Tuesday , September 26 2017
Home / ہندوستان / دہلی کے سرکاری محکموں میں اقلیتوں کا تناسب 5 فیصد سے بھی کم

دہلی کے سرکاری محکموں میں اقلیتوں کا تناسب 5 فیصد سے بھی کم

نئی دہلی ۔ 18 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) دہلی کے مختلف محکمہ جات بشمول پولیس، ڈی ڈی اے اور سیاحت و ٹرانسپورٹ میں اقلیتی طبقات کی نمائندگی پانچ فیصد سے بھی کم ہے۔ دہلی اقلیتی کمیشن نے اپنی سالانہ رپورٹ میں تفصیلات پیش کرتے ہوئے صورتحال کو انتہائی تشویشناک قرار دیا ہے۔ کمیشن نے ڈپٹی چیف منسٹر منیش سیسوڈیا کو آج اپنی رپورٹ پیش کی، جنہوں نے سفارشات کی بنیاد پر اقدامات کا تیقن دیا۔ رپورٹ جس کا عنوان ’’سرکاری خدمات میں اقلیتوں کی نمائندگی‘‘ ہے کہا گیا کہ 77,397 رکنی دہلی پولیس میں  اقلیتیں صرف 2,993 یعنی 3.8 فیصد ہیں۔ دہلی ڈیولپمنٹ اتھاریٹی (ڈی ڈی اے) کے 6,031 ملازمین میں اقلیتی ملازمین کی تعداد صرف 295 ہے۔ اسی طرح دہلی ٹورازم اینڈ ٹرانسپورٹیشن کے 741  ملازمین میں اقلیتی طبقہ کے ملازمین صرف 32 ہیں۔ اس طرح یہ فیصد بالترتیب 4.8 اور 4.3 ہے۔ دہلی میٹرو ملازمین کے بارے میں جو اعدادوشمار پیش کئے گئے اس پر الجھن پائی جاتی ہے۔ رپورٹ کے مطابق 80,683 ملازمین کے منجملہ اقلیتی فرقہ کے ملازمین کی تعداد صرف 282 ہے۔ دہلی میٹرو ریل کارپوریشن نے اس رپورٹ کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا کہ 8500 باقاعدہ ملازمین ہیں۔ اگر کنٹراکٹ ملازمین کی تعداد بھی شامل کرلی  جائے تو اس میں مزید اضافہ ہوگا۔ کمیشن کے عہدیدار نے کہا کہ ہم میٹرو کے موقف کا جائزہ لینے کے بعد ضرورت پڑنے پر تبدیلی کریں گے۔ منیش سیسوڈیا نے کہا کہ اقلیتوں میں احساس تحفظ کی ضرورت ہے لیکن رپورٹ میں جو افسوسناک صورتحال پیش کی گئی ہے، اس کا جائزہ لیتے ہوئے ضروری اقدامات کئے جائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT