Monday , September 25 2017
Home / ہندوستان / سارک کو موثر اور فعال بنانے کی ضرورت

سارک کو موثر اور فعال بنانے کی ضرورت

نریندر مودی اور نواز شریف اہم رول ادا کرسکتے ہیں : صدر مالدیپ
نئی دہلی ۔ 11 اپریل ۔ (سیاست ڈاٹ کام)مالدیپ کے ساتھ دفاعی تعاون کو ایک نئی جہت دیتے ہوئے وزیراعظم نریندر مودی نے اس جزیرہ نما ملک کی ممکنہ مدد بشمول بندرگاہوں کی ترقی ، مسلح فورسیس کو ٹریننگ اور آلات کی سربراہی کے علاوہ بحری نگرانی کا وعدہ کیا۔ وزیراعظم نریندر مودی اور دورہ کنندہ مالدیپ صدر عبداﷲ یامین عبدالقیوم کے مابین وفود کی سطح پر بات چیت کے بعد دونوں ممالک نے اہم شعبوں کیلئے ایکشن پلان سے اتفاق کیا۔ وزیراعظم نے کہاکہ ہندوستان اپنے اس پڑوسی ملک کو سکیورٹی فراہم کنندہ بننے کیلئے تیار ہے ۔ مودی نے کہاکہ مالدیپ میں استحکام ہندوستان کے مفاد میں ہے اور اس ملک کو درپیش چیلنجس ہمارے لئے باعث تشویش ہیں۔بحر ہند میں ہندوستان کے ایک سکیورٹی فراہم کنندہ کی حیثیت سے رول کو نمایاں کرتے ہوئے مودی نے کہاکہ ہم اس علاقہ میں اہم مفادات کے تحفظ کیلئے تیار ہیں۔ مامون عبدالقیوم نے کہاکہ ان کا ملک خارجہ پالیسی میں ہندوستان کو پہلے مقام پر رکھتا ہے اور اُنھوں نے ہندوستان کو مالدیپ کا اہم ترین دوست قرار دیا ۔ بات چیت کے بعد دفاعی تعاون کیلئے ایکشن پلان پر دستخط کئے گئے ۔ اس کے علاوہ دونوں ممالک نے ٹیکسیس کے بارے میں اطلاعات فراہم کرنے اور جو لوگ دوہرے ٹیکس سے گریز کررہے ہیں اُن کے بارے میں بھی معلومات کے تبادلہ سے متعلق دو معاہدوں پر دستخط کئے ۔ مالدیپ نے سارک کو مؤثر بنانے کی ضرورت پر زور دیا اور اس یقین کا اظہار کیا کہ وزیراعظم نریندر مودی اور ان کے پاکستانی ہم منصب نواز شریف اس جنوبی ایشیائی گروپ کو زیادہ سے زیادہ مستحکم بنانے کے معاملے میں نمایاں پیشرفت کریں گے ۔ عبدالقیوم نے سارک کو فعال ادارہ بنانے کی ضرورت پر زور دیا جس سے علاقہ میں کروڑہا عوام کی زندگی کو بہتر بنانے میں مدد مل سکتی ہے ۔ اس کے علاوہ جغرافیائی سیاست میں بھی یہ گروپ ایک اہم رول ادا کرسکتا ہے ۔ انھوں نے کہاکہ اس امر میں کوئی شبہ نہیں کہ وزیراعظم نریندر مود ی اور وزیراعظم نواز شریف کی قیادت میں سارک ایک بہترین پلیٹ فارم ثابت ہوسکتا ہے ۔ وہ آج نریندر مودی سے ملاقات کے بعد مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے ۔ اس کے علاوہ انھوں نے صدرجمہوریہ پرنب مکرجی سے بھی ملاقات کی ۔ اس موقع پر پرنب مکرجی نے دورہ کنندہ صدر کا استقبال کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان اپنے پڑوسی ممالک کو نمایاں اہمیت دیتا ہے اور اس میں بھی مالدیپ کو خصوصی مقام حاصل ہے ۔ ہم مالدیپ کی ’’ہندوستان پہلے‘‘ خارجہ پالیسی کی قدر کرتے ہیں۔ پرنب مکرجی نے کہاکہ بحیثیت دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہم مالدیپ میں جمہوری اداروں کے استحکام کی ممکنہ تائید کریں گے ۔

TOPPOPULARRECENT