Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / ریاست کے تمام دواخانوں میں سوائن فلو مرض سے نمٹنے کی سہولتیں

ریاست کے تمام دواخانوں میں سوائن فلو مرض سے نمٹنے کی سہولتیں

محمد محمود علی کے مرض کا بروقت علاج ، کانگریس ارکان کے سوالات پر وزیر صحت کا جواب
حیدرآباد۔17 مارچ (سیاست نیوز) تلنگانہ قانون ساز اسمبلی میں آج سوائن فلو کے مسئلہ پر مباحث کے دوران ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کے سوائن فلو سے متاثر ہونے کا مسئلہ چھایا رہا۔ کانگریس کے ارکان نے حکومت پر سوائن فلو پر قابو پانے میں ناکامی کا الزام عائد کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی اور ان کی شریک حیات کو سوائن فلو ہونے کی مثال پیش کی۔ اس موقع پر ڈپٹی چیف منسٹر ایوان میں موجود تھے تاہم وزیر صحت ڈاکٹر لکشما ریڈی نے اس بات کی تصدیق کی کہ محمد محمود علی سوائن فلو سے متاثر ہوئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت سوائن فلو سے کس طرح کامیابی سے نمٹ رہی ہے اس کی واضح مثال ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی ہیں جو تیزی سے صحت مند ہوکر ہمارے درمیان ہیں۔ سوائن فلو کے آثار نمایاں ہوتے ہی موثر علاج کے ذریعہ صحت یاب ہونے کی مثال محمد محمود علی ہیں جو آج پوری طرح صحت مند ہوچکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ محمود علی کو سوائن فلو کی علامات پر نمس منتقل نہیں کیا گیا بلکہ گھر پر ہی ان کا علاج کیا گیا اور بروقت علاج کے سبب مرض پر فوری قابو پالیا گیا۔ وزیر صحت نے اعتراف کیا کہ ملک کی کئی ریاستوں میں سوائن فلو کے مریضوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے۔ 2010 اور 2015ء میں سوائن فلو کے کیسس میں اضافہ ہوا تاہم تلنگانہ حکومت نے عوام میں شعور بیداری کے ذریعہ اموات پر قابو پالیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کے تمام ٹیچنگ، ڈسٹرکٹ اور ایریا ہاسپٹلس میں اس مرض سے نمٹنے کے لیے تمام تر سہولتیں فراہم کی گئی ہیں۔ گاندھی اور نمس میں سوائن فلو کے مریضوں کے لیے خصوصی وارڈس قائم کئے گئے۔ لکشما ریڈی نے کہا کہ ملیریا اور ڈینگو جیسے امراض جو مچھروں کے سبب پھیلتے ہیں اس پر بہتر صحت و صفائی کے ذریعہ قابو پایا جاسکتا ہے۔ دیہی اور ایجنسی علاقوں میں بیماریوں سے روک تھام کے لیے شعور بیداری مہم چلائی گئی جس کے نتیجہ میں مریضوں کی تعداد میں کمی واقع ہوئی ہے۔ حالیہ عرصہ میں مرض کے بارے میں پتہ چلانے سے متعلق شعور بیدار ہوا اور لوگ مختلف معائنے کرواتے ہوئے امراض کے بارے میں جاننے کی کوشش کررہے ہیں جس کے نتیجہ میں سوائن فلو کے کیسس میں اضافہ درج ہوا ہے لیکن اموات پر قابو پالیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ خانگی اور کارپوریٹ ہاسپٹلس پر بھی نظر رکھی جائے گی کہ وہ غریب مریضوں کے ساتھ بہتر علاج کو ترجیح دیں۔ وزیر صحت نے ڈاکٹر جے گیتا ریڈی اور دوسروں کے سوال پر تحریری جواب میں بتایا کہ جنوری 2017ء کے دوران 50 سوائن فلو کے کیسس درج کئے گئے اور گاندھی ہاسپٹل میں 5 مریضوں کی موت واقع ہوئی ہے۔ ڈاکٹر گیتا ریڈی نے سوائن فلو کے واقعات میں اضافے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سرکاری دواخانوں میں بہتر علاج کی سہولتوں کی کمی کے باعث 80 فیصد افراد خانگی ہاسپٹلس کا رخ کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ریاست کے ڈپٹی چیف منسٹر خود سوائن فلو سے متاثر ہوئے۔ ڈاکٹر گیتا ریڈی نے بتایا کہ 2015ء میں 101 اور 2016ء میں سوائن فلو سے 12 اموات واقع ہوئیں۔ گزشتہ تین ماہ میں 4866 ۰ نمونے ) سیمپلس کا معائنہ کیا گیا جن میں 920 سیمپلس سوائن فلو سے متاثرہ پائے گئے اور تین ماہ میں 16 اموات واقع ہوئی ہیں۔ کانگریس کے ارکان ڈاکٹر چنا ریڈی اور رام موہن ریڈی نے بھی ڈپٹی چیف منسٹر اور ان کی شریک حیات کے سوائن فلو سے متاثر ہونے کا حوالہ دیا اور کہا کہ جب حکومت میں شامل افراد اس مرض سے بچ نہیں پائے تو عام افراد کس طرح بچ پائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT