Sunday , September 24 2017
Home / Top Stories / رپورٹر سیاست ایس ایم بلال پر لینڈ گرابرس کا حملہ

رپورٹر سیاست ایس ایم بلال پر لینڈ گرابرس کا حملہ

زخمی رپورٹر کی عیادت سے واپسی کے دوران ایم بی ٹی لیڈر امجد اللہ خان خالد بھی حملہ کا نشانہ، کار کو شدید نقصان

حیدرآباد ۔ /19 اپریل (سیاست نیوز) ظلم کے خلاف آواز اٹھانے اور ظالم کی سرکوبی کیلئے تیار رہنے والوں کو ہمیشہ مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اور جب کبھی ظالم عدم تحفظ کا شکار ہوتے ہیں تو وہ بوکھلاہٹ میںاوچھی حرکتوں پر اترآتے ہیں ۔ سید محمد بلال کرائم رپورٹر روزنامہ سیاست پر ہوئے قاتلانہ حملے کے بعد لکشمی نگر کالونی سعیدآباد میں موجود متنازعہ اراضی کا معاملہ سیاسی نوعیت اختیار کرگیا ہے ۔ چند برس قبل تک بھی تعلیم یافتہ طبقہ کا علاقہ تصور کئے جانے والے حلقہ اسمبلی ملک پیٹ میں بھی اب غنڈہ عناصر بالخصوص لینڈ گرابرس سرگرم ہوچکے ہیں اور سرکاری جائیدادوں پر ہونے والے قبضوں کے خلاف آواز اٹھانے والوں کو نشانہ بنایا جانے لگا ہے ۔ لکشمی نگر میں ہی سید محمد بلال کی عیادت کرتے ہوئے ان کے مکان سے واپس ہورہے مجلس بچاؤ تحریک قائد و سابق کارپوریٹر جناب امجد اللہ خان خالد پر شرپسند عناصر نے حملہ کردیا جس کے نتیجہ میں ان کی گاڑی کے شیشے ٹوٹ گئے اور وہ بھی زخمی ہوگئے ہیں ۔ آج سہ پہر کرائم رپورٹر روزنامہ سیاست جناب ایس ایم بلال کے مکان واقع لکشمی نگر کالونی سعیدآباد پر بعض مقامی افراد نے حملہ کردیا جس میں وہ شدید زخمی ہوگئے اور انہیں فوری طور پر دواخانہ عثمانیہ منتقل کیا گیا جہاں ان کا آوٹ پیشنٹ کی حیثیت سے علاج کیا گیا ۔ سینئر رپورٹر روزنامہ سیاست پر حملے کی اطلاع کے ساتھ ہی ٹی آر ایس قائد  مسٹر سنگی ریڈی سرینواس ریڈی ان کے مکان پہونچ گئے اور انہیں دواخانہ منتقل کیا ۔ بعد ازاں جب ایس ایم بلال واپس اپنے مکان پہونچے تو اُس وقت ایم بی ٹی قائد امجد اللہ خان خالد ان کی عیادت کیلئے لکشمی نگر کالونی پہونچے ۔ واپسی میں ان کی گاڑی کو روکتے ہوئے بعض مقامی شرپسند عناصر نے ان پر حملہ کردیا ۔ تفصیلات کے بموجب لکشمی نگر کالونی میں واقع ایک متنازعہ اراضی پر جاری غیرمجاز تعمیر کے معاملے میں کالونی کے افراد میں ناراضگی پائی جارہی تھی اور تعمیر کرنے والوں کو سیاسی سرپرستی حاصل ہونے کے سبب کوئی ان کے خلاف آواز اٹھانے کیلئے تیار نہیں تھا لیکن جب آواز اٹھائی گئی تو مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کی جانب سے لامحالہ کارروائی شروع کی گئی ۔ جس پر برہم عناصر نے رپورٹر سیاست پر ان کے مکان میں گھس کر حملہ کردیا جس میں وہ اور ان کے دیگر افراد خاندان اور رپورٹر سیاست کی والدہ زخمی ہوگئے ہیں ۔ سعیدآباد پولیس اسٹیشن میں اس واقعہ کی تحریری شکایت جناب ایس ایم بلال نے درج کروائی جس پر پولیس نے ملزمین کے خلاف دستور کی دفعہ 324 ، 448 ، 504 ، 506 ، 382 ، RW34IPC کے تحت مقدمات درج کرلئے ہیں ۔ انسپکٹر سعیدآباد مسٹر ستیہ نے بتایا کہ ملزمین کی جانب سے بھی ایک شکایت درج کروائی گئی ہے جس پر تحقیقات جاری ہیں ۔ جناب امجد اللہ خان خالد بھی ان پر کئے گئے حملے کی تحریری شکایت سعیدآباد پولیس اسٹیشن میں درج کروائی ہے جس پر پولیس نے ایک اور علحدہ مقدمہ درج کرتے ہوئے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے ۔ مسٹر امجد اللہ خان خالد پر کئے گئے حملے کے فوری بعد انہیں عثمانیہ ہاسپٹل منتقل کیا گیا جہاں ان کا طبی معائنہ کرتے ہوئے علاج و معالجہ کے بعد آرام کا مشورہ دیتے ہوئے روانہ کردیا گیا ۔ انہوں نے بتایا کہ اب تک ان پر 4 قاتلانہ  حملے ہوچکے ہیں جن میں غیرسماجی عناصر نے ان پر مہلک ہتھیاروں سے حملے کی کوشش کی ہے لیکن تاحال پولیس کی جانب سے ان مقدمات میں تحقیقات کرتے ہوئے خاطیوں کی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی ۔ انہوں نے ایس ایم بلال پر ہوئے حملے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے واقعات سے علاقہ ملک پیٹ ، سعیدآباد ، اکبر باغ وغیرہ کی شبیہہ متاثر ہورہی ہے ۔ سابق میں کبھی لینڈ گرابرس  و سود خوروں کی ان علاقوں میں سرگرمیاں نہیں ہوا کرتی تھیں لیکن اب ان کی حوصلہ افزائی کی جارہی ہے ۔ جناب ایس ایم بلال نے اپنے بیان میں بتایا کہ ان پر حملہ کرنے والوں کو وہ اچھی طرح جانتے ہیں اور ان کے خلاف قانونی کارروائی کریں گے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کے گھر پر حملہ کیا گیا جس میں مہلک ہتھیار استعمال کرنے کی کوشش کی گئی۔ انہوں نے اپنی شکایت میں مزید بتایا کہ جس وقت ان پر حملہ کیا گیایہ کہا جا رہا تھا کہ گزشتہ انتخابات میں ٹی آر ایس کے حق میں مہم چلانے کا  نتیجہ ہے جبکہ وہ ایک کرائم رپورٹر ہیں اور سیاسی خبررسانی سے ان کا کوئی تعلق نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT