Saturday , August 19 2017
Home / دنیا / دنیا میں ہرگیارہ میں سے ایک شخص کو شوگر

دنیا میں ہرگیارہ میں سے ایک شخص کو شوگر

نیویارک۔ 7 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) عالمی ادارہ صحت نے خبردار کیا ہے کہ دنیا کو ذیابیطس کے ’بے رحمانہ اضافے‘ کا سامنا ہے ہے اور ہرگیارہ بالغ لوگوں میں سے ایک اس مرض کا شکار ہے۔ ادارے نے شْوگر کے مرض کے حوالے سے ایک بڑا جائزہ جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ 1980 میں ذیابیطس کے شکار لوگوں کی تعداد 10کروڑ 80 لاکھ تھی جبکہ 2014 میں یہ تعداد تقریباً چار گنا بڑھ کر 42 کروڑ 20 لاکھ تک پہنچ چکی تھی۔ عالمی ادارہ صحت کی رپورٹ کے مطابق آج خون میں شوگر کی زیادتی ایک مہلک بیماری بن چکی ہے اور ہر سال دنیا بھر میں 37 لاکھ اموات ایسی ہو رہی ہیں جن میں شوگر کی زیادتی کا عنصر شامل ہوتا ہے۔ ادارہ کے افسران کا کہنا ہے کہ اگر اس سلسلے میں ’سخت کارروائی ‘ نہ کی گئی تو شوگر سے منسلک اموات میں اضافہ جاری رہے گا۔ اگرچہ اس جائزے میں ذیابیطس کی دونوں اقسام (ٹائپ ون اور ٹائپ ٹْو) کو یکجا رکھاگیا ہے لیکن زیادہ اضافہ ٹائپ ٹْو قسم کی شوگر میں دیکھنے میں آیا ہے۔ یاد رہے کہ ٹائپ ٹْو شوگر کا تعلق غیر صحت مندانہ طرز زندگی سے ہے۔ آج دنیا میں ہر تین میں سے ایک شخص موٹاپے کا شکار ہے اور جوں جوں لوگوں کی کمریں پھیل رہی ہیں، اسی قدر شوگر کے مریضوں میں اضافہ ہو رہا ہے۔ عالمی ادارہ صحت کی ذیابیطس کے خلاف مہم کے سربراہ ڈاکٹر اتینی کرگ نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’ذیابیطس ایک خاموش مرض ہے، لیکن یہ ایک ایسا مرض ہے جو ایک خطرناک روش اختیار کر چکا ہے اور ہمیں اسے روکنے کی ضرورت ہے۔‘

TOPPOPULARRECENT