Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / زندگی کے ہر شعبہ میں کامیابی کے لیے سخت محنت ضروری

زندگی کے ہر شعبہ میں کامیابی کے لیے سخت محنت ضروری

کامیابی کیلئے شوہر اور سسرالی رشتہ داروں کی حوصلہ افزائی ،ایم ایس میں گولڈ میڈلس اور ایوارڈس حاصل کرنے والی ڈاکٹر انجم موسیٰ کا اظہار خیال
حیدرآباد ۔ 19 ۔ اپریل : ( نمائندہ خصوصی ) : حجاب کا اہتمام کسی بھی طرح کسی بھی لڑکی کی کامیابی میں ہرگز رکاوٹ نہیں بن سکتا بلکہ حجاب دوسروں کی نظروں میں آپ کی قدر و منزلت میں اضافہ کردیتا ہے ۔ میں نے اپنے تعلیمی سفر کے دوران خاص طور پر ایم ڈی میں مکمل حجاب کا اہتمام کرتی رہی ۔ مجھے کسی قسم کے تعصب یا جانبداری کا سامنا نہیں کرنا پڑا ۔ ان خیالات کا اظہار شہر کی ابھرتی ای این ٹی ڈاکٹر ، ڈاکٹر انجم موسیٰ نے سیاست سے بات چیت کرتے ہوئے کیا ۔ ایم ایس ( ای این ٹی) میں دو گولڈ میڈلس اور دو اعلیٰ ایوارڈس حاصل کرنے والی ڈاکٹر انجم موسیٰ اپنے شوہر اقبال الرحمن ( سافٹ ویر انجینئر ) اور خسر احمد محی الدین شمیم نظام آبادی کے ہمراہ ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں اور نیوز ایڈیٹر سیاست جناب عامر علی خاں سے ملاقات کے لیے دفتر سیاست پہنچی تھیں ۔ ایک سوال کے جواب میں ڈاکٹر انجم موسیٰ نے بتایا کہ نمازوں کی پابندی روزانہ تلاوت قرآن پاک کا خود کو عادی بنالینا چاہئے جس کے باعث دنیا کی کوئی طاقت آپ کو کامیابی سے نہیں روک سکتی ۔ ڈاکٹر انجم موسیٰ کے خیال میں والدین کی فرمانبردار اولاد کبھی ناکام نہیں رہتی ۔ اللہ تعالیٰ ایسی اولاد کو عزت سے نوازتے ہیں جب کہ ساس اور خسر کا اپنے والد کی طرح احترام کرنے والی بہوؤں کو ان کے سسرالی گھروں میں بہو کی طرح نہیں بلکہ بیٹی کی طرح رکھا جاتا ہے اور اس معاملہ میں وہ خود کو خوش نصیب تصور کرتی ہیں اس کے لیے اللہ کا شکر بجالاتی ہیں ۔ گنٹور باپٹلہ پبلک اسکول سے ایس ایس سی ، وکاس جونیر کالج گنٹور سے انٹر میڈیٹ ، دکن کالج آف میڈیکل سائنس سے ایم بی بی ایس اور گاندھی میڈیکل کالج سے ایم ایس ( ای این ٹی ) میں امتیازی نشانات سے کامیابی حاصل کرنے والی ڈاکٹر انجم موسیٰ کے مطابق ان کی کامیابی میں سب سے بڑا کردار ان کے مرحوم والد محمد موسیٰ اور ماں طاہرہ موسیٰ کا رہا جنہوں نے اپنی 6 بیٹیوں کو اعلیٰ تعلیم دلانے میں کوئی کسر باقی نہیں رکھی چنانچہ ان کی بڑی بہن امریکہ میں ڈاکٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہی ہیں ۔ دوسری بہن نے ایم بی اے کیا ۔ تیسری نے بی کام ان کا چوتھا نمبر ہے ۔ پانچویں اور چھٹویں بہنیں انفارمیشن ٹکنالوجی کے شعبہ سے وابستہ ہیں ۔ دو بچوں ( ایک لڑکا اور ایک لڑکی ) کی ماں ڈاکٹر انجم موسیٰ سردست ٹولی چوکی میں واقع ہیلتھ ان کلنک میں ماہر امراض حلق ناک کان کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہی ہیں ۔ اپنے شوہر اقبال الرحمن کی زبردست ستائش کرتے ہوئے ڈاکٹر انجم نے بتایا کہ پیشہ طب میں آگے بڑھانے میں اقبال نے ہمیشہ ان کی حوصلہ افزائی کی جب کہ خسر احمد محی الدین شمیم نظام آبادی اور خوشدامن کوثر نسرین نے بھی ہمیشہ انہیں اپنی بہو نہیں بلکہ بیٹی سمجھا ہے ۔ آپ کو بتادیں کہ ڈاکٹر انجم رائل کالج آف سرجنس لندن کی رکن بھی ہیں ۔ انہوں نے گاندھی میڈیکل کالج سے 2012 میں ایم ایس ( ای این ٹی ) کی تکمیل کی ۔ جس پر ساری ریاست میں پہلی ہی کوشش میں ایم ایس کامیاب ہونے والی بہترین اسٹوڈنٹ قرار دے کر گولڈ میڈل عطا کیا گیا ۔ اسی طرح ساری یونیورسٹی میں ایم ایس ( ای این ٹی ) میں سب سے زیادہ نمبرات حاصل کرنے پر بہترین طالبہ کا گولڈ میڈل بھی دیا گیا۔ ایم ایس میں ہی شاندار مظاہرہ پر ڈاکٹر انجم موسیٰ کو 6 واں AOC پرائز انڈومنٹ آف AOI دیا گیا ۔ انہیں ساری ریاست کی بہترین طالبہ ہونے کی بناء ڈاکٹر اے ایف ڈشپمنڈ پرائز سے بھی نوازا گیا ۔ مسلم لڑکیوں کے نام اپنے پیام میں ڈاکٹر انجم نے کہا کہ زندگی میں کامیابی کے لیے نمازوں کی پابندی سب سے ضروری ہے ۔ اس کے علاوہ والدین کی فرمانبرداری محنت و جستجو بھی کامیابی کی کلیدیں ہیں ۔ ڈاکٹر انجم موسیٰ ان کے شوہر اقبال الرحمن انجینئر اور خسر احمد محی الدین شمیم نظام آبادی نے سیاست اور ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں کی ملی و قومی خدمات کو مثالی قرار دیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT