Wednesday , October 18 2017
Home / Top Stories / رواداری کی سربلندی منتخب سیاستدانوں کا فرض

رواداری کی سربلندی منتخب سیاستدانوں کا فرض

رواداری کا فروغ ہندوستانی تہذیب کا حصہ، بیربھوم ضلع میں صدرجمہوریہ کا بیان
کرناہار ؍ میریتی (مغربی بنگال) ۔ 21 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) ملک کی حکومتوں کو واضح الفاظ میں پیغام دیتے ہوئے صدرجمہوریہ ہند پرنب مکرجی نے آج کہا کہ منتخب سیاستدانوں کا فرض ہیکہ وہ رواداری اور پرامن بقائے باہم کی تہذیبی اقدار کو سربلند رکھیں۔ ان کا یہ بیان حالیہ پرتشدد واقعات بشمول دادری سانحہ کے پس منظر میں اہمیت رکھتا ہے۔ انہوں نے انڈیاٹوڈے کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ ہندوستانی تہذیبی اقدار کی سربلندی منتخب سیاستدانوں کا فرض ہے۔ یہ چوتھی مرتبہ ہے جبکہ صدرجمہوریہ نے تنوع پر فخر کرنے، رواداری کو فروغ دینے اور پرامن بقائے باہم کے احترام اور رواداری کے فروغ کو ہندوستانی تہذیب کے اہم عناصر قرار دیا ہے کیونکہ حال ہی میں سلسلہ وار پرتشدد واقعات دادری سانحہ، سدھیندر کلکرنی کے چہرہ پر سیاہی پوت دینے، غلام علی کا موسیقی پروگرام منسوخ کروانے اور ہریانہ میں گائے کے مبینہ اسمگلرس کو زدوکوب کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ میریتی سے موصولہ اطلاع کے بموجب صدرجمہوریہ نے آج کہاکہ ہندوستانی عوام کو رواداری اختیار کرنا چاہئے

کیونکہ یہی ہندوستانی تہذیب ان کی روزمرہ کارروائیوں میں انہیں متحد رکھتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تہذیب رواداری کو فروغ دیتی ہے۔ ناراضگی اور اختلافات کا احترام کرنا سکھاتی ہے۔ وہ ضلع بیربھوم میں اپنے آبائی مکان پر پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ درگاپوجا صرف ایک مذہبی تہوار نہیں بلکہ سماج کے تمام طبقات کو متحد کرنے والا تہوار ہے۔ فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور امن کی بحالی کا تہوار ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں اس تہوار کے پوشیدہ پیغام کو سمجھنا اور اسے دوسروں تک پہنچانا چاہئے۔ انہوں نے تمنا ظاہر کی کہ یہ تہوار ہمارے سماج میں سماجی یکجہتی کو مستحکم کرنے والا ثابت ہوگا۔ انتشار پسند طاقتوں کو فنا کردے گا۔ صدرجمہوریہ کا یہ تبصرہ ایک دلت خاندان پر کل کے حملہ کے بعد منظرعام پر آیا ہے جس میں دو معصوم دلت بچوں کو فریدآباد میں زندہ نذرآتش کردیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT