Friday , July 28 2017
Home / Top Stories / راہول سے پولیس بدسلوکی کی متعدد رہنماؤں نے مذمت کی

راہول سے پولیس بدسلوکی کی متعدد رہنماؤں نے مذمت کی

نئی دہلی 9جون(سیاست ڈاٹ کام  ) کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی کے ساتھ مدھیہ پردیش کے مندسور جاتے وقت پولیس بدسلوکی پر سینئر کانگریسی رہنماوں نے شیو راج سنگھ حکومت کی آج شدید نکتہ چینی کی۔سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم نے پولیس فائرنگ سے انکار کرنے پر مدھیہ پردیش حکومت کی سخت نکتہ چینی کی ، جبکہ کانگریس کے سینئر لیڈر ششی تھرور نے کہا کہ جس گناہ بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت چھپانا چاہتی تھی ، کانگریس نائب صدر کے دورہ سے اس پر سب کی توجہ مبذول ہوئی ۔ راجستھان کے سابق وزیر اعلی اشوک گہلوت نے کہا کہ پولیس نے جس طرح سے مسٹر گاندھی کو روکنے کی کوشش کی وہ قابل مذمت ہے ۔ ڈی ایم کے کے لیڈر اسٹالن نے بھی مسٹر گاندھی کے ساتھ پولیس کی بدسلوکی کی مذمت کی اور کہا کہ انہیں روکا نہیں جانا چاہئے تھا۔کانگرس نے اپنے ٹوئٹر پیج پر ایک تصویر پوسٹ کی ہے جس میں موٹر سائیکل پر بیٹھے مسٹر راہول گاندھی کا ہاتھ پکڑ کر پولیس کے جوان انہیں کھینچنے کی کوشش کررہے ہیں۔ پارٹی نے لکھا ہے کہ مسٹر گاندھی کے راستے پر جگہ جگہ تعینات پولیس کے جوانوں نے نہ صرف مسٹر گاندھی کے ساتھ بدسلوکی کی بلکہ ان کے حامیوں او رمتاثرہ کسانوں کے رشتہ داروں کے ساتھ بھی زیادتی کی۔خیال رہے کہ مسٹر گاندھی پولیس فائرنگ میں مارے گئے کسانوں کے رشتہ داروں کے ساتھ اتحا د کا مظاہر ہ کرنے کیلئے جمعرات کو ان سے ملاقات کے لئے مندسور جارہے تھے لیکن انہیں حراست میں لے لیاگیا۔ مسٹر گانھی نے اس سے پہلے مندسور واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے کہا تھا کہ حکومت کسانوں کے خلاف خود جنگ لڑر ہی ہے ۔

 

کجریوال کی قیامگاہ میں داخلہ سے مشرا کو روک دیا گیا
نئی دہلی 9 جون (سیاست ڈاٹ کام) اعلیٰ سطحی ڈرامہ آج چیف منسٹر اروند کجریوال کی قیامگاہ کے روبرو پیش آیا جب دہلی کے برطرف وزیر کپل مشرا نے اپنے حامیوں کے ساتھ چیف منسٹر سے ملاقات کی کوشش کی لیکن اُنھیں پولیس نے روک دیا۔ داخلہ سے روک دینے پر برہم مشرا اور اُن کے حامیوں نے نعرہ بازی کی اور احتجاجی دھرنا دیا۔ مشرا کجریوال کے ساتھ اُن کے دربار میں اپنا مسئلہ پیش کرنے کے خواہاں تھے۔ اُن کے خلاف کرپشن میں ملوث ہونے کے الزامات ہیں۔ اُن کے کابینی ساتھی ستیندر جین نے یہ الزامات عائد کئے تھے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT