Friday , October 20 2017
Home / اضلاع کی خبریں / سب انسپکٹر پولیس کی گولی مار کر خودکشی

سب انسپکٹر پولیس کی گولی مار کر خودکشی

افراد خاندان کا احتجاج، عہدیدارو ںپر ہراسانی کا الزام

سنگاریڈی۔ 17 ؍اگسٹ (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) ضلع میدک میں آج صبح کی ابتدائی ساعتوں میں ایک سب انسپکٹر پولیس نے خود کو گولی مارکر خو د کشی کرلی تفصیلات کے بموجب ضلع میدک کے کونڈا پاک منڈل کے کوکنور پلی پولیس اسٹیشن میں خدمات انجا م دینے والے 45 سالہ سب انسپکٹر پولیس راما کر شنا ریڈی نے آج اپنے ہی کو ارٹر میں سرویس ریوالور سے کنپٹی میں گولی مارکر خود کشی کرلی فائرنگ کی آواز سن کر پولیس اسٹیشن عملہ دوڑ کر ان کے مکا ن پہنچا تاہم تب تک وہ فوت ہو چکے تھے بعد ازاں انہیں سرکاری ہا سپٹل گجویل منتقل کیا گیا راما کر شنا ریڈی کا تعلق ضلع نلگنڈہ کے منڈل مادھم پلی کے مو ضع بکا منتارم گڈم سے ہے سال 2006 میں پولیس سرویس سے وابستہ ہوئے اس سے قبل وہ فوج میں خدمات انجام دے چکے ہیں ۔ متوفی سب انسپکٹر کے پسماند گان میں اہلیہ اور دو بچے ہیں۔خود کشی کے وقت وہ تنہا تھے انہوں نے دو دن قبل ہی اپنی بیوی اور بچوں کو میکے بھیج دیا تھا اور خود کشی کرنے سے قبل انہوں نے کو کنور پلی پولیس اسٹیشن کے دو پولیس کا نسٹبلوں سے کہا تھا کہ میں جارہا ہوں احتیا ط سے رہنا جس پر ان کانسٹبلس نے پڑوس میں واقع گجویل پولیس اسٹیشن سب انسپکٹر کو اس کی اطلاع دی تھی تاہم گجویل سے سب انسپکٹر کو کنور پلی پہنچنے تک راما کرشنا ریڈی انتہائی اقدام کر چکے تھے۔ متوفی سب انسپکٹر راما کرشنا ریڈی کے افراد خاندان رشتہ دار اور دوست احباب سرکاری دواخانہ گجویل پہنچ کر احتجاج کیا ۔متوفی سب انسپکٹر کی اہلیہ اور برادر نسبتی نے میڈیا نمائندوں سے گفتگو کر تے ہوئے راما کرشنا ریڈی کی خود کشی کیلئے مبینہ طور پر پولیس عہدیداروں کی ہراسانی کو مورود الزام ٹہرایا اور کہا کہ ڈی ایس پی ‘ دو سرکل انسپکٹر دو ہیڈ کانسٹبلس اور ایک کانسٹبل انہیں مسلسل ہراساں کر رہے تھے اور ان کے خلاف جھوٹی شکا یتیں اعلی عہدیداروں کو روانہ کر تے ہوئے انہیں پریشان کر رہے تھے علاوہ ازیں انہوں نے ان پولیس عہدید اروں پر کرپشن کے بھی الزامات عائد کئے پولیس عہدید اروں کی ہراسانی کے باعث راما کرشنا ریڈی ذہنی دبائو کا شکار ہو کر خود کشی جیسے انتہائی اقدام کرنے پر مجبور ہو گئے بتا یا جا تا ہیکہ راما کر شنا ریڈی نے خود کشی سے پہلے ایک خو د کشی تحریر چھوڑی ہے جس میں ان سے ہونے والی نا انصافیوں اور عہدید اروں کی ہراسانی کا تذکرہ کیا گیا۔ متو فی سب انسپکٹر کی اہلیہ نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ خودکشی نوٹ میں تحریر کر دہ پولیس عہدیدار اور عملہ کو فوری معطل کر تے ہوئے جو ڈیشیل انکو ائری کروائی جا ئے۔

TOPPOPULARRECENT