Monday , August 21 2017
Home / شہر کی خبریں / دواخانہ عثمانیہ اور تاریخی عمارتوں کے ساتھ کھلواڑ ناقابل برداشت

دواخانہ عثمانیہ اور تاریخی عمارتوں کے ساتھ کھلواڑ ناقابل برداشت

چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کے آمرانہ رویہ کے خلاف انتباہ ، ممتاز شخصیتوں کا بیان
حیدرآباد۔11اگست(سیاست نیوز) عثمانیہ جنرل ہاسپٹل کی قدیم ہریٹیج عمارت کو منہدم کرنے کے متعلق چیف منسٹر کے سی آر کے آمرانہ رویہ پر کیپٹن پانڈورنگاریڈی نے اپنے شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ حکومت تلنگانہ کی عوام سے آنکھ مچولی کا رویہ اپنا رہی ہے۔ کیپٹن ایل پانڈورنگاریڈی نے حکومت کو انتباہ دیا کہ اگر وہ کسی بھی طرح کے خفیہ ایجنڈہ پر کام کرتی ہے تو ناقابلِ برداشت ہوگا ۔ انہوں نے حکومت کو انتباہ دیتے ہوئے کہاکہ دوبارہ اس قسم کے بیانات سے چیف منسٹر اجتناب کریں ۔ ایل پانڈورنگاریڈی نے گہرے تاسف کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ شدید مخالفت کے باوجود چیف منسٹر بار بار عثمانیہ جنرل ہاسپٹل کو منہدم کرنے کی بات کررہے ہیں جو نہ صرف افسوس ناک ہے بلکہ تلنگانہ کے قدیم تاریخی ورثہ کو تباہی کے دہانے پرپہنچانے والا اقدام بھی ہے ۔ کیپٹن پانڈورنگاریڈی نے چیف منسٹر کے رویہ کو مخالف آصف جاہی حکمران قراردیتے ہوئے کہاکہ عثمانیہ دواخانہ کی قدیم عمارت جسکو رعایا پرور حکمران آصف جاہ صابع نے ریاست حیدرآباد کو مفت طبی سہولتوں کی غرض سے قائم کیا تھاوہ آج شہر حیدرآباد کی شناخت ہے اور ایسی قدیم اور ہریٹیج عمارت کیساتھ کسی بھی قسم کا کھلواڑ ناقابلِ برداشت ہوگا۔ سینئر کمیونسٹ قائد جناب سیدعزیز پاشاہ نے روزنامہ سیاست میںشائع خبر کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ عثمانیہ جنرل ہاسپٹل کی قدیم عمارت کو منہدم کرنے کے اعلان کے بعد عوامی ردعمل کے اظہار کے باوجود دعثمانیہ جنرل ہاسپٹل کی قدیم عمارت کو منہدم کرنے کی ضد کی جمہوری نظام میں کوئی گنجائش نہیںہے۔جناب سید عزیز پاشاہ نے کہاکہ ماہر تعمیرات اسٹرکچر انجینئرس اور مختلف ہریٹیج جہدکاروں کی جانب سے عثمانیہ جنرل ہاسپٹل کی قدیم عمارت کو دورہ کرنے کے بعد پیش کردہ رپورٹس نے ثابت کردیا ہے کہ دواخانہ عثمانیہ کی قدیم ہریٹیج عمارت کو کسی قسم کا کوئی خطرہ لاحق نہیںہے باوجود اسکے عمارت کو منہدم کرنے کی ضد ریاست تلنگانہ کے جمہوری نظام کے لیے خطرہ کی گھنٹی ثابت ہوگی۔ جناب سیدعزیز پاشاہ نے کہاکہ دواخانہ عثمانیہ کے متعلق چیف منسٹر کی ضد ان کے پس پردہ ارادوں پر عمل آواری کا ایک حصہ ہوگی جس کو عوام کے سامنے لائے بغیر اس پر عمل کرنے کی چیف منسٹر تلنگانہ ریاست کے سی آر کوشش کررہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ شہر حیدرآباد کی پہچان سمجھی جانے والی دواخانہ عثمانیہ کی قدیم عمارت کے ساتھ کسی بھی قسم کا کھلواڑ ہمارے لئے ناقابلِ برداشت ہوگا۔ صدرنشین ایچ اے ایس انڈیا مولانا سید طار ق قادری نے عثمانیہ دواخانہ کی قدیم عمارت کو منہدم کرنے کے بجائے اپنے انتخابی وعدوں پر عمل آواری کے لئے کام کرنے کا چیف منسٹر کا مشورہ دیا۔ انہوں نے کہاکہ علیحدہ ریاست تلنگانہ کی تشکیل کے موقع پر ریاست تلنگانہ کے پاس تین ہزار کروڑ کا زائد بجٹ موجود تھا جو اندرون پندرہ ماہ خالی ہوگیا۔ انہوں نے کہاکہ مسلمانوں کے ساتھ پسماندگی کاشکار دیگر طبقات کے بے شمار مسائل حکومت کی عدم دلچسپی کے سبب تعطل کاشکار بنے ہوئے ہیںاور حکمران ان سنگین مسائل کے حل کو یقینی بنانے کے بجائے عثمانیہ جنرل ہاسپٹل کی قدیم عمارت کو منہدم کرنے کے لئے ہٹ دھرمی کا رویہ اختیار کئے ہوئے ہیں۔ انہو ںنے کہاکہ عثمانیہ دواخانہ کی قدیم عمارت کو خستہ حالی کے نام پر منہدم کرنے کے بجائے عمارت کو مرمت ودرستگی عمل میںلائے جائے تاکہ حکومت کے خزانہ کو زائد بوجھ سے بچایا جاسکے۔مولانا سید طار ق قادری نے کہاکہ چیف منسٹر کے سی آر تلنگانہ ریاست کے اقلیتوں اور دیگر پسماندگی کاشکار طبقات کے ساتھ کئے گئے وعدوں پرعمل آواری کرتے ہوئے ریاست کی عوام کے اندر اعتماد بحال کریں۔

TOPPOPULARRECENT