Saturday , July 22 2017
Home / شہر کی خبریں / زکوٰۃ رکن اسلام، فریضہ دین اور اللہ تعالیٰ کی مالی عبادت ہے

زکوٰۃ رکن اسلام، فریضہ دین اور اللہ تعالیٰ کی مالی عبادت ہے

’’فریضہ زکوٰۃ‘‘ پر سالانہ مذاکرہ۔ ڈاکٹرسید محمد حمید الدین شرفی ،پروفیسر سید محمد حسیب الدین حمیدی اور دیگر کے خطابات
حیدرآباد۔ 11؍ جون (پریس نوٹ) زکوٰۃ رکن اسلام، فریضہ دین اور اللہ تعالیٰ کی مالی عبادت ہے قرآن مجید میں نماز کے بعد اسی کا ذکر اور درجہ ہے اسلام کی بنیاد پانچ باتوں پر ہے جن میں سے ایک اہم ستون زکوٰۃ ہے۔ زکوٰۃ دینے والوں کے لئے نوید ہے اور زکوٰۃ نہ دینے والوں کے لئے سخت وعید ہے۔ چاندی، سونا، مال تجارت اور سائمہ جانوروں پر زکوٰۃ ہے صدقہ فطر بھی زکوٰۃ کے اقسام میں شامل ہے ان سب کی زکوٰۃ ، شرائط اور ضابطے، نصاب اور مدت کی صراحت کے ساتھ مقرر ہیں و نیز مستحقین زکوٰۃ کا بھی تعین کر دیا گیا ہے۔ نیت ادائی فرض زکوٰۃ ضروری ہے اسی طرح ایک قمری سال پورا ہوتے ہی زکوٰۃ ادا کر دینا چاہئیے تاخیر و تساہل نہ کیا جاے ۔ مستحقین زکوٰۃ کے متعلق جو ارشاد فرمایا گیا ہے وہ آٹھ ہیں اگر کسی میں ایک وصف بھی پایا جاے تو اسے زکوٰۃ دی جاسکتی ہے تاہم سادات کرام ، ہاشمی و مطّلبی کو زکوٰۃ نہیں دی جاے گی۔ زکوٰۃ کے معنیٰ پاک کرنے اور نمو کے ہیں اس فریضہ کی ادائی کے سبب باقی مال پاک ہو جاتا ہے اور اس میں برکت و ترقی ہوتی ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے ان بندوں پر جو مالک نصاب ہیں یعنی حاجت اصلیہ، ضروریات زندگی کے ساز و سامان سے زیادہ ایک خاص مقدار مال کے مالک ہیں ان پر زکوٰۃ کو فرض فرمایا ہے اللہ کی راہ میں خرچ کرنے والوں کے لئے بہترین اجر و بدل کی نوید بھی دی گئی ہے۔ ابتداء میں مسلمانوں کو اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کی ترغیبات انفاق اور صدقات نافلہ کی ضرورت و اہمیت کی وضاحت کے ساتھ ملتی ہیں۔ جو مال رضاے حق تعالیٰ کے حصول کی خاطر اللہ کے ضرورت مند بندوں، فقراء و مساکین پر صرف کیا جاتا ہے یقینا اس کا نہایت اچھا اور کئی گنا زائد معاوضہ خرچ کرنے والے کو عطا کیا جاتا ہے۔ صدقہ دراصل گناہوں کے وبال، نحوست اور پیش آئندہ مصائب اور بلائو ں کو ٹالنے کا وسیلہ ہے جب کہ زکوٰۃ ملت کے مالداروں سے لے کر ملت کے غرباء ، ضرورت مند اور مستحق میں تقسیم ہوتی ہے۔ اس کے ذریعہ بندوں سے بندوں کو فائدہ پہنچتا ہے لیکن خالق کونین اپنے کرم سے زکوٰۃ دینے والے کو مزید مال و دولت سے نوازتا ہے۔علماء کرام اور دانشور حضرات نے آج صبح ۹ بجے ’’ایوان تاج العرفاء حمیدآباد‘‘ واقع شرفی چمن،سبزی منڈی اور ۳۰:۱۱ بجے دن جامع مسجد محبوب شاہی ، مالاکنٹہ روڈ،روبرو معظم جاہی مارکٹ میں اسلامک ہسٹری ریسرچ کونسل انڈیا ( آئی ہرک) کے زیر اہتمام ’’۱۲۵۵‘‘ ویں تاریخ اسلام اجلاس کے موقع پر منعقدہ موضوعاتی مذاکرہ ’’فریضہ زکوٰۃ‘‘میں حصہ لیتے ہوے ان خیالات کا مجموعی طور پر اظہار کیا۔ مذاکرہ کی نگرانی ڈاکٹر سید محمد حمید الدین شرفی ڈائریکٹر آئی ہرک نے کی۔قرآن حکیم کی آیات شریفہ کی تلاوت سے مذاکرہ کا آغاز ہوا۔ نعت شہنشاہ کونین ؐپیش کی گئی اہل علم اور باذوق روزہ دار سامعین کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ پروفیسر سید محمد حسیب الدین حمیدی، مفتی سید محمد سیف الدین حاکم حمیدی اور سید محمد علی موسیٰ رضا حمیدی نے بھی مخاطب کیا۔

 

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT