Wednesday , September 20 2017
Home / Top Stories / سابق وزیراعظم نیپال سشیل کوئرالا کا انتقال ، آج آخری رسومات

سابق وزیراعظم نیپال سشیل کوئرالا کا انتقال ، آج آخری رسومات

کابینہ کا ہنگامی اجلاس، تین دن پرچم نصف بلندی پر لہرانے اور پورے سرکاری اعزازات کے ساتھ آخری رسومات کا فیصلہ
کٹھمنڈو ۔ 9 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) نیپال کے سابق وزیراعظم سشیل کوئرالا جو اعتدال پسند قائد تھے اور جنہوں نے ہندوستان کے ساتھ دوستانہ تعلقات کی تائید کی تھی اور گذشتہ سال نئے دستور کو متعارف کرانے میں اہم کردار ادا کرچکے تھے، آج علی الصبح انتقال کرگئے۔ 79 سالہ قائد جو فبروری 2014ء سے اکٹوبر 2015ء تک نیپال کے وزیراعظم تھے، اپنی قیامگاہ واقع مہاراج گنج جو کٹھمنڈو کے مضافات میں واقع ہے، 12:50 بجے شب انتقال کرگئے۔ انہیں نمونیا ہوگیا تھا۔ نیپالی کانگریس کے جنرل سکریٹری پرکاش مان سنگھ نے کہا کہ انہوں نے ہمیشہ ہندوستانی سیاسی نظام سے دوستانہ تعلقات برقرار رکھے وہ کہنہ قلب کے مریض تھے۔ ان کے ڈاکٹر کبیر ناتھ یوگی نے کہا کہ کوئرالا قبل ازیں پھیپھڑوں کے کینسر کا امریکہ میں کامیاب علاج کرواچکے تھے۔

انہیں نمونیا ہوگیا تھا اور انفیکشن کی وجہ سے دمہ کا دورہ پڑا تھا کیونکہ موسم میں تبدیلی آرہی تھی۔ انہوں نے کل شام حزب معمول غذا استعمال کی تھی۔ ان کی صحت اچانک ابتر ہوگئی اور 12:50 بجے شب انہوں نے آخری سانس لی۔ کوئرالا نے ہندوستان کے ساتھ بہتر تعلقات رکھے لیکن ان پر اپنا موقف تبدیل کرنے کیلئے ان کی میعاد کے آخری دنوں میں دباؤ پڑ رہا تھا۔ مادھیسیوں کی ناکہ بندی کی وجہ سے معیشت لڑکھڑانے لگی تھی۔ مادھیسی نئے دستور کے خلاف تھے اور انہوں نے ملک گیر سطح پر پرتشدد احتجاج کیا تھا۔ جھڑپوں میں مادھیسی احتجاجیوں اور پولیس کے ارکان 50 سے زیادہ کی تعداد میں ہلاک ہوگئے تھے۔ تقریباً 5 ماہ طویل ناکہ بندی کے ساتھ ہندوستان میں کل سے ناکہ بندی برخاست کرنے پر مجبور کردیا۔ کوئرالا کا ہندوستان کے بارے میں متوازن نظریہ تھا وہ ان 7 قائدین میں شامل تھے

جنہوں نے وزیراعظم نریندر مودی کی تقریب حلف برداری میں مئی 2014ء میں شرکت کی تھی۔ ان کے چچازاد بھائی گرجاپرساد کوئرالا بھی ان سے پہلے نیپال کے وزیراعظم تھے۔ ان کی نعش دشرتھ اسٹوڈیو میں پارٹی کارکنوں اور دیگر افراد کے خراج عقیدت کیلئے رکھی گئی ہے۔ وزیراعظم کے پی شرما اولی کی زیرصدارت کابینہ کے ایک ہنگامی اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ کل کوئرالا کی آخری رسومات پورے سرکاری اعزاز کے ساتھ ادا کی جائیں گی اور سرکاری عمارتوں پر 3 دن تک پرچم نصف بلندی پر لہرایا جائے گا۔ کوئرالا 1954ء میں برسراقتدار آئے تھے۔ قبل ازیں وہ 16 سال تک ہندوستان میں جلاوطنی کی زندگی گذار چکے تھے۔ 1973ء میں طیارہ کے اغوا میں ملوث ہونے کے الزام میں انہوں نے ہندوستانی جیل میں 3 سال تک سزائے قید بھی بھگتی تھی۔

TOPPOPULARRECENT