Monday , August 21 2017
Home / ہندوستان / سبھاش چندر بوس کی 64 خفیہ فائلوں کا افشاء

سبھاش چندر بوس کی 64 خفیہ فائلوں کا افشاء

مزید 130فائیلس مرکزی حکومت کے صیغہ راز سے باہر لانے ممتا بنرجی کا مطالبہ
کولکاتا۔/18ستمبر، ( سیاست ڈاٹ کام )حکومت مغربی بنگال نے نیتا جی سبھاش چندر بوس کے پُراسرار لاپتہ ہوجانے سے متعلق 64 فائیلس کوآج صیغہ راز سے منظر عام پر لایا ہے توقع ہے کہ گزشتہ 7عشروں سے اس معمہ پر جاری تجسس ختم ہوجائیگا جبکہ چیف منسٹر ممتابنرجی نے مرکزی حکومت سے گذارش کی ہے کہ باقیماندہ سربستہ رازوں کا وہ بھی افشاء کر نے عوام کے دیرینہ مطالبہ کی تکمیل کرتے ہوئے چیف منسٹر نے کہا کہ ملک کے ایک قوم پرست لیڈر کے بارے میں خفیہ رازوں کو منظر عام پر لانے کا تاریخی اقدام کیا گیا ہے جس کے باعث عوام کو یہ حقائق معلوم ہوجائیں گے کہ نیتا جی کا حشر کیا ہوا تھا۔ سالہا سال سے پولیس اور سرکاری لاکرس میں پوشیدہ 64فائیلس ( امثلہ جات ) جو کہ 12,744 صفحات پر مشتمل ہیں سبھاش چندر بوس کے افراد خاندان کی موجودگی میں آج جاری کردیئے گئے۔ جبکہ بوس خاندان کا یہ دیرینہ مطالبہ تھا کہ آزاد ہندفوج کے لیڈر کے بارے میں اطلاعات کو طشت از بام کردیا جائے۔ تاہم مزید 130 فائیلس مرکزی حکومت کے پاس محفوظ ہیں ۔ کولکتہ پولیس میوزیم میں آویزاں مذکورہ فائیلس کا مشاہدہ پیر کے دن سے عوام کرسکتے ہیں۔ سٹی پولیس کمشنر سرجیت پروکائستھ نے یہ اطلاع دی اور بتایا کہ 64فائیلس کولکتہ پولیس کے پاس اور دیگر  9 فائیلس ریاستی پولیس کے پاس محفوظ ہیں۔ اس موقع پر پولیس کمشنرنے ایک DVD پر مشتمل فائیلس کو نیتا جی کے خاندان کے حوالے کردیا۔چیف منسٹر ممتا بنرجی نے پولیس میوزیم کا دورہ کرنے کے بعد کہا کہ آج کا دن تاریخی دن ہے ، ہماری حکومت نے نیتا جی سے متعلق فائیلس کا افشاء کردیا اور اب عوام ہندوستان کے بہادر فرزند کے بارے میں حقیقت سے واقف ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے شروعات کی ہے اور عوام پر حقائق آشکاہوجائیں گے اور مرکزی حکومت کی یہ ذمہ داری ہے کہ نیتاجی کے باقیماندہ فائیلس کو صیغہ راز سے باہر لائیں تاکہ ہم سب پر ایک خوشگوار احساس ہوسکے کیونکہ حقائق کو دیر تک پوشیدہ نہیں رکھا جاسکتا۔چیف منسٹر نے کہا کہ گزشتہ 70سال کے دوران یہ معمہ حل نہیں ہوسکا اور ہم یہ جانتے تھے کہ نیتا جی کا حشر کیا ہوا تھا جوکہ بدبختانہ امر ہے۔ نیتاجی کے ایک رشتہ دار چندرا بوس نے 64فائیلس کے افشاء کا خیرمقدم کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک صحیح سمت میں درست قدم ہے اور مرکزی حکومت کا یہ فریضہ ہوگا کہ باقیماندہ 130 فائیلس کو منظر عام پر لائے۔ واضح رہے کہ وزیر اعظم کے دفتر(PMO) نے ماہ اگسٹ میں سنٹرل انفارمیشن کمیشن کو مطلع کیا تھا کہ بوس سے متعلق فائیلس کا افشاء نہیں کیا جاسکتا۔ جس کے باعث بیرونی ممالک کے ساتھ تعلقات متاثر ہوسکتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT