Thursday , October 19 2017
Home / شہر کی خبریں / سال گذشتہ کی فیس کی اجرائی کیلئے چیف منسٹر کے دفتر سے نمائندگی

سال گذشتہ کی فیس کی اجرائی کیلئے چیف منسٹر کے دفتر سے نمائندگی

اقلیتی طلبا کیلئے اوورسیز اسکالرشپ اسکیم
سال گذشتہ کی فیس کی اجرائی کیلئے چیف منسٹر کے دفتر سے نمائندگی
سکریٹری اقلیتی بہبود کا اقدام ۔ سال رواں بھی عمل آوری کیلئے کوشش کا آغاز

حیدرآباد۔/25اکٹوبر، ( سیاست نیوز) اقلیتی طلبہ کیلئے اوورسیز اسکالر شپ اسکیم پر جاریہ سال عمل آوری اور گذشتہ سال کی تعلیمی فیس کی اجرائی کو یقینی بنانے کیلئے سکریٹری اقلیتی بہبود نے چیف منسٹر کے دفتر سے نمائندگی کی ہے۔ چونکہ محکمہ اقلیتی بہبود کا قلمدان چیف منسٹر کے پاس ہے لہذا سکریٹری سید عمر جلیل نے چیف منسٹر کے دفتر سے خواہش کی کہ اسکیم کے آغاز کیلئے شرائط میں تبدیلی کے ساتھ جو فائیل روانہ کی گئی ہے اس کی جلد منظوری حاصل کی جائے۔ اس کے علاوہ محکمہ فینانس کو بجٹ کی اجرائی کی ہدایت دی جائے تاکہ گذشتہ سال منتخب طلبہ کی تعلیمی امداد جاری کی جاسکے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے گزشتہ سال اسکیم کے تحت منتخب طلبہ کو یقین دلایاکہ بہت جلد ان کی پہلی قسط جاری کردی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ جو بھی طالب علم اسکیم کے تحت منتخب قرار پائے ہیں انہیں بہر صورت تعلیمی امداد اداکی جائے گی تاہم اس میں کسی قدر ممکن ہے۔ انہوں نے طلبہ اور اولیائے طلبہ سے اپیل کی کہ وہ پریشان نہ ہوں اور درمیانی افراد سے رجوع نہ ہوں۔ سکریٹری نے بتایا کہ گذشتہ سال کی اسکیم میں 236 طلبہ کا انتخاب کیا گیا تھا اور ان میں کی اکثریت کو پہلی قسط کی رقم 5 لاکھ روپئے ادا نہیں کی گئی کیونکہ محکمہ فینانس نے ابھی تک درکار بجٹ جاری نہیں کیا ہے۔ اس کے علاوہ پہلے بیاچ کے بعض طلبہ کو دوسری قسط کی رقم کی اجرائی ابھی باقی ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس سلسلہ میں چیف منسٹر کے دفتر سے مسلسل ربط میں ہیں۔ اسی دوران ایس سی، ایس ٹی اور اقلیتی طلبہ کیلئے اوورسیز اسکالر شپ پر عمل آوری کا جائزہ لینے کیلئے چہارشنبہ کو اعلیٰ سطحی اجلاس طلب کیا گیا ہے۔ 2016-17 میں اس اسکیم کے تحت طلبہ کو 20 لاکھ روپئے کی ادائیگی کا منصوبہ ہے لہذا حکومت نے بعض شرائط میں اضافہ اور تبدیلی کی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اسکیم میں موجودہ 5 ممالک کے علاوہ مزید تقریباً 8 تا 10 ممالک کی شمولیت کی تجویز چیف منسٹر کو پیش کی گئی ہے۔ جن نئے ممالک کے اضافہ کا امکان ہے ان میں سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، قطر، مصر، جرمنی، سوئزر لینڈ اور قزاقستان شامل ہیں۔ موجودہ اسکیم کے تحت امریکہ، برطانیہ، سنگاپور، کنیڈا اور آسٹریلیا شامل تھے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود کے مطابق 20 لاکھ روپئے تعلیمی امداد کے فیصلہ کے بعد حکومت نے شرائط میں بھی تبدیلی کا فیصلہ کیا ہے۔ اس اسکیم کیلئے اہل قرار پانے والے طلبہ کو درکار اہلیتی امتحانات میں  مقررہ فیصد تک نشانات حاصل کرنے ہوں گے۔ سابق میں اس طرح نشانات کی کوئی قید نہیں تھی تاہم اس مرتبہ  ڈگری اور اہلیتی امتحانات میں بہتر نشانات حاصل کرنے والے طلبہ کو ہی اسکیم کیلئے منتخب قرار دیا جائے گا۔ نشانات کے فیصد کا تعین چیف منسٹر کی منظوری سے کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ فائیل کی منظوری کے ساتھ ہی جی او کی اجرائی عمل میں آئے گی۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ اندرون ایک ہفتہ فائیل کو منظوری حاصل ہوجائے گی اور دیوالی سے قبل درخواستوں کی طلبی کیلئے اعلامیہ جاری کردیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT