Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / دلتوں سے راہول گاندھی کی ہمدردی ایک ڈھونگ بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی کا الزام

دلتوں سے راہول گاندھی کی ہمدردی ایک ڈھونگ بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی کا الزام

لکھنؤ۔/18فبروری، ( سیاست ڈاٹ کام ) بہوجن سماج پارٹی کی سربراہ مایاوتی نے آج کہا ہے کہ دلتوں کے ایک اجتماع میں راہول گاندھی کی شرکت عوام کو بے وقوف بنانے کی کوشش ہے۔ انہوں نے ایک صحافتی بیان میں کہا کہ تمام کام دلتوں کے خلاف کرنے کے بعد اب دلتوں کی یاد آئی ہے جوکہ عوام کو احمق بنانے کے سوا کچھ اور نہیں ہے۔ بی ایس پی لیڈر نے کہا کہ کانشی رام 1984 میں پارٹی کے قیام کیلئے مجبور ہوگئے تھے کیونکہ آزادی کے بعد سے کانگریس دلتوں کو سہانے خواب دکھاکر ووٹ حاصل کررہی تھی۔ مایاوتی نے طنزیہ انداز میں کہا کہ راہول گاندھی نے نام نہاد دلت اجتماع بھی کسان سمیلن کی طرح ہے جو کہ نریندر مودی حکومت کسان دشمن اقدامات کرتے ہوئے منعقد کررہے ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ کانگریس اور بی جے پی کا رویہ غریبوں، دلتوں، مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کی فلاح و بہبود کے خلاف ہے۔ بی ایس پی صدر نے راجستھان کے ضلع چنوڑ گڑھ میں ون پالس(Vanpals) کے انتخاب کیلئے مرد فاریسٹ گارڈس کی جانب سے خاتون امیدواروں کی قد اور سینہ کی پیمائش کرنے پر اعتراض کیا اور کہا کہ خواتین کو ہراساں کرنے کا یہ ایک طریقہ کار ہے۔ افسوسناک امر یہ ہے کہ اس طرح کا واقعہ ایسی ریاست میں پیش آیا جہاں ایک خاتون چیف منسٹر ہے۔ انہوں نے مہاراشٹرا میں کسانوں کی خودکشی پر بی جے پی رکن پارلیمنٹ گوپال شیٹی کے بیان پر بھی تنقید کی جنہوں نے خودکشیوں کو فیشن سے تعبیر کیا تھا۔

 

کانشی رام کے مشن سے مایاوتی بھٹک گئیں
اقتدار پر گرفت کیلئے دلتوں کو کچل دیا گیا۔ راہول کا الزام
لکھنؤ۔/18فبروری، ( سیاست ڈاٹ کام ) بہوجن سماج پارٹی سربراہ مایاوتی جوکہ اترپردیش میں اقتدار کی اہم دعویدار ہیں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے نائب صدر کانگریس راہول گاندھی نے آج کہا کہ وہ عمداً دلت قیادت کی حوصلہ افزائی نہیں کررہی ہیں کیونکہ انہیں یہ اندیشہ ہے کہ کہیں اقتدار پر سے ان کی گرفت کمزور نہ ہوجائے۔ کانگریس لیڈر نے حیدرآباد یونیورسٹی کے ایک دلت اسکالر روہت ویمولا کی موت کیلئے نریندر مودی حکومت کو مورد الزام ٹہرایا جس کی خودکشی واقعہ پر ملک بھر میں احتجاج شروع ہوگیا۔ پارٹی آفس میں ایک دلت اجتماع سے مخاطب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کانشی رام کے نصب العین اور مقاصد کی تکمیل میں مایاوتی ناکام ہوگئیں اور اقتدار پر اپنی گرفت برقرار رکھنے کیلئے دلت قیادت کو اُبھرنے نہیں دیا۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ بی ایس پی سربراہ نے دراصل دلت لیڈروں کو عملاً کچل کر رکھ دیا ہے۔ راہول گاندھی نے الزام عائد کیا کہ دلت کو مناسب فوائد پہنچانے میں مایاوتی یکسر ناکام ہوگئیں حتیٰ کہ جب وہ چیف منسٹر تھیں تو نوجوان دلت لیڈروں کو آگ نہیں بڑھایا۔ اس کے برعکس دلت لیڈروں کو دبادینے کی کوشش کی اور تمام اختیارات اپنے ہاتھ میں رکھنے پر توجہ مرکوز کیں۔ یہ ادعا کرتے ہوئے کہ اب دلت نوجوان مایاوتی کی قیادت کیلئے مرعوب کن طاقت بن گئے ہیں اور اب موقع کانگریس کے ہاتھ آگیا ہے اور اتر پردیش  میں برسراقتدار آنے پر دلتوں کو مناسب نمائندگی دے گی۔ ایک دلت اسکالر روہت ویمولا کی خودکشی کے بعد اپنے حیدرآباد یونیورسٹی کے دورہ پر اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ روہت کا قتل حکومت ہند نے کیا ہے کیونکہ اس نے حکومت کے جبرو ستم سے تنگ آکر خودکشی کرلی تھی۔ چونکہ ایک آر ایس ایس کے حامی تعلیمی ادارہ کا سربراہ تھا جس کو روہت کی کربناک آواز سنائی نہیں دی۔

مرکزی وزیر سے سی پی آئی قائدین کی نمائندگی
نئی دہلی۔/18فبروری، ( سیاست ڈاٹ کام ) سی پی آئی نے آج یہ مطالبہ کیا ہے کہ صدر جے این یو ایس یو کنہیا کمار کو جیل سے فی الفور رہا اور ان کے خلاف بغاوت کے الزامات سے دستبرداری اور پولیس کمشنر دہلی کو برطرف کردیا جائے۔ پارٹی نے حکومت پر زور دیا کہ طلباء لیڈر کی خاطر خواہ حفاظت کی جائے جو کہ 2مارچ تک عدالتی تحویل کے تحت جیل میں محروس ہیں۔ ۔سی پی آئی کے جنرل سکریٹری ایس سدھاکر ریڈی اور سکریٹری ڈی راجیہ نے آج مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ سے ملاقات کرکے یہ مطالبہ کیا۔

 

 

TOPPOPULARRECENT