Friday , August 18 2017
Home / Top Stories / رشتوں کو طئے کرنے کیلئے تمام اصول اسلامی ضابطۂ حیات میں موجود

رشتوں کو طئے کرنے کیلئے تمام اصول اسلامی ضابطۂ حیات میں موجود

ادارہ سیاست اور ایم ڈی ایف کے زیراہتمام 60 واںدوبدو پروگرام ، محمد احسن عابد اور دیگر کا خطاب

حیدرآباد ۔ 22؍ مئی ( دکن نیوز) محمد احسن عابد (آئی اے ایس) ڈین اسکول آف ایجوکیشن ٹاٹا انسٹیٹوٹ آف سوشیل سائینس نے کہا کہ انسان جب سے دنیا میں آیا اس پر بہت ساری ذمہ داریاں عائد ہوئیں  وہیں اپنی نسل کو بڑھوتری اور سکون کے لئے رشتہ ازدواج سے منسلک ہونے بہتر رشتے تلاش کرنے میں منہمک ہے ۔ اسلام اپنے ہاں مکمل ضابطہ حیات رکھتا ہے اس نے پائیدار رشتوں کو قائم کرنے کے راز بتا دیئے ۔ اس کے باوجود مسلمانوں کی بڑی تعداد قران و حدیث سے روگردانی اختیار کرتے ہوئے مغربی تہذیب کے طریقوں کو اپنا رہی ہے ۔ جب مسلمان اسلام کے عائیلی قوانین کی روشنی زندگی گذارنے کا فیصلہ کریں گے تو اُن کی زندگیاں دنیا و آخرت میں کامیابی و کامرانی سے ہمکنار ہوں گی ۔ ان خیالات کا اظہار محمد احسن عابد آج ادارہ سیاست اور میناریٹیز ڈیولپمنٹ فورم کے زیر اہتمام مسلم لڑکوں اور لڑکیوں کی شادیوں کے طئے کرنے کیلئے والدین اور سرپرستوں کا 60 ویں ’’دوبہ دوبدو‘‘ پروگرام سے کیا جو سیاست اور میناریٹیز ڈیولپمنٹ فورم کے زیر اہتمام ایس اے ایمپرئیل گاڈرن (ٹولی چوکی) میں منعقد ہوا ۔ جناب محمد عبدالقدیر کارگذار صدر فورم نے مہمانان خصوصی اور والدین و سرپرستوں کا خیرمقدم کیا ۔ قاری الیاس باشاہ کی قراء ت سے دوبہ دو پروگرام کا آغاز ہوا ۔ جناب احمد صدیقی مکیش نے  نعت پیش کی ۔ جناب ظہیر الدین علی خان منیجنگ ایڈیٹرروزنامہ سیاست نے صدارت کی ۔ جناب احسن عابد نے سلسلہ خطاب جاری رکھتے ہوئے سیاست اور میناریٹیز ڈیولپمنٹ فورم کے دوبہ دو ملاقات پروگرام کی کاوشوں کی سراہنا کی اور کہا کہ شہر اور اضلاع میں اب تک 60 دو بہ دو ملاقات پروگرام منعقد ہوچکے ہیں جس کے بہترین نتائج سامنے آ رہے ہیں اس طرح اس نیک فعل پر چاروں سمت سے ہمت افزائی ہونی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر مسلمان قران ‘ سیرت رسولؐ کی روشنی میں اپنی زندگی کو گذارنے کا فیصلہ کریں یہاں تک کہ اپنے لڑکوں اور لڑکیوں کو اسلامی نہج پر ڈھالنے کی کوشش کریں گے تو ان میں ہر سطح سے فضول خرچی کی عادت چھوٹتے ہوئے نظر آئیگی۔ خود اللہ تعالیٰ نے ارشاد فرمایا کہ ’’فضول خرچ لوگ شیطان کے بھائی ہوتے ہیں ‘‘ اس اہم نکتہ کی طرف اللہ تعالیٰ نے معراج کی شب جب اپنے ہاں بلوایا اور جنت و دوزخ کا مشاہدہ کروایا تو اس وقت آپ ؐ کو اسلامی نظام کے قیام کے لئے احکامات دیئے گئے  اس میں یہ بات بھی کہی گئی کہ فضول خرچی کی طرف توجہ نہیں دینی چاہئے ۔ آج دنیا میں انسان ضرورت سے زائد خرچ کرنے کی طرف مائل ہو رہا ہے ۔ اور جب اس اسراف کو دوسرے دیکھتے ہیں تو ان کا دل بھی مائل ہوتا ہے  اس طرز و فکر کو ہمیں اختیار نہیں کرنی چاہئے ۔ انہوں نے شادی کے بعد میاں بیوی اور داماد اور سسرے  کے اور ایک افراد خاندان کے درمیان جو مسائل پیدا ہور ہے ہیں اس پر تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہاکہ جب ایک دوسرے خاندانوں میں جھگڑے ہوتے ہوں تو ایک دوسرے کو معاف کرنے اور وسعت قلبی اختیار کرنے کی طرف مائیل ہونی چاہئے ۔ انہوں نے کہاکہ ایک سروے کے مطابق چالیس ہزار سے زائدلڑکے و لڑکیاں اس آس میں بیٹھی ہوئی ہیں کہ صحیح اور موزوں رشتہ مل جائے ۔ مگر ہرکسی کو ‘ ایک دوسرے سے آگے بڑھنے کی فکر لاحق ہے ۔اور رشتوں کو دھونڈنے کے دوران اس بات کی فکر رہتی ہے کہ لڑکی کا رنگ ‘ خاندان ‘ تعلیم  ‘ ماحول ‘ والدین کی  مصروفیت ‘ آرام دہ مکان ہو وہ جہاں رہتی ہو رہے کیونکہ لڑکے کو بڑے مصیبتوں سے پالا پوسا اور تعلیم سے ہمکنار کیا گیا اگر ہائی فائی رشتوں کو چھوڑ کر معمولی گھرانے کے رشتے تلاش کریں گے تو ’’ لوگ کیا کہیں گے ‘‘  اس غلط فکر و تصور نے معاشرہ کو کہیں کا نہ رکھا۔

 

انہوں نے شادی کے بعد لڑکے اور لڑکی کے درمیان  مسائل کے پیدا ہونے پر جو حالات ہو رہے ہیں اس پر بھی تفصیل سے روشنی ڈالی اور کہاکہ ایک اچھا انسان تلاش کرنے فکر و سعی کریں ۔ جناب افتخار حسین سکریٹری فیض عام ٹرسٹ نے والدین  پر زور دیا کہ اسلام کی روشنی میں شادی کے مسئلہ کو حل کریں اور  ہمیشہ اپنے سامنے آپؐ کے دختر کے نکاح کو رکھیں اس سے نہ صرف شادی آسان ہوگی بلکہ تمام مسائل دور ہوجائیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر گھرانوں میں تعلیم کی طرف رجحان پیدا ہوگا تو از خود لیں دین اور اور فرسودہ رسومات میں کمی پیدا ہوجائیگی ۔ انہوں نے کہاکہ اکثر شادیوں میں کروڑہا روپئے کے اخراجات کئے جا رہے ہیں جس سے معاشرہ پستی کی طرف جا رہاہے ۔ انہوں نے 60 ویں دوبہ دو ملاقات پروگرام کے موقع پر ادارہ سیاست اور میناریٹیز ڈیولپمنٹ فورم کو مبارکباد پیش کی ۔ محمد معین الدین صدرنشین آف ٹولی چوکی کالونیز نے مسلمانوں کو موجودہ صورتحال پر روشنی ڈالی اور کہا کہ ہم بے حسی اور غیر ذمہ داری کی زندگی گذارہے ہیں اس لئے شادی ہونے کے باوجوود لڑکا اور لڑکی میں نظم و ضبط پیدا نہ ہوسکا جس کے لئے معاشرہ میں طلاق و خلع کے واقعات رونما  ہو رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ اللہ کا فرمان ’’ روز قیامت ایک ایک لمحہ کا حساب دینا ہے ‘‘ اس کے باوجود ہم میں خوف کی کیفیت پیدا نہیں ہوتی ۔  مقررین  نے اس دو بہ دو پروگرام کی کامیابی کامرانی پر جناب زاہد علی خان ایڈیٹر سیاست اور جناب ظہیرالدین علی خان منیجنگ ایڈیٹر سیاست اور جناب عامر علی خان نیوز ایڈیٹر سیاست کی کامیاب کاوشوں کی سراہنا کی جس کی وجہ سے یہ پروگرام شہر اور ملک ہی نہیں اقطاع عالم میں اپنی شناخت بنا چکا ہے ۔ نئے رجسٹریشن کاآغاز 10 ؍ بجے دن سے ہوا ۔ لڑکوں کے160 اور لڑکیوں کے 110  رجسٹریشن کروائے گئے۔ رجسٹرین کاؤنٹر 4-30 بجے شام  بند کر دیا گیا ۔ جنہوں نے دفتر ایم ڈی ایف میں رجسٹریشن کروایا انہوں نے بھی اس سے استفادہ کیا ۔ دوبہ دو پروگرام میں سات کاؤنٹرس قائم کئے گئے جن میں انجنیئرنگ ‘ میڈیسن ‘ پوسٹ گریجویٹس ‘ گریجویٹس ‘ انٹرمیڈیٹ‘ ایس ایس سی ‘ عالم و حافظ اور عقدثانی کے کاونٹرس قائم کئے گئے تھے جہاں والدین کی بڑی تعداد نے کونسلرس سے باہمی مشاورت  کے ذریعہ بائیو ڈاٹا کے ذریعہ رشتے طئے کئے ۔ والدین کی سہولت کے لئے کمپیوٹر سیکشن قائم کیا گیاجہاں کمپیوٹرس پر تجربہ کار والینٹرس نے بائیو ڈاٹاس کے مشاہدہ کروائے ۔ اس موقع پر جناب احسن عابد ‘  افتخار حسین نے مختلف کاؤنٹرس کا کارگذار صدر جناب ایم اے قدیر کی نگرانی میں معائنہ کیا ۔ اور ان  کاؤنٹرس پر موجود والدین  اور سرپرستوں سے تبادلہ خیال کرتے ہوئے سیاست اور ایم ڈی ایف کی  اس خدمت کو سراہنا کیا  ۔ جناب ایم اے قدیر کارگذار صدر نے اس موقع پر جناب محمد معین الدین  صدرفیڈریشن آف ٹولی چوکی کالونیز اور ان کے فرزندان کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے تعاون کیا ۔ آج کے اس دو بہ دو ملاقات پروگرام میں شہر اور مضافاتی علاقوں سے شب برات اور روزہ رہنے کے باوجود شہر کے دور ددراز مقاموں اور اضلاع سے والدین  اور سرپرستوں  کی  کثیر تعداد  نے شرکت کی Healther Hearts فاؤنڈیشن کی جانب سے آج کے دوبہ دو ملاقات پروگرام میں ہیلت چیک اپ کیمپ منعقد ہوا جس میں ڈاکٹرس بی پی ‘ جے آر بی ایس اور مختلف چیک اپ کرو ائے  اور اس کیمپ میں ڈاکٹر مدثر نے بڑی دلچسپی سے مرد وخواتین اور بچوں کا طبی معائنہ کیا اور میڈیکل کیمپ کی نگرانی محمد نظام الدین اور محمد فریدالدین نے بڑی حسن و خوبی کے ساتھ انجام دی۔ انہوں نے بتایا کہ  Healther Hearts۔ کی جانب سے سلم علاقوں  میں میڈیکل کیمپ لگائے جاتے ہیں اور آورگیہ شری کے ذریعہ مریضوں کی حکومتی سطح پر مدد کی جاتی ہے ۔ یہ فاؤنڈیشن شہر ہی نہیں ملک گیر سطح پر طبی خدمات  انجام د رہی ہے ۔  دوبہ دو ملاقات  پروگرام کا اختتام 5 بجے شام ہوا ۔  جناب ایم اے قدیر نے والدین  اور سرپرستوں اور محکمہ پولیس اور اراکین فورم کے علاوہ  تمام سے اظہار تشکر کیا ۔ فورم کے اراکین نے مختلف کاونٹرس پر والدین  و سرپرستوں کی مکمل رہبری اور رہنمائی میں محمد تاج الدین ‘ الیاس باشاہ ‘ احمد صدیقی مکیش ‘ محمد نصر اللہ ‘ سید اصغر حسین ‘ صالح بن عبداللہ  باحاذق ‘ اے اے کے امین ‘ رئیس النساء ‘ افسر سعیدہ ‘  سیدہ محمدی ‘  ڈاکٹر ناظم الدین علی ‘ ماجد انصاری ‘ ڈاکٹر سیادت علی ‘ رفیعہ سلطانہ ‘ ثانیہ ‘ محمد عبدالصمد خان ‘ آمنہ فاطمہ اور دیگر موجود تھے ۔ جناب شاہد نے کارروائی چلائی اور شکریہ اداکیا ۔

TOPPOPULARRECENT