Sunday , August 20 2017
Home / شہر کی خبریں / زیر التواء آبپاشی پراجکٹس کے کاموں کا جائزہ

زیر التواء آبپاشی پراجکٹس کے کاموں کا جائزہ

گوداوری اور دریائے کرشنا پر نئی تعمیر کے لئے جلد ٹنڈرس طلب کرنے کی ہدایت
حیدرآباد /17 جنوری (سیاست نیوز) ریاست تلنگانہ کے زیر تعمیر و زیر التواء آبپاشی پراجکٹس کے موقف کا جائزہ لینے کے لئے چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ کی زیر صدارت کیمپ آفس پر اہم اجلاس کا انعقاد عمل میں آیا۔ بالخصوص دومو گوڑم پراجکٹ کے تعلق سے خصوصی طورپر جائزہ لیا گیا۔ اس اجلاس میں وزیر عمارات و شوارع ٹی ناگیشور راؤ اور محکمہ آبپاشی کے اعلی عہداروں نے شرکت کی۔ اس موقع پر چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ دریائے گوداوری کے پانی میں ریاست تلنگانہ کو حاصل ہونے والے حصہ سے بھرپور استفادہ کے لئے پراجکٹس کے ازسرنو ڈیزائننگ کے تعلق سے ریاست تلنگانہ کے عوام کو مکمل تفصیلات سے واقف کروانے کی شدید ضرورت ہے۔ انھوں نے اعلی عہدہ داران محکمہ آبپاشی کو اس سلسلے میں مکمل و جامع رپورٹ مرتب کرنے کی ہدایت دی۔ انھوں نے کہا کہ کہ دریائے گوداوری اور دریائے کرشنا پر نئے تعمیر کئے جانے والے آبپاشی پراجکٹس کے لئے فی الفور ٹنڈرس طلب کئے جانے چاہئے اور اب تک جاری آبپاشی پراجکٹس کے تعمیراتی کاموں کو عاجلانہ طورپر مکمل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ انھوں نے کہا کہ تمام آبپاشی پراجکٹس سے متعلق تعمیری کاموں کی ایک ساتھ انجام دہی کو یقینی بنائیں۔ چیف منسٹر تلنگانہ نے کہا کہ متحدہ ریاست آندھرا پردیش حکمرانی میں تلنگانہ علاقہ کے مفادات پر کبھی کوئی توجہ نہیں دی گئی، بلکہ علاقہ تلنگانہ کو بالکلیہ طورپر نظرانداز کردیا گیا، بلکہ علاقہ تلنگانہ کے لئے تعمیر کئے جانے والے پراجکٹ کو مکمل نہ کرنے کے مقصد سے ہی پرانہیتا چیوڑلہ پراجکٹ کو تمیڈی ہٹی کے مقام پر ڈیزائن کیا گیا، تاکہ یہ پراجکٹ کسی نہ کسی طرح مکمل نہ ہوسکے۔ انھوں نے مزید کہا کہ دریائے گوداوری جیسی اہم ندی پر پراجکٹ تعمیر کرنے کی بجائے ایک ذیلی ندی پرانہیتا پر پراجکٹ تعمیر کرنے کا ارادہ انتہائی تعجب خیز ہے۔

TOPPOPULARRECENT