Thursday , June 22 2017
Home / شہر کی خبریں / رکن پارلیمنٹ رویندر بابو کے ساتھ سیکورٹی عملہ کی بدسلوکی

رکن پارلیمنٹ رویندر بابو کے ساتھ سیکورٹی عملہ کی بدسلوکی

چیف منسٹر کے سی آر کی قیامگاہ کے باہر دھوپ میں کھڑا کیا گیا، پروٹوکول بری طرح نظر انداز
حیدرآباد۔/10مئی، ( سیاست نیوز) چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کو شادی کا دعوت نامہ دینے چیف منسٹر کی رہائش گاہ پہنچنا ایک آندھرائی سینئر قائد تلگودیشم پارٹی و رکن پارلیمان حلقہ لوک سبھا املا پورم مسٹر رویندر بابو کیلئے نہ صرف تکلیف دہ بات ہوئی بلکہ ان کی ( رکن پارلیمان ) سیاسی زندگی کا انتہائی تلخ تجربہ ثابت ہوا۔ تفصیلات کے مطابق بتایا جاتا ہے کہ رکن پارلیمان مسٹر رویندر بابو جو کہ چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کے قریبی رفیق اور ان کے کٹر حامی بتائے جاتے ہیں ‘ اپنی دختر کی شادی کا دعوت نامہ دینے کے مقصد سے چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی قیامگاہ کی ابتدائی گیٹ ( سیکوریٹی احاطہ کے پاس ) پر پہنچے تو ڈیوٹی پر تعینات سیکوریٹی اسٹاف نے انہیں روک دیا جبکہ انہوں نے ( ایم پی ) نے اپنا تعارف ہی نہیں بلکہ اپنا شناختی کارڈ سیکوریٹی اسٹاف کی طلبی پر پیش کردیا۔ لیکن اس کے باوجود رکن پارلیمان کو اندر جانے سے سیکوریٹی اسٹاف نے روک دیا اور پھر سیکوریٹی اسٹاف نے چیف منسٹر آفس کے عہدیداروں کو رکن پارلیمان املا پورم کی آمد سے واقف کروایا۔ لیکن پروٹوکول سے ناواقف چیف منسٹر آفس کے عہدیدار اور سیکوریٹی اسٹاف نے باہر ہی انتظار کرنے کی رکن پارلیمان کو ہدایت دی۔ جس پر انہوں نے کافی دیر تک کڑی دھوپ میں انہیں چیف منسٹر آفس کے عہدیداروں کی جانب سے اندر آنے کی اجازت دیئے جانے کا انتظار کرنا پڑا۔ لیکن انہیں چیف منسٹر سے ملاقات کرنے کیلئے قیامگاہ کے اندرونی احاطہ میں مدعو نہیں کیا گیا، بعد ازاں چیف منسٹر کی قیامگاہ سے تھوڑی دیر کے فاصلہ پر موجود اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے مسٹر رویندر بابو نے اپنی سیاسی زندگی میں آج پہلی مرتبہ ہوئے انتہائی تکلیف دہ اور تلخ تجربہ سے واقف کروایا اور چیف منسٹر آفس عہدیداروں کی پروٹوکول سے ناواقفیت اور نابلد رہنے کے ساتھ ساتھ سیکورٹی اسٹاف کے سخت گیر رویہ پر اپنی شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ انہیں گیٹ کے پاس ہی روک کر نہ صرف ان کی توہین کی ہے بلکہ آندھرائی تلگو عوام کی توہین کی گئی ہے۔ مسٹر رویندر بابو نے بتایا کہ چیف منسٹر آفس کے عہدیدار اور سیکوریٹی عہدیداروں کو رکن پارلیمان کے پروٹوکول کا اندازہ نہ رہناانتہائی بدبختی ہی نہیں بلکہ شرمناک بات ہے۔ جبکہ انہوں نے بار بار اپنے شناختی کارڈ سے واقف کروایا۔ لیکن اس کے باوجود انہیں کافی دیر تک دھوپ میں ٹھہرایا گیا۔ رکن پارلیمان مسٹر رویندر بابو نے ان کے ساتھ پیش آئے واقعہ پر چیف منسٹر اسٹاف کے رویہ پر نہ صرف سخت احتجاج کیا بلکہ اس کی شدید مذمت بھی کی اور چیف منسٹر مسٹر کے چندر شیکھر راؤ اپنے ماتحت عہدیداروں و سیکوریٹی اسٹاف کو پروٹوکول سے متعلق مناسب تربیت دینے کے اس طرح کے اسٹاف و عہدیداروں کے خلاف سخت کارروائی کی جانی چاہیئے تاکہ آئندہ کسی بھی موقع پر اس طرح کے واقعات کا اعادہ نہ ہوسکے۔ انہوں نے مزید کہا کہ چیف منسٹر کی قیامگاہ کے پاس ایک رکن پارلیمان کے ساتھ عملی طور پر اس طرح  کے واقعات پیش آتے ہیں تو عام آدمی ضرورت مند غریب عوام کے ساتھ کس طرح کا طرز عمل ہوا کرتا ہے اس کا کسی کو بھی اندازہ نہیں ہوگا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT