Thursday , September 21 2017
Home / اضلاع کی خبریں / دیہاتوں کے مسائل کی یکسوئی کا مطالبہ

دیہاتوں کے مسائل کی یکسوئی کا مطالبہ

نظام آباد:13؍ جنوری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)دیہی مسائل کو حل کرنے، آبی سہولتوں کی فراہمی کا مطالبہ کرتے ہوئے علیحدہ علیحدہ گروپوں نے کل ضلع کلکٹرکو پرجاوانی میں یادداشت پیش کرتے ہوئے مطالبہ کی یکسوئی کی خواہش کی۔ نوی پیٹ منڈل کے اندرا پوراور نظام پور سے غیر مجازطور پر ریتی کی نکاسی کرنے پر دیہاتیوں نے ضلع کلکٹر کو یادداشت پیش کی اور بتایا کہ غیرمجاز طریقہ سے ہر روز ریتی کی نکاسی کی جارہی ہے اور ریونیو کے عہدیدار ان کا تعاون کررہے ہیں۔ لہذا اسے بند کرنے کی خواہش کی۔ نوی پیٹ منڈل کے ابھنگا پٹنم ریلوے اسٹیشن آندھرا سے تعلق رکھنے والے افراد نے بنجارہ یواجنا سیوا سنگم کے صدر کرشنا کی قیادت میں ضلع کلکٹریٹ پر خالی گھڑوں کے ساتھ کلکٹریٹ آفس کے روبرو مظاہرہ کیااور بتایا کہ ابھنگا پٹنم ریلوے اسٹیشن کے علاقہ میں پینے کے پانی کی شدید قلت چل رہی ہے جس کی وجہ سے عوام کو زبردست مشکلوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔ اسی طرح سڑکوں کی خستہ حالت کی وجہ سے عوام کو مشکلات پیش آرہی ہے۔ ڈرینس کی خرابی کی وجہ سے عوام کو مشکلات پیش آنے کے علاوہ مچھروں کی افزائش میں اضافہ ہورہا ہے اس خصوص میں سرپنچ اور ریونیو سکریٹری، ایم پی ڈی او پہلی مرتبہ نمائندگی کی گئی اس کے باوجود بھی مسائل کو حل نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے دیہاتیوں کی جانب سے کلکٹریٹ کے روبرو دھرنا دینے پر مجبور ہونا پڑرہا ہے۔ ضلع کلکٹر کو پرجاوانی میں ایک تفصیلی یادداشت بھی پیش کی ان کے علاوہ گرام پنچایت مزدوروں نے اجرتوں میں اضافہ کا مطالبہ کرتے ہوئے کلکٹریٹ کے روبرو دھرنا دیا۔ یونین صدر کے راجنا نے بتایا کہ گرام پنچایت کے مزدوروں کو معمولی تنخواہ دی جارہی ہے اس خصوص میں کئی مرتبہ حکومت سے نمائندگی کی گئی۔ تلنگانہ کے قیام کے بعد یہ مزدوروں کے ساتھ نا انصافی کا سلسلہ جاری ہے۔ جبکہ چیف منسٹر مسٹر چندر شیکھر رائو نے اس بات کو واضح کیا تھا کہ تلنگانہ کے قیام کے بعد دھرنا، راستہ روکو، احتجاج کو ختم کردیا جائیگا۔ لیکن مختلف شعبوں میں کام کرنے والے مزدوروں کے ساتھ نا انصافی کی جارہی ہے۔ یکم ؍ جولائی 2015ء کے روز ریاست گیر ہڑتال بھی کی گئی اور اس وقت حکومت نے مزدوروں کے ساتھ جو معاہدہ کیا تھا اس کی عمل آوری نہیں کی گئی مزدور حادثہ میں فوت ہونے کی صورت میں بیمہ کی ادائیگی میں گرام پنچایت لاپرواہی برت رہے ہیں۔ حکومت سرپنچوں کے اعزازیہ میں اضافہ کیا گیا لیکن حفظان صحت کا خیال رکھنے والے مزدوروں کا کوئی لحاظ نہیں رکھا گیا مزدوروں کو ڈبل بیڈ روم، ہیلت کارڈ و دیگر مسائل کو حل کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ پرجاوانی میں جملہ 114 درخواستیں حاصل کی گئی۔ ضلع کلکٹر ڈاکٹر یوگیتا رانا کے علاوہ جوائنٹ کلکٹر رویندرریڈی ، اڈیشنل جوائنٹ کلکٹر راجہ رام، ڈی آر او موہن لال درخواستیں حاصل کرتے ہوئے متعلقہ درخواستوں کی یکسوئی کیلئے عہدیداروں کو احکامات جاری کیا۔

TOPPOPULARRECENT