Friday , October 20 2017
Home / شہر کی خبریں / روہت کی خودکشی پر برہم طلبہ کا احتجاج‘ کل ملک گیر ہڑتال

روہت کی خودکشی پر برہم طلبہ کا احتجاج‘ کل ملک گیر ہڑتال

کارگذار وائس چانسلر سریواستو کا تقررمسترد‘ پرکاش امبیڈکر کی طلبہ سے بات چیت ‘ کیمپس میںسخت سیکورٹی

حیدرآباد۔ 25جنوری ( پی ٹی آئی )  دلت اسکالر روہت ویمولہ کی خودکشی کے مسئلہ پر حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی میں جاری ایجی ٹیشن میں آج مزید شدت پیدا ہوگئی ۔ طلبہ نے ویپن سریواستو کے بحیثیت عبوری وائس  چانسلر تقرر کو مسترد کردیا اور 27جنوری کو یونیورسٹیز کی ملک گیر ہڑتال منانے کا اعلان کیا ۔ ایک ایسے وقت جب مختلف یونیورسٹیوں کے طلبہ نے کیمپس پہنچ کر روہت کی خودکشی کے خلاف جاری احتجاج سے یگانگت کا اظہار کیا ہے ۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی برائے سماجی انصاف نے اعلان کیا کہ ان کے مطالبات کی عدم یکسوئی کی صورت میں تلنگانہ اور آندھراپردیش میں بند منایا جائے گا ۔ احتجاجی طلبہ وائس چانسلر پی اپا راؤ کی برطرفی کا مطالبہ کررہے ہیں جبکہ وہ ( اپا راؤ ) اچانک رخصت پر روانہ ہوگئے ہیں ۔ علاوہ ازیں یونیورسٹیز میں درج فہرست طبقات و قبائل اور اقلیتی برادری سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی خودکشیوں کے واقعات کو روکنے کیلئے ’’ روہت ایکٹ‘‘ سے موسوم قانون سازی کی جائے ۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے برائے سماجی انصاف کے ایک ترجمان نے کہا کہ ’’ روہت کو انصاف دلائے جانے تک ایجی ٹیشن کو آگے بڑھانے کیلئے ایک ملک گیر جوائٹ ایکشن کمیٹی کے قیام کی غرض سے ہم دیگر یونیورسٹیوں کی جوائنٹ ایکشن کمیٹیوں سے ربط میںہیں ۔ جے اے سی نے 27 جنوری کو ملک بھر کی تمام یونیورسٹیوں میں ہڑتال کرنے کی اپیل کی ہے ‘‘ ۔ طلبہ کے شدید احتجاج کے درمیان نوتقرر شدہ کارگذار وائس چانسلر سریواستو نے طلبہ سے اپنی بھوک ہڑتال ختم کرنے کی اپیل کی اور کہا کہ صرف مذاکرات کے ذریعہ ہی تعطل کا حل برآمد ہوسکتا ہے اور انتظامیہ کو اپنا کام جاری رکھنے کی اجازت دی جائے ۔ انہوں نے پی ٹی آئی سے کہا کہ ’’ ہم گذشتہ تین دن سے کہہ رہے ہیں کہ وہ بھوک ہڑتال نہ کریں ۔ اصل مسئلہ وقت کا ہے ۔ آج 25 جاری ہے طلبہ کے اسکالر شپس اور فیلو شپس جاری کرنا ہے ۔ ایک مقررہ ضابطہ ہے جس پر عمل کرنا ضروری ہے ۔  کسی کو ( اسکالرشپس کے ) چیکس پر دستخط کرنا ہوتاہے ‘‘ ۔  اس یونیورسٹی کے طلبہ ‘ ایس سی / ایس ٹی فیکلٹیز اور افسران کی انجمنوں نے کار گذار وائس چانسلر کے فرائض کی انجام دہی کیلئے سریواوستو کے انتخاب پر اعتراض  کرتے ہوئے الزام عائد کیا کہ وہ ( سریواستو)  اُس ایکزیکٹیوکونسل کی ذیلی کمیٹی کی قیادت کررہے تھے جو ( کمیٹی) روہت کی خودکشی کی ذمہ دار ہے  نیز 2008ء کے دوران ایک اور دلت طالب علم سنتھل کمار کی خودکشی کے واقعہ کے ملزمین میں شامل ایک ملزم بھی ہیں ۔ یونیورسٹی کے احاطہ میں پولیس کی بھاری جمعیت تعینات کرتے ہوئے سیکیورٹی کو سخت ترین بنا دیا گیا ہے اور کیمپس میں داخل ہونے والوں کی پولیس کی جانب سے شناخت و توثیق کی جارہی ہے ۔ روہت کی خودکشی پر غم و غصہ کا اظہار کرتے ہوئے سات طلبہ کے ایک نئے جتھہ کی طرف سے شروع کردہ غیر معینہ مدت کی بھوک ہڑتال آج دوسرے دن میں داخل ہوگئی ۔ اس موقع پر پانڈیچری یونیورسٹی ‘ آندھرا یونیورسٹی ‘ آئی آئی ٹی ممبئی ‘ عثمانیہ یونیورسٹی ‘ مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی اور ٹاٹا انسٹی ٹیوٹ آف سوشل سائنس کے سینکڑوں طلبہ نے آج کیمپس پہنچ کر احتجاجی طلبہ سے اپنی بھرپور تائید و یگانگت کا عہد کیا ۔ دستور کے معمار آنجہانی بھیم راؤ امبیڈکر کے پوترے پرکاش امبیڈکر نے بھی کیمپس پہنچ کر طلبہ سے بات چیت کی ۔ حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی نے ہائیکورٹ سے کہا کہ وہ چار طلبہ کی معطلی کے احکام منسوخ کرچکی ہے لیکن طلبہ نے شکایت کی کہ انہیں احکام کی نقل نہیں دی گئی ۔

TOPPOPULARRECENT