Wednesday , September 27 2017
Home / سیاسیات / سرویس ٹیکس میں اضافہ ‘ شرح سود میں کمی پر اپوزیشن فکرمند

سرویس ٹیکس میں اضافہ ‘ شرح سود میں کمی پر اپوزیشن فکرمند

نئی دہلی ۔ 10اگست ( سیاست ڈاٹ کام ) اپوزیشن نے آج سرویس چارجس میں اضافہ اور ایس بی آئی کی جانب سے سیونگس بینک اکاؤنٹ پر شرح سود میں کٹوتی پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے اسے عوام دشمن قرار دیا اور کہا کہ زائد از 34کروڑ کسٹمرس پر اثر پڑے گا ۔ بینکوں سے متعلق ایک بل پر بحث شروع کرتے ہوئے ایس پی مدا ہنومے گوڑا( کانگریس) نے کہا کہ اقل ترین بیالنس میں اضافہ سے تقریباً 34کروڑ لوگ متاثر ہوں گے ۔ یہ بل 5اسوسی ایٹ بینکوں کو رواں سال یکم اپریل سے ایس بی آئی کے ساتھ ان کے انضمام کے پیش نظر ختم کردینے کی تجویز سے متعلق ہے ۔ گوڑا نے ایک مثال پیش کرتے ہوئے کہا کہ اقل ترین بیالنس کو بڑھاکر 1000روپئے کردیا گیا ہے جس سے غریبوں اور کسانوں پر اثر پڑے گا‘ بینکوں نے رقم نکالنے پر بھی چارجس عائد کئے ہیں ۔ یہ تمام فیصلے غریبوں کے خلاف ہیں ۔ انہوں نے جنوبی ریاستوں بالخصوص کرناٹک میں کسانوں کی خودکشی اور ناکافی بارش کا مسئلہ بھی اٹھایا ۔ سوگتا رائے ( ٹی ایم سی ) نے کہا کہ ایس بی آئی نے اپنے بچت کھاتے پر شرح سود گھٹاکر اسی ماہ چار فیصد سے 3.5فیصد کردیئے ہیں ۔ ساتھ ہی اس نے سیونگس بینک اکاؤنٹ میں اقل ترین بیالنس برقرار نہ رکھنے پر پینالٹی بھی بڑھا دی ہے جس سے 31کروڑ افراد کو نقصان ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ 1.40لاکھ کروڑ کے خراب قرض کی سطح بینک شعبہ میں سب سے زیادہ ہے جس سے معلوم ہوتاہ ے کہ ایس بی آئی کا نظم کس قدر ناقص ہے۔رائے نے کہا کہ وہ حکومت سے جاننا چاہیں گے کہ نوٹ بندی کے دوران بینکوں میں کتنی رقم جمع ہوئی ۔ ٹی ایم سی لیڈر نے استفسار کیا کہ کیوں ایس بی آئی چیرمین نے وزیراعظم کے ہمراہ آسٹریلیا میں کانوں کی حصولیابی کی فینانسنگ کیلئے قرض فراہم کرنے سفر کیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT