Monday , October 23 2017
Home / ہندوستان / دہشت گردانہ حملوں اور ماویسٹوں کے تشدد کی مذمت

دہشت گردانہ حملوں اور ماویسٹوں کے تشدد کی مذمت

پارلیمنٹ میں مہلوکین کو خراج عقیدت اور قرارداد کی منظوری
نئی دہلی ۔ 25 ۔ اپریل (سیاست ڈاٹ کام) پارلیمنٹ نے آج عالمگیر سطح پرحالیہ دہشت گردانہ حملوں اور آفات سماوی کے ساتھ کیرالا کی ایک مندر میں پٹاخوں کے دھماکوں میں سینکڑوں افراد کی ہلاکتوں پر گہرے رنج و غم کا اظہار کیا ہے ۔ لوک سبھا نے کولکتہ میں زیر تعمیر فلائی اوور کے انہدام اور اروناچل پردیش میں چٹانیں کھسکنے اڈیشہ میں بس حادثہ اور چھتیس گڑھ میں سی آر پی ایف اہلکاروں کی ہلاکتوں پر بھی تعزیت کا اظہار کیا ہے ۔ اسپیکر لوک سبھا سمترا مہاجن نے ایک قرارداد پیش کرتے ہوئے کہا کہ ہم دہشت گردوں کے بہیمانہ حملوں کی مذمت کرتے ہیں جبکہ بروسیلز میں 22 مارچ کو دہشت گردانہ حملہ میں سینکڑوں افراد کی ہلاکت پر غم و غصہ کا اظہار کیا گیا ۔ اس حملہ میں ایک ہندوستانی ہلاک اور دیگر 2 زخمی ہوگئے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایوان عالمی برادری کو یاد دہانی کرواتا ہے کہ دہشت گردی کو جڑ پیڑ سے اکھاڑ پھینکنے کیلئے متحدہ جدوجہد کریں۔ مہاجن نے دہشت گردانہ حملوں ، تمام آفات سماوی اور المناک حادثات پر افسوس کا اظہار کیا جس کے باعث سوگوار خاندانوں کو ذہنی صدمہ سے دوچار ہونا پڑا۔ علاوہ ازیں لوک سبھا کے 4 سابق ارکان کی موت پر بھی تعزیت پیش کی گئی اور بطور احترام دونوں ایوانوں میں دو منٹ کی خاموشی منائی گئی۔ صرنشین حامد انصاری نے بھی بروسیلز میں دہشت گردانہ حملہ کو بربریت اور بہیمانہ قرار دیا اور کہا کہ جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے ۔ صلع دانتے واڑہ (چھتیس گڑھ) میں 31 مارچ کو سرنگ دھماکہ میں سی آر پی ایف کے 7 اہلکاروں کی ہلاکتوں کا تذکرہ کرتے ہوئے کہاکہ اس طرح کا بہیمانہ تشدد قابل مذمت ہے۔ علاوہ ازیں کیرالا کے ایک مندر میں آتشبازی کے مظاہرہ کے دوران 105 افراد کی موت اروناچل پردیش میں چٹانیں کھسکنے سے 116 افراد کی موت اڈیشہ میں بس حادثہ میں 30 مسافرین کی ہلاکتوں پر بھی رنج و غم کا اظہار کیا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT