Monday , August 21 2017
Home / ہندوستان / ریاستوں کو منریگا فنڈس کی عدم اجرائی ، سپریم کورٹ کی مرکز پر برہمی

ریاستوں کو منریگا فنڈس کی عدم اجرائی ، سپریم کورٹ کی مرکز پر برہمی

دیہاتوں میں پینے کا پانی بھی نہیں ہے ، ’ریاستوں کو ایک سال بعد نہیں بلکہ اب اور فی الفور فنڈس جاری کئے جائیں ‘
نئی دہلی ۔ 6 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے مہاتما گاندھی قومی دیہی ضمانت روزگار اسکیم (منریگا) کے تحت ریاستوں کو خاطرخواہ فنڈ جاری نہ کرنے پر آج مرکز کی سخت سرزنش کی اور خشک سالی سے متاثرہ ریاستوں میں اس اسکیم پر ہونے والے مصارف کی تمام تفصیلات فراہم کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ ضرورتمندوں کو ایک سال بعد نہیں بلکہ اب اور فی الفور امداد بہم پہنچائی جائے۔ جسٹس مدن بی لوکور کی زیرقیادت ایک بنچ نے کہاکہ ’’اگر آپ فنڈس جاری نہیں کرتے تو کوئی بھی کام کرنا پسند نہیں کرے گا۔ ریاستیں کہیں گی کہ ان کے پاس فنڈس نہیں ہیں چنانچہ وہ منریگا کے کاموں کیلئے کسی کو کوئی رقم ادا نہیں کرسکتے۔ کوئی بھی ریاست عوام سے اپنے طور پرکوئی وعدہ بھی نہیں کرسکتی‘‘۔  بنچ نے مزیدکہا کہ ایک سال بعد نہیں بلکہ فی الفور امداد فراہم کی جائے۔ درجہ حرارت 45 ڈگری سلسیس تک بڑھ چکا ہے۔ پینے کیلئے پانی بھی نہیں ہے۔ وہاں (دیہاتوں میں) کچھ بھی نہیں ہے۔ آپ کو کچھ کرنا چاہئے اور وقت پر امداد فراہم کی جائے‘‘۔ بنچ نے کہا کہ خود حکومت کے اعداد کے مطابق کام کے دن 48 دن ہیں جبکہ ضابطہ کہتا ہے کہ یہ 100دن ہونا چاہئے۔ اس بنچ نے جس میں جسٹس این وی رمنا بھی شامل ہیں۔ مزید کہا کہ بحث میں جواز ہے کیونکہ آپ (مرکز) فنڈس جاری نہیں کررہے ہیں۔ ریاستیں منریگا کے تحت عوام کو کام دینے کیلئے تیار نہیں ہیں اور چنانچہ ایام کار کے اوسط میں کمی ہورہی ہے۔ ہمیں اس مسئلہ کو محسوس کرنا چاہئے۔ 9 ریاستیں خشک سالی سے متاثر قرار دی جاچکی ہیں اور اب راجستھان کو بھی خشک سالی سے متاثرہ ریاست قرار دیا گیا ہے‘‘۔

TOPPOPULARRECENT