Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / ’’دکھتی رگ پر ہاتھ رکھنے سے وزراء بھڑک اٹھے‘‘

’’دکھتی رگ پر ہاتھ رکھنے سے وزراء بھڑک اٹھے‘‘

تلنگانہ جے اے سی کی جدوجہد سے علحدہ ریاست کا قیام : کودنڈارام
حیدرآباد ۔ 7 جون (سیاست نیوز) صدرنشین تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی پروفیسر کودنڈارام نے ان پر مختلف گوشوں بشمول وزراء، ارکان اسمبلی و دیگر ٹی آر ایس قائدین کی جانب سے کی جانے والی تنقیدوں پر اپنے شدید ردعمل کا اظہار کیا اور انہیں (وزراء ارکان اسمبلی و دیگر گوشوں سے) واضح طور پر کہا کہ تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی کوئی سیاسی تنظیم یا ادارہ نہیں ہے بلکہ عوام کی بہتری کیلئے کام کرنے والی تنظیم کا نام تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی ہے۔ کودنڈارام نے ’’دکھتی رگ پر ہاتھ رکھنے کے ساتھ ہی بھڑک اٹھنے والے‘‘ بعض گوشوں بشمول وزراء، ارکان اسمبلی و ٹی آر ایس قائدین کو یاد دلایا کہ تلنگانہ جدوجہد کے دوران تلنگانہ کی مخالفت کرنے والی سیاسی جماعتوں کو ایک مرکز و پلیٹ فارم پر اکھٹا کرنے کا اعزاز تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی کو ہی حاصل ہے اور آج بھی بلاتخصیص سیاسی وابستگی عوام کی ترقی و بہتری کیلئے ہی تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی اقدامات کرے گی۔ انہوں نے مزید کہا کہ عوامی ترقی ہی تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی کا اہم مقصد اور عین خواہش ہے۔ کودنڈارام نے کہا کہ انہیں کسی سیاسی جماعت کے ذریعہ مقبولیت حاصل نہیں ہوئی بلکہ عوام کے ذریعہ ہی مقبولیت اور شناخت حاصل ہوئی ہے لہٰذا وہ عوام کو کبھی فراموش نہیں کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT