Wednesday , August 16 2017
Home / شہر کی خبریں / رمضان المبارک کے انتظامات کے ضمن اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کرنے پر زور

رمضان المبارک کے انتظامات کے ضمن اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کرنے پر زور

ڈپٹی چیف منسٹر تلنگانہ محمد محمود علی کی سکریٹری اقلیتی بہبود کو ہدایت
حیدرآباد۔ 8مئی (سیاست نیوز) رمضان المبارک کے انتظامات کے سلسلے میں ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل کو ہدایت دی ہے کہ جلد اعلی سطحی اجلاس طلب کریں جس میں مختلف محکمہ جات کے عہدیداروں کے علاوہ عوامی نمائندوں کو مدعو کیا جائے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ ہر سال کی طرح حکومت کی جانب سے رمضان المبارک کے ایک ماہ کے دوران نقائص سے پاک انتظامات کیئے جائیں گے اور روزہ داروں اور مصلیوں کو خشوع و خضوع کے ساتھ عبادات کی انجام دہی یقینی بنائی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے رمضان المبارک کے سلسلہ میں درکار فنڈس کی منظوری سے اتفاق کیا ہے اور جاریہ سال 31 اضلاع کے پیش نظر زائد فنڈس مختص کئے جائیں گے۔ محمد محمود علی نے بتایا کہ ٹی آر ایس حکومت تمام مذاہب کے عید و تہوار کا یکساں طور پر اہتمام کرتی ہے اور گزشتہ تین برسوں کے دوران حکومت کی جانب سے عید و تہوار کے موقع پر مثالی انتظامات کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ رمضان المبارک کے آغاز سے قبل باقاعدہ ایکشن پلان تمام محکمہ جات کے حوالے کیا جائے گا جس میں برقی اور آبرسانی موثر سربراہی اور مساجد کے اطراف صحت و صفائی کے انتظامات پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سرکاری ملازمین کو ایک ماہ تک ایک گھنٹہ قبل دفاتر سے گھر جانے کی اجازت رہے گی۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ ریاست میں برقی کی صورتحال اطمینان بخش ہے لہٰذا نہ صرف حیدرآباد بلکہ اضلاع میں بھی بلاوقفہ برقی سربراہی کی ہدایت دی جائے گی۔ خاص طور پر افطار، تراویح اور صحر کے موقع پر برقی کی سربراہی میں خلل پیدا نہیں ہوگا۔ مختلف محکمہ جات کے عہدیداروں پر مشتمل مشاورتی کمیٹی تشکیل دی جائے گی جو وقتاً فوقتاً انتظامات کی نگرانی کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد میں کاروباری اداروں کو رات دیر گئے تک کھلا رکھنے کی اجازت رہے گی۔ تاجروں اور عوام کی جانب سے نمائندگی کی گئی ہے کہ تراویح کے بعد خریداری کی سہولت کو دیکھتے ہوئے دکانات کو دیر تک کھلا رکھنے کی اجازت دی جائے۔ محمد محمود علی نے کہا کہ مساجد کے اطراف افطار سے قبل اور بعد میں صفائی اور کچرے کی نکاسی کو یقینی بنایا جائے گا تاکہ مصلیوں کو مساجد پہنچنے میں تکلیف نہ ہو۔ جبکہ مساجد کے اطراف ٹریفک میں کسی بھی خلل کو روکنے کے لیے پولیس خصوصی انتظامات کرے گی۔ شہر کی تاریخی مساجد پر انتظامات کے سلسلہ میں حکومت کی خصوصی توجہ رہے گی۔ مکہ مسجد میں مصلیوں کی سہولت کے لیے تمام تر انتظامات مکمل کرلیئے گئے ہیں اور حکومت نے مسجد کے مختلف کاموں کے لیے 8.4 کروڑ روپئے مختص کئے ہیں۔ تاریخی مکہ مسجد کے صحن میں واٹر پروف شیڈ نصب کیا گیا ہے تاکہ دھوپ کے موقع پر جمعہ میں اور بارش کی صورت میں تراویح میں مصلیوں کو سہولت ہو۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ وہ رمضان المبارک کے آغاز سے قبل مکہ مسجد کا دورہ کرتے ہوئے انتظامات کا بذات خود جائزہ لیں گے۔ انہوں نے بتایا کہ شہر کے عوامی نمائندوں کی تجاویز کے مطابق ان کے حلقہ جات کی اہم مساجد کے اطراف صحت و صفائی اور روشنی کے انتظامات رہیں گے۔ وقف بورڈ کی جانب سے ہر سال کی طرح مساجد کے گرانٹ ان ایڈ منظور کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT