Saturday , September 23 2017
Home / دنیا / دنیا بھر میں تقریبا 100 ممالک سائبر حملے کا شکار ‘ ہندوستان بھی متاثر

دنیا بھر میں تقریبا 100 ممالک سائبر حملے کا شکار ‘ ہندوستان بھی متاثر

ماہرین کو صورتحال سے نمٹنے میں مشکلات کا سامنا ۔ کئی بین الاقوامی اداروں اور کمپنیوں کی سرگرمیاں بھی متاثر

سیاٹل 13 مئی ( سیاست ڈاٹ کام ) تقریبا 100 ممالک بشمول ہندوستان ایک بڑے سائبر حملے کا شکار ہوئے ہیں جس کے تعلق سے ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ حملہ امریکی قومی سلامتی ایجنسی سے سرقہ کردہ سائبر ہتھیاروں سے کیا گیا ہے ۔ امریکی میڈیا گھرانوں کا کہنا ہے کہ سب سے پہلے اس سائبر حملے کی اطلاع سویڈن ‘ برطانیہ اور فرانس سے ملی تھی ۔ سکیوریٹی سافٹ ویر کمپنی Avast نے بتایا کہ اس سائبر حملے میں شدت کا کل پتہ چلا اور یہ اچانک ہی شدت اور تیزی کے ساتھ پھیل گیا ۔ میڈیا گھرانوں کی اطلاع کے بموجب چند گھنٹوں کے اندر تقریبا 75,000 سائبر حملوں کی اطلاع ملی ہے جو دنیا بھر میں کئے گئے تھے ۔ اس دوران MalwareTech ٹریکر کی جانب سے گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ایک لاکھ کمپیوٹر سسٹمس کے اس سے متاثر ہونے کا پتہ چلایا ہے ۔ کاسپرسکی لیب کے سکیوریٹی ریسرچ کرنے والوں نے 99 ممالک میں زائد از 45 ہزار سائبر حملوں کا پتہ چلایا ہے ۔ ان میں برطانیہ ‘ روس  یوکرین ‘ ہندوستان ‘ چین ‘ اٹلی اور مصر بھی شامل ہیں۔ اسپین میں بڑی کمپنیاں بشمول ٹیلی مواصلات کی فرم ٹیلی فونیکا اس وائرس سے متاثر ہوئی ہیں۔ سب سے زیادہ تباہ کن حملہ برطانیہ میں کئے جانے کی اطلاع ہے جہاں دواخانے اور کلینکس میں کمپیوٹرس کو بہت زیادہ نقصان ہوا اور مریضوں کو واپس بھیجنا پڑا ہے ۔ یہ سائبر حملہ در اصل تاوان حملہ بھی کہا جاتا ہے اور اس کے ذریعہ ایسا وائرس کمپیوٹرس تک پہونچا دیا جاتا ہے جس سے کمپیوٹر کو استعمال کرنا ممکن نہیں رہ جاتا تاوقتیکہ اسے دوبارہ قابل استعمال بنانے کیلئے تاوان ادا نہ کیا جائے ۔ اس کے ذریعہ مطالبہ کیا جاتا ہے کہ استعمال کنندگان 300 ڈالرس مالیتی ادائیگی کریں۔ یہ وائرس ای میل کے ذریعہ پھیلایا جاتا ہے اور کچھ وقت گذرنے کے بعد تاوان کا مطالبہ کیا جاتا ہے ۔ ماہرین کی جانب سے تاہم انفرادی شخصیتوں اور اداروں سے کہا جاتا ہے کہ وہ تاوان ادا کرنے سے گریز کریں کیونکہ اس کی ادائیگی کے باوجود یہ یقینی نہیں ہوتا کہ کمپیوٹرس تک رسائی ہوجائے اور وہ قابل استعمال ہوجائیں۔ اس صورتحال سے نمٹنے والے ایک ادارہ کے بموجب تاوان وائرس اگر قدیم اور غیر موثر سافٹ ویر والے کمپیوٹرس تک پہونچتا ہے تو یہ شدت کے ساتھ سرائیت کرجاتا ہے اور تیزی سے پھیلتا ہے ۔ مائیکروسافٹ کی ایک ترجمان نے کہا کہ کمپنی کو اس سائبر حملہ کی اطلاعات کا علم ہے اور وہ صورتحال کا جائزہ لے رہی ہے ۔ وال اسٹریٹ جرنل کے بموجب اس وائرس کے ذریعہ جو ان حملوں میں استعمال کیا گیا ہے کمپیوٹر کے ڈاٹا پر قبضہ کرلیا گیا ہے اور ان سے تاوان کا مطالبہ کیا جاسکتا ہے ۔ بین الاقوامی شپر فیڈ ایکس نے ایک بیان میں کہا کہ سائبر حملے کے نتیجہ میں وہ بہت زیادہ متاثر ہوا ہے ۔ ڈپارٹمنٹ آف ہوم لینڈ سکیوریٹی نے کہا کہ وہ اس واقعہ سے متعلق اطلاعات کو متعلقہ اداروں کے ساتھ بانٹ رہا ہے اور وہ اپنے حلیفوں کی ضرورت پڑنے پر فنی مدد کیلئے تیار ہے ۔

TOPPOPULARRECENT