Wednesday , July 26 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ریاست میں آبی بحران سے عوام مشکلات سے دو چار

ریاست میں آبی بحران سے عوام مشکلات سے دو چار

کسانوں پر ظلم ناقابل برداشت ‘ شادنگر میں بی جے پی قائد این جناردھن ریڈی کی پریس کانفرنس

شادنگر ۔ 14؍ مئی ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) تلنگانہ ریاستی حکومت سے ریاست بھر میں ایک بھی خاندان خوش حال نہیں ہے ۔ تلنگانہ ریاست میں صرف اور صرف کے سی آر خاندان خوش ہے ۔ ریاست کے کسانوں سے کے سی آر کو کسی بھی طرح کی ہمدردی نہیں ہے ۔ گذشتہ تین سال میں ریاستی حکومت نے کسانوں کے لئے کچھ بھی نہیں کیا ۔ حکومت تلنگانہ کسانوں کی فلاح و بہبودی اور ترقی فراہم کرنے میں یکسر ناکام ہوگئی ہے ۔ تلنگانہ چیف منسٹر کے سی آر اقتدار کا استعمال کرتے ہوئے کسانوں کو نشانہ بناتے ہوئے مختلف ظلم و زیادتیاں کر رہے ہیں ۔ ان خیالات کا اظہار سابق وزیر و بی جے پی قائد ناگم جناردھن ریڈی نے شادنگر آئی بی گیسٹ ہاوز میں منعقدہ پریس کانفرنس سے مخاطب کرتے ہوئے کیا ۔ انہوں نے تلنگانہ حکومت بالخصوص چیف منسٹر کے چندراشیکھرراؤ پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کھمم میں مرچی کسانوں پر لاٹھی چارج اور کسانوں کو ہتھکڑیاں پہنانے کے واقعہ کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بی جے پی پارٹی کسانوں میں ظلم و زیادتیوں کو برداشت نہیں کرے گی ۔ چیف منسٹر کے سی آر ریاست کے کسانوں کے قرض معاف کرنے کے عہدے کو آج تک پورا نہیں کیا ۔ ریاست میں کسانوں کے ساتھ ساتھ جانور بھی پریشان ہیں لیکن حکومت تلنگانہ کسانوں کو ترقی فراہم کرنے میں یکسر ناکام ہوگئی ہے ۔ تلنگانہ حکومت کسانوں کو راحت پہنچانے کے بجائے کسانوں کو مزید تکلیف میں ڈال رکھا ہے ۔ کھمم میں کسانوں کے ساتھ پیش آئے واقعہ کو افسوسناک واقعہ قرار دیا ۔ انہوں نے تلنگانہ حکومت پر سخت تنقید کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت کی جانب سے آبی درپیش مسائل کی یکسوئی کے لئے تلنگانہ حکومت کے لئے روانہ کردہ رقم کو مشن کاکتیہ ‘ مشن بھاگیرتا میںاستعمال کرنے پر برہمی کا اظہار کیا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ پراجکٹوں میںپائی جانے والی بدعنوانیوں پر بھی برہمی کا اظہار کیا ۔ جبکہ تلنگانہ ریاست میں موسم گرما کی وجہ سے عوام پانی کو لیکرکافی پریشان ہے ۔ مرکزی حکومت کے فنڈس کو دوسرے پراجکٹوں کے سمت موڑنے پر شدید برہمی ظاہر کی ۔ پراجکٹوں کے ناموں پر تلنگانہ حکومت بلند بانگ دعوے اور وعدے کرتے ہوئے عملی میدان میں پوری طرح ناکام ہوگئی ہے ۔ پراجکٹوں میں بدعنوانیوں کو دیکھتے ہوئے ناگم جناردھن ریڈی نے 4 درخواستیں ریاستی ہائیکورٹ میں داخل کی ہے ۔ ناگم جناردھن ریڈی نے کہاکہ ریاست میں آبی بحران کی وجہ سے عوام مشکل حالات کا سامنا کر رہے ہیں ۔ اور اپنی ضروریات کو پورا کرنے کے لئے عوام پانی خرید رہے ہیں۔ تلنگانہ حکومت کی موجودگی کے باوجود عوام کو پانی خرید کر استعمال کرنا پڑھ رہا ہے ۔ اس کے علاوہ بیت الخلاء کی تعمیر کرنے والوں کو بھی گذشتہ ایک سال سے رقم جاری نہیں کی جا رہی ہے ۔ سوچھ بھارت کے تحت منظورہ رقم بھی ریاست کے دیگر پراجکٹوں کی جانب موڑ دیئے جانے پر افسوس کا اظہار کیا ۔ چیف منسٹر کے سی آر کی بیان بازی کو ناگم جناردھن ریڈی نے اس طرح تعبیر کرتے ہوئے کہا کہ (الٹا چور کوتوال کو ڈاٹے ) ناگم جناردھن ریڈی نے کہا کہ مرکزی حکومت کسانوں کی فلاح و بہبود اور ترقی فراہم کرنے کیلئے سنجیدگی کے ساتھ غور و فکر کرتے ہوئے فصل بیما یوجنا اسکیم کو روبعمل لایا ہے۔ کسانوں کے حق میں عنقریب قومی شاہراہ پر کسانوں کے ہمراہ راستہ روکو احتجاجی دھرنا منظم کرنے کا اعلان کیا ۔ کھمم مرچی کسانوں کے ساتھ تلنگانہ حکومت انصاف کرنے کے بجائے مرچی کسانوں پر لاٹھی چارج اور ہتھکڑیاں لگانے پر سخت برہمی کا اظہار کیا ۔ اس موقع پر سری وردھن ریڈی ‘ وینکٹیش گپتا ‘ کرشنا ریڈی ایڈوکیٹ کے علاوہ دیگر موجود تھے ۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT