Monday , September 25 2017
Home / Top Stories / سرجن گھوٹالہ:نتیش سے لالو کے 11سوال

سرجن گھوٹالہ:نتیش سے لالو کے 11سوال

پٹنہ، 24 اگست (سیاست ڈاٹ کام) راشٹریہ جنتا دل (آر جے ڈی) کے صدر لالو پرساد یادو نے کروڑوں روپے کے سرجن گھوٹالہ معاملے میں وزیر اعلی نتیش کمار اور وزیر خزانہ سشیل کمار مودی کو براہ راست مجرم ٹھہراتے ہوئے آج کہا کہ سرجن گھوٹالہ کے ماسٹر مائنڈ منظم طریقے سے ثبوت تباہ کرنا چاہتے ہیں۔مسٹر لالو یادو نے ٹوئٹر پر وزیر اعلی سے 11 نکات پر مبنی سوال پوچھتے ہوئے ان سے جواب مانگا ہے ۔ انہوں نے تلخ لہجے میں کہا کہ سرجن گھوٹالہ کرنے کے بعد آج نتیش دوسروں کو اخلاقیات کا سبق پڑھا رہے ہیں۔ آر جے ڈی سپریمو نے وزیر اعلی سے پوچھاکہ “25 جولائی 2013 کو سنجیت کمار نامی ایک چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ اور سماجی کارکن نے وزیر اعلی بہار کو سرجن ویمن بینک چلانے اور کروڑوں کے غبن سے متعلق معلومات دیتے ہوئے ایک تفصیلی خط لکھا تھا، لیکن وزیر اعلی نے اس پر کوئی کارروائی نہیں کی اور نہ صر گھوٹالہ کرنے والوں کو بچایا بلکہ انہیں سرکاری خزانہ لوٹنے کی حوصلہ افزائی کی۔ اسی طرح 9 ستمبر 2013 کو ریزرو بینک نے حکومت بہار کو خط لکھ کر سرجن کمیٹی میں ہونے والے گھوٹالے اور مالی بے ضابطگیوں کی تحقیقات کرنے کو کہا تھا۔ ریزرو بینک نے کوآپریٹو رجسٹرار کو بھی کارروائی کرنے کو کہا تھا، لیکن وزیر اعلی نے اس پر بھی کوئی کارروائی نہیں کی۔ وزیر اعلی نے ریزرو بینک کے خدشے کو بھی درکنار کرتے ہوئے مسلسل گھوٹالے بازوں کا تعاون کیا۔مسٹر لالو یادو نے کہا کہ بھاگلپور کے اس وقت کے ضلع مجسٹریٹ نے سرجن معاملے میں شکایت ملنے پر تحقیقات کا حکم دیا تھا۔ لیکن تحقیقات کی رپورٹ آج تک نہیں آئی ۔ نیتش کو یہ بتانا چاہئے کیوں کہ جانچ کی رپورٹ کو کیوں دبا یا گیا اور ایسا کرکے کس کو فائدہ پہنچایا گیا۔ سال 2013 میں سرجن گھوٹالے میں جانچ کا حکم دینے والے ضلع مجسٹریٹ کا وزیر اعلی نے تبادلہ کیوں کیا؟

TOPPOPULARRECENT