Wednesday , October 18 2017
Home / Top Stories / سرحد پر ترکی کی فوج اور شامی جہادیوں میں فائرنگ کا تبادلہ

سرحد پر ترکی کی فوج اور شامی جہادیوں میں فائرنگ کا تبادلہ

القاعدہ سے ملحق سابق ’حیات تحریرالشام ‘کے جہادیوں کا ترک فوج پر حملہ ‘ سرحدی علاقہ میں ایک دیوار منہدم

بیروت۔8اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ترکی فوج نے آج شام کے جہادیوں پر فائرنگ کی جن کا تعلق القاعدہ کی سابق شامی الحاق رکھنے والی تنظیم سے ہے ۔ فائرنگ کا یہ تبادلہ صوبہ ادلیب کی سرحد پر پیش آیا ۔ ایک نگرانکار اور عینی شاہدین کے بموجب حکومت ترکی نے ایک دن قبل اعلان کیا تھا کہ اس علاقہ میں فوجی کارروائی ناگزیر ہوگئی ہے ۔ اس اعلان کے دوسرے ہی دن فائرنگ کے تبادلہ کا واقعہ پیش آیا ۔ صدر ترکی رجب طیب اردغان نے کل حکومت ترکی حامی باغیوں کی زیر قیادت ایک فوجی مہم ’ حیات تحریرالشام ‘ جہادی اتحاد کے خلاف شمال مغربی شامی صوبہ میں شروع کرنے کا اعلان کیا تھا ۔ آج صبح ایچ ٹی ایس کے جہادیوں نے ترکی فوج پر فائرنگ کا آغاز کردیا جس کے نتیجہ میں سرحد پر قائم ایک دیوار ٹوٹ گئی ۔ترک فوج نے جوابی فائرنگ اور شل باری کی ۔ شامی رصدگاہ برائے انسانی حقوق نے اطلاع دی ہے کہ فائرنگ کا زبردست تبادلہ ہوا ۔ رصدگاہ نے کہا کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ یہ واقعہ اردغان کی کل معلنہ فوجی کارروائی کا آغاز نہیں ہے ۔ ترکی شل باری کا نشانہ متنازعہ سرحدی شہری علاقہ میں قائم ایک کیمپ تھا جس سے اس کیمپ کے قریب ترکی شل گرے جس کے نتیجہ میں اس علاقہ میں فائرنگ کا آغاز ہوگیا اور بعض افراد فرار ہوتے ہوئے دیکھے گئے ۔ ایچ ٹی ایس کے جنگجوؤں نے بھی ترکی مورچہ پر جو باب الحوا سرحدی علاقہ کے قریب ہے فائرنگ کی ۔ ترکی کے خانگی ٹی وی اسٹیشن این ٹی وی نے اطلاع دی ہے کہ سرحدی علاقہ میں فائرنگ کا تبادلہ ہوا ۔ اُس نے فوجی ذرائع کے حوالے سے یہ خبر نشر کی ہے ۔ ویب سائیٹ پر اس نے تحریر کیا کہ ترکی فوج نے اتحادی شامی باغیوں کی تائید میں توپ خانہ سے فائرنگ کی ۔ ایس ٹی ایس کے خلاف یہ مہم کئی ہفتوں کی قیاس آرائی کے بعد منظر عام پر آئی اور اس کا تعلق مبینہ کشیدگی دور کرنے والے زون کے منصوبوں سے ہے ۔ صوبہ ادلیب اور اطراف و اکناف کے علاقوں کو کشیدگی سے پاک خطہ قرار دینے کا منصوبہ ہے ۔ باغی ترکی گروپ شام کی حلیف روسی اور ایرانی فوجوں پر بھی حملے کرتا رہتا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT