Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / سرکاری اسکولس بند ، پرائیوٹ اسکولس کی بھرمار

سرکاری اسکولس بند ، پرائیوٹ اسکولس کی بھرمار

ٹیچرس کی 13 ہزار سے زائد جائیدادیں ختم ہوں گی ، ڈیموکرٹیک ٹیچرس فیڈریشن کا احتجاج
حیدرآباد ۔ 11 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : ڈیموکرٹیک ٹیچرس فیڈریشن نے تلنگانہ حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ تعلیمی اصلاحات کے نام پر اسکولس بند کرنے کا اپنا فیصلہ واپس لے ۔ فیڈریشن کے صدر ایم رگھوشنکر ریڈی اور جنرل سکریٹری ایم این کشٹپا نے کہا کہ حکومت کے فیصلہ سے نہ صرف یہ کہ کمزور طبقات کے طلبہ کے مفادات متاثر ہوں گے بلکہ خانگی اسکولس کے مفادات کو فروغ حاصل ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ 3 ہزار 2 سو 44 اپرپرائمری اسکولس کو قریب کے اسکولس میں ضم کرنے کا حکومت کا فیصلہ غیر سائنٹفک ہے ۔ اس طرح کمزور طبقات کے طلبہ کو مجبور کیا جارہا ہے کہ وہ قریب کے سرکاری اسکول تک پیدل تین تا چار کلو میٹر کا فاصلہ طے کریں یا پرائیوٹ اسکول میں داخلہ حاصل کریں یا پھر تعلیم ہی ترک کردیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت پانچ ہزار 3 سو 92 اسکولس بند کرنے کا راستہ ہموار کررہی ہے ۔ یہ حق تعلیم قانون کی خلاف ورزی ہے ۔ حکومت کے فیصلہ سے آئندہ تعلیمی سال سے ٹیچرس کی 13 ہزار 398 جائیدادیں برخاست ہوجائیں گی ۔ انہوں نے الزام لگایا کہ حکومت نئے پرائیوٹ اسکولس قائم کرنے کیلئے اندھادھند اجازت دے رہی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT