Thursday , August 17 2017
Home / Top Stories / دلت اسکالر کی خودکشی کے خلاف فلم انسٹی ٹیوٹ کے طلباء کی بھوک ہڑتال

دلت اسکالر کی خودکشی کے خلاف فلم انسٹی ٹیوٹ کے طلباء کی بھوک ہڑتال

پھگواڑہ میںامبیڈکر سینا کا احتجاجی مظاہرہ اور سمرتی ایرانی کا پتلا نذر آتش

پونے۔/19جنوری، ( سیاست ڈاٹ کام ) حیدرآباد میں ایک دلت اسکالر کی مبینہ خودکشی کے خلاف طلباء کے احتجاج سے اظہار یگانگت کرتے ہوئے آج فلم انسٹی ٹیوٹ کے طلباء نے آج ایک روزہ زنجیری بھوک ہڑتال کی۔ ایف ٹی آئی آئی اسٹوڈنٹس اسوسی ایشن کے صدر ہری شنکر نچی متو نے بتایا کہ روہت ویملا کی موت کے خلاف ملک بھر میں جاری طلباء کے احتجاج سے یگانگت کا اظہار کرتے ہوئے فلم اینڈ ٹیلی ویژن انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا کے طلباء بھی آج بھوک ہڑتال پر بیٹھ گئے۔ طلباء تنظیم کے ایک لیڈر یشواس مصرا نے بتایا کہ روہت ویملا کی موت کیلئے حیدرآباد یونیورسٹی کا انتظامیہ ذمہ دار ہے۔ اس واقعہ پر ملک بھر میں طلباء برادری احتجاج کیلئے سڑکوں پر نکل آئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اختلاف رائے کو کچل دینے کیلئے حکومت کی کوششیں قابل مذمت ہیں اور وقت کا تقاضہ ہے کہ بحران کے موقع پر طلباء برادری باہم متحد ہوجائیں۔ واضح رہے کہ فلم انسٹی ٹیوٹ کے طلباء نے گزشتہ سال ٹی وی اداکار اور بی جے پی رکن گجیندر چوہان کے بحیثیت صدر نشین تقرر کے خلاف 139 یوم تک ہڑتال کی تھی۔ پھگواڑہ پنجاب سے موصولہ اطلاعات کے بموجب حیدرآباد یونیورسٹی کے دلت اسکالر کی خودکشی کے خلاف پنجاب امبیڈکر سینا مول نواس کے کارکنوں نے آج احتجاجی جلوس نکالا اور مرکزی وزیر سمرتی ایرانی کا پتلا نذر آتش کردیا اور اس واقعہ کے ذمہ دار مرکزی وزیر بنڈارودتاتریہ کو فی الفور برطرف کردینے کا مطالبہ کیا۔ تنظیم کے ریاستی صدر ہربھجن سمن کی زیر قیادت اور بہوجن سماج پارٹی کی تائید سے یہ احتجاجی جلوس علاقہ ہرگوبند نگر میں امبیڈکر پارک سے نکالا گیا

اور شہر کے مختلف راستوں سے گذرتے ہوئے نیشنل ہائی وے نمبر 1 پر ٹریفک لائٹ کراسنگ پہنچا جہاں پر سمرتی ایرانی کا پتلا نذر آتش کرنے سے کچھ دیر کیلئے ٹریفک درہم برہم ہوگئی۔ احتجاجیوں نے مرکزی حکومت اور بی جے پی کی مخالف دلت پالیسیوں کے خلاف نعرے بلند کئے اور ضلع کلکٹر بلبیر راج سنگھ کو ایک میمورنڈم پیش کیا، جس میں صدر جمہوریہ سے مطالبہ کیا گیا کہ 5دلت اسکالروں کے خلاف یونیورسٹی کی تادیبی کارروائی میں عمل دخل پر مرکزی مملکتی وزیر لیبر بنڈارودتاتریہ کو برطرف کردیا جائے۔ سینا سربراہ ہربھجن سمن، بی ایس پی کے سابق ریاستی جنرل سکریٹری جرنیل تنگل اور پھگواڑہ کونسل پورینما سمن نے الزام عائد کیا کہ دلت اسکالروں کے خلاف کارروائی کیلئے سمرتی ایرانی اور بنڈارودتاتریہ نے یونیورسٹی پر دباؤ ڈالا تھا۔ انہوں نے دلت طلباء کے خلاف شکایت کرنے والے اے بی وی پی لیڈروں کی گرفتاری کا بھی مطالبہ کیا۔ دریں اثناء حیدرآباد میں ایک دلت اسکالر کی خودکشی کے واقعہ پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کانگریس لیڈر ڈگ وجئے سنگھ نے یہ الزام عائد کیا کہ بی جے پی اور آر ایس ایس نے وائس چانسلروں کو معذور اور مجبور کردیا ہے اور طلباء برادری سے کہا کہ فرقہ پرست طاقتوں کے خلاف جدوجہد کیلئے متحد ہوجائیں۔ انہوں نے اپنے ٹوئٹر پر کہا کہ بی جے پی۔ آر ایس ایس کی جانب سے وائس چانسلروں کو آزادی اور اختیارات چھین لینے کی شروعات ہے جو کہ ماہرین تعلیم کی بجائے اے بی وی پی کے حامیوں کو مسلط کرنے کی کوشش میں ہے جس کے خلاف تمام طلباء کو جدوجہد کیلئے کمربستہ ہوجانا چاہیئے۔ کانگریس کے جنرل سکریٹری نے کہا کہ روہت ویملا کی خودکشی سے دلتوں کے خلاف بی جے پی کی ذہنیت آشکار ہوتی ہے۔

 

 

TOPPOPULARRECENT