Wednesday , September 20 2017
Home / کھیل کی خبریں / دہلی کا آج وجئے ہزارے فائنل میں گجرات سے مقابلہ اسٹین اور مرکل کی شاندار بولنگ انگلینڈ 303 پر آل آئوٹ

دہلی کا آج وجئے ہزارے فائنل میں گجرات سے مقابلہ اسٹین اور مرکل کی شاندار بولنگ انگلینڈ 303 پر آل آئوٹ

بنگلورو۔27 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) پراعتماد دہلی وجئے ہزارے ٹورنمنٹ میں اپنے دوسرے خطاب کے لئے پرعزم ہے۔ جیسا کہ کل یہاں چیناسوامی اسٹیڈیم میں کھیلے جانے والے وجئے ہزارے ٹرافی کے خطابی مقابلہ میں اس کا سامنا پرجوش گجرات سے ہوگا۔ اس ڈے اینڈ نائٹ مقابلہ میں اگر دہلی کامیاب ہونا چاہتی ہے تو اسے اپنے بولروں پر انحصار کرنا ہوگا جس میں خاص کر اکشر پٹیل نے گزشتہ مقابلہ میں آل رائونڈ مظاہرہ کیا ہے۔ دہلی 2012-13 ء کے بعد دوسری مرتبہ وجئے ہزارے ٹورنمنٹ میں چمپئن بننے کی خواہاں ہے۔ دہلی کے لئے شکھردھون توجہ کا مرکز ہیں کیوں کہ جنوبی افریقہ کے خلاف منعقدہ حالیہ سیریز میں وہ بہتر مظاہرہ نہیں کرپائے ہیں لہٰذا ان کی کوشش ہوگی کہ آسٹریلیا کے آئندہ ماہ دورے سے قبل فام میں واپسی کرلیں۔ دھون کو ٹورنمنٹ کے کامیاب ترین بولر پٹیل کے خلاف سخت چیلنج درپیش ہوسکتا ہے کیوں کہ پٹیل نے تاحال ٹورنمنٹ میں 19 وکٹیں حاصل کی ہیں۔ دہلی کے کپتان گوتم گمبھیر کو اپنے تجربکار بولر ایشانت شرما اور پون نیگی سے امیدیں وابستہ ہیں لیکن کپتان یہ بھی جانتے ہیں کہ انفرادی مظاہرے ٹیم کے لئے خاطر خواہ نہیں ہے اور خاص کر ٹورنمنٹ میں تاحال ان کے بیٹسمینوں کے مظاہروں میں استقلال کا فقدان ہے۔

فائنل سے قبل انمکٹ چند نے ہماچل پردیش کے خلاف سیمی فائنل میں ناقابل تسخیر 80 رنز کی اننگز کھیلی ہے جو دہلی کی ٹیم کے لئے ایک خوش آئند تبدیلی ہے اور امید کی جارہی ہے کہ پارتھیو پٹیل کی زیر قیادت گجراتی ٹیم کے خلاف بھی انمکٹ اس بہتر مظاہرے کے سلسلہ کو برقرار رکھیں گے۔ گمبھیر کی زیر قیادت دہلی ٹیم کو یہ فائدہ ضرور ہوگا کہ وہ اس سے قبل یہاں اسی میدان پر کوارٹر فائنل اور سیمی فائنل مقابلے کھیلی ہے۔ اس کے برعکس گجرات جس نے الور کی وکٹ پر اپنے گزشتہ دو مقابلے کھیلے ہیں اور یہ میدان بیٹنگ کے لئے سازگار مانا جاتا ہے۔ گجراتی ٹیم کے لئے یہاں کی وکٹ پر بہتر مظاہرہ کرنا ایک چیلنج ہوگا کیوں کہ چیناسوامی اسٹیڈیم کی وکٹ پر بولروں کے لئے حالات سازگار ہیں اور ایشانت شرما نے اپنے تجربہ کو بروئے کار لاتے ہوئے متاثر کن مظاہرہ کیا ہے۔ بین الاقوامی سطح پر وسیع تجربہ ایشانت شرما کو دہلی کے لئے اہم بولر بناتا ہے لیکن سبدوس بھاٹی کے ہمراہ پون نیگی بھی متاثر کن مظاہرہ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ گجرات کی ٹیم میں سوائے اکشر پٹیل کے کوئی بڑے نام کا کھلاڑی موجود نہیں حالانکہ کپتان پارتھیو پٹیل کو بین الاقوامی تجربہ بھی حاصل ہے۔ اکشر پٹیل نے نہ صرف بولنگ سے بہتر مظاہرہ کیا ہے بلکہ بیٹنگ میں بھی وہ 233 رنز بناتے ہوئے ٹیم کے لئے سب سے زیادہ اسکور بنانے والے بیٹسمین بنے ہیں۔ سیمی فائنل مقابلہ میں اکشر پٹیل کا مقابلہ انتہائی متاثر کن رہا جیسا کہ انہوںنے تاملناڈو کے خلاف 43 رنز دیتے ہوئے 6 وکٹیں حاصل کی ہیں۔ گجرات کے لئے رجول بھٹ نے سب سے زیادہ 275 رنز اسکور کئے ہیں جبکہ پارتھیو پٹیل نے بھی چند بہتر مظاہرے کئے ہیں اور ٹیم کو فائنل میں ان سے ایک یادگار اننگز کی امید ہے۔ چیراغ گاندھی اور منپریت جنیجا جنہوں نے 71 اور 74 رنز کی اننگز کھیلی ہیں، وہ بھی فائنل میں دہلی کے خلاف اہم بیٹسمین ہوسکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT