Thursday , August 24 2017
Home / شہر کی خبریں / دلسکھ نگر جڑواں بم دھماکے کیس کی سماعت مکمل

دلسکھ نگر جڑواں بم دھماکے کیس کی سماعت مکمل

21 نومبرکو این آئی اے خصوصی عدالت میں فیصلہ
حیدرآباد ۔ 7نومبر ( سیاست نیوز)  دلسکھ نگر جڑواں بم دھماکے کیس کی سماعت مکمل ہوچکی ہے اور اس کا فیصلہ 21 نومبر کو مقرر ہے ۔ ضلع رنگاریڈی کورٹ کتہ پیٹ میں  نیشنل انوسٹی گیشن ایجنسی ( این آئی اے ) کی خصوصی عدالت میں جڑواں بم دھماکے کیس کا مقدمہ انڈین مجاہدین کے مبینہ ارکان یسین بھٹکل ‘ اسد اللہ اختر ‘ وقاص محمد تحسین اختر اور اعجاز سعید شیخ کے خلاف  چلایا گیا  ۔ واضح رہے کہ 21فبروری سال 2013ء کو شہر کے مصروف ترین علاقہ دلسکھ نگر میں دو بم دھماکے ہوئے تھے جس میں 18 افراد ہلاک ہوگئے جبکہ 131 زخمی ہوئے تھے ۔ یہ دھماکہ دلسکھ نگر بس اسٹاپ اور مرچی سنٹر کے قریب پیش آئے ۔ ابتداء میں  ملک پیٹ اور سرو نگر پولیس نے اس سلسلہ میں دو مقدمات درج کئے تھے لیکن مرکزی وزارت داخلہ کی جانب سے اس کیس کی تحقیقات قومی تحقیقاتی ایجنسی کے حوالے کئے جانے کے بعد مذکورہ انڈین مجاہدین کے ارکان کو گرفتار کرکے ان کے خلاف چارج شیٹ داخل کی گئی تھی ۔  16جولائی 2015ء کو ملزمین کے خلاف الزامات وضع کئے گئے جس کے بعد یسین بھٹکل نے یہاں کی مقامی عدالت میں اقبالی بیان دیتے ہوئے بم دھماکوں کی ذمہ داری قبول کی تھی ۔ این آئی اے کی خصوصی عدالت نے استغاثہ اور وکلاء دفاع کی جانب سے بحث مکمل ہونے پر اس کیس کی سماعت 21نومبر کو مقرر کی ہے ۔ قبل ازیں این آئی اے نے ملزمین کو سزائے موت دینے کی درخواست کی ۔ یسین بھٹکل اور اس کے ساتھی چرلہ پلی جیل میں محروس ہیں اور فیصلہ کے دن انہیں سخت سیکیورٹی کے درمیان لایا جائے گا ۔

TOPPOPULARRECENT