Wednesday , August 23 2017
Home / کھیل کی خبریں / ’سخت جان‘ عمر گل ٹیم میں واپسی کیلئے پُرامید

’سخت جان‘ عمر گل ٹیم میں واپسی کیلئے پُرامید

کراچی ، 26 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام)جہاں ایک طرف پاکستان کرکٹ اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث محمد عامر کی نیشنل ٹیم میں ممکنہ واپسی کے حوالے سے بحث مباحثے میں مصروف ہے وہیں متعدد حلقے اس بات سے بے خبر ہیں کہ ایک عرصے سے نظرانداز ایک اور فاسٹ بولر عمر گل پاکستانی ٹیم میں واپسی کیلئے فٹنس اور فارم کے حصول کیلئے جم میں سخت محنت کر رہے ہیں۔47 ٹسٹ، 126 ایک روزہ اور 58 ٹی ٹوئنٹی میچوں میں پاکستان کی نمائندگی کرنے والے عمر گل کو 2013 میں ٹخنے کی سرجری کرانے کے بعد فٹنس کے حصول میں شدید دشواریوں کا سامنا ہے۔ یارکر کے ماہر قرار دیے جانے والے 31 سالہ فاسٹ بولر نے کہا کہ ان کی نظریں انٹرنیشنل کرکٹ میں واپسی پر مرکوز ہیں جہاں انہوں نے آخری مرتبہ پاکستانی ٹیم کی نمائندگی رواں سال اپریل میں کی تھی۔ 2003 ء میں عظیم فاسٹ بولر وسیم اکرم اور وقار یونس کی جانب سے کھیل کو خیرباد کہنے کے بعد عمر گل کو ٹیم میں شامل کیا گیا اور بہت جلد سوئنگ اور سیم پر مہارت حاصل کرنے کی وجہ سے پاکستانی ٹیم مختصر فارمیٹ میں ان پر انحصار کرنے لگی۔ 2010 ء میں اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل میں ملوث سلمان بٹ، محمد عامر اور محمد آصف پر پابندی کے بعد پاکستان کا عمر گل پر انحصار مزید بڑھ گیا۔ ٹی ٹوئنٹی فارمیٹ میں انہوں نے اپنا ردھم حاصل کیا اور انجری کا شکار ہونے سے قبل وہ اپنی شاندار بولنگ کی بدولت کھیل کی اس طرز کے ماہر قرار دیئے جانے لگے۔ ٹی ٹوئنٹی میں وہ دو مرتبہ چھ رنز دے کر پانچ وکٹیں لے چکے ہیں، پہلی مرتبہ انہوں نے 2009 ء کے ورلڈ ٹی ٹوئنٹی میں نیوزی لینڈ کے خلاف اوول کے مقام پر یہ کارنامہ انجام دیا جبکہ 2013 ء میں انہوں نے سنچورین کے مقام پر جنوبی افریقی بیٹنگ لائن کی صفیں اُلٹ دیں۔ جم میں عمر گل کی سخت محنت کو دیکھ کر پاکستانی اوپنر احمد شہزاد بھی ان کی تعریف کئے بنا نہ رہ سکے اور کہا کہ ٹیم میں واپسی کیلئے اُن کی محنت رنگ لائے گی ۔
نو بال کے معاملے میں تھرڈ امپائر کو بااختیار بنانیکا فیصلہ مسترد
لندن، 26 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) آئی سی سی نے نوبال کے معاملے میں تھرڈ امپائرکو بااختیار بنانے کا مطالبہ مسترد کردیا۔ جنرل منیجر جیف ایلرڈائس کا کہنا ہے کہ کوئی بھی فیصلہ صرف فیلڈ آفیشلز ہی کرسکتے ہیں، ٹی وی امپائر کا کام رابطے پر معاونت فراہم کرنا ہے۔ نو بال کے جائزے کیلئے وقت بچانے کی خاطر تیز ٹیکنالوجی حاصل کی جارہی ہے۔ انگلینڈ اور آسٹریلیا کے درمیان پانچواں ایشز ٹسٹ نو بال کے حوالے سے تنازع کا شکار رہا، اسٹیون فن اور مچل مارش دونوں کو ڈلیوری کے وقت پاؤں لائن سے آگے نکلنے کی وجہ سے وکٹ سے محروم ہونا پڑا۔ دونوں مرتبہ فیلڈ امپائرز نے ٹی وی آفیشل کو ری پلیز کی مدد سے جائزہ لینے کو کہا، یوں نوبال پر آئوٹ ہونے والے بیٹسمین کھیل جاری رکھ سکے ۔

TOPPOPULARRECENT