخ موقف اختیار کرتے ہوئے درگاہ دیوان عابدین کو دیوان کے عہدہ سے ہٹانے کا دعوی کیا ہے اور بغاوت کرتے ہوئے خود کو درگاہ دیوان قرار دے دیا ہے جس سے مقامی مسلم سماج کو راتوں رات کھلبلی مچ گئی۔اس تنازعہ پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے دیوان اجمیر شریف سید زین العابدین نے کہا کہ میں درگاہ کے دیوان کی حیثیت سے اپنی آخری سانس تک برقرار رہوں گا۔ ان کے خلاف رچائی گئی یہ سازش ہے۔ انہوں نے 1987ء کے سپریم کورٹ کے فیصلہ کا حوالہ دیا اور کہا کہ انہیں برطرف کرنے کا ان کے چھوٹے بھائی کو اختیار نہیں ہے۔ وہ کسی بھی قانون کے تحت ایسا نہیں کرسکتے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنی شعلہ بیانی اور حق گوئی کی وجہ سے ہمیشہ نشانہ بنے ہوئے ہیں۔ میرے بیان پر جو واویلا مچایا جارہا ہے وہ سراسر میڈیا کی پھیلائی ہوئی گمراہ کن خبر ہے۔ بعض نیوز چینلوں نے فرضی خبریں ٹیلی کاسٹ کرکے عوام کے ذہنوں میں الجھن پیدا کردی ہے۔ انہوں نے اپنے چھوٹے بھائی علاء الدین علیمی پر تنقید کی اور کہا کہ وہ شدت پسند ذہنیت کا حامل ہے۔ درگاہ شریف کے دیوان کا لقب حاصل کرنے کا دعویٰ انہوں نے مسترد کردیا۔ حکومت کی جانب سے مقرر کردہ درگاہ کمیٹی کے سی ای او ایم اے خان نے کہا کہ زین العابدین علی خان ہی درگاہ اجمیر شریف کے سجادہ نشین ہیں۔ درگاہ خواجہ صاحب ایکٹ 1955ء کے دفعات کے تحت زین العابدین کو ہٹایا نہیں جاسکتا۔ یہ دو بھائیوں کے درمیان کا تنازعہ ہے۔ سجادہ نشین کو اس طرح کے اقدام سے برطرف یا ہٹایا نہیں  جاسکتا۔ علاء الدین علیمی جنہوں نے اپنے بھائی زین العابدین کو تین طلاق پر ان کی رائے زنی کیلئے انہیں غیرمسلم قرار دیا ہے۔ پیر کے دن اپنے بڑے بھائی کے بیان کی مذمت بھی کی ہے۔ درگاہ دیوان نے سالانہ عرس کے اختتام موقع پر خانقاہ اجمیرشریف میں روایتی طور پر منعقد ہونے والی محفل کے بعد اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ گائے کے گوشت پر پابندی عائد کی جانی چاہئے اور طلاق کے بارے میں انہوں نے کہا کہ اسلام میں شادی دو افراد کے درمیان ایک سماجی معاہدہ ہے ۔ قرآن میں طلاق کو انتہائی ناپسندیدہ قرار دیا گیا ہے۔ اس لئے وہ طلاق ثلاثہ کے مخالف ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT