Sunday , September 24 2017
Home / کھیل کی خبریں / سریسانت و دیگر پر پابندی ہٹانے سے کرکٹ بورڈ کا انکار

سریسانت و دیگر پر پابندی ہٹانے سے کرکٹ بورڈ کا انکار

نئی دہلی ۔29 جولائی ۔(سیاست ڈاٹ کام)بی سی سی آئی نے آج نہایت واضح انداز میں کہہ دیا کہ وہ سابق ہندوستانی پیس بولر ایس سریسانت اور اسپنر انکیت چوان کیخلاف دہلی کی عدالت کی جانب سے آئی پی ایل 2013 ء کے اسپاٹ فکسنگ کیس میں اُن کے خلاف عائد تمام الزامات حذف کردینے کے تناظر میں جاری پابندی ہٹانے کے بارے میں نظرثانی کا کوئی ارداہ نہیں رکھتا ہے ۔ تمام 36 ملزم اشخاص بشمول سریسانت ، چوان اور اجیت چنڈیلا کو آئی پی ایل ۔ 6 اسپاٹ فکسنگ کیس میں پٹیالہ ہاؤز کورٹ نے گزشتہ ہفتے الزامات منصوبہ سے بری کردیا لیکن ہندوستانی بورڈ نے اُن پر جاری امتناع کی برخاستگی سے انکار کیاہے ۔ کیرالا کرکٹ اسوسی ایشن نے بی سی سی آئی سے اپیل کی تھی کہ سریسانت کو دوبارہ کھیلنے کی اجازت دی جائے لیکن سکریٹری بورڈ انوراگ ٹھاکر نے کہاکہ دونوں کرکٹرس پر تاحیات امتناع کے بارے میں نظرثانی نہیں ہوگی ۔ ٹھاکر نے میڈیا والوں کو بتایا کہ اس کیس کے معاملے میں بی سی سی آئی کی تادیبی کمیٹی کی جانب سے عائد کردہ امتناع کا فیصلہ برقرار رہے گا ۔ انھوں نے مزید کہا کہ تادیبی کارروائی مختلف ہوتی ہے ، فوجداری کارروائی کچھ اور ہوتی ہے ۔ ماضی میں کی گئی کارروائی ان کھلاڑیوں کی ڈسپلن شکنی کی پاداش میں کی گئی تادیبی کارروائی کی اساس پر ہوئی اور اس ضمن میں اینٹی کرپشن یونٹ کی پیش کردہ رپورٹس کو بھی بنیاد بنایا گیا ۔ لہذا امتناع کا متعلقہ فیصلہ ان کھلاڑیوں پر بدستور لاگو رہے گا ۔ ان تینوں ملزم کرکٹرس کو تحقیقات کے عمل کے دوران جیل میں رہنا پڑا تھا ۔ ان تینوں میں سے سریسانت اور چوان موجودہ طورپر تاحیات امتناع بھگت رہے ہیں جبکہ چنڈیلا کے معاملے کی سماعت ہنوز جاری ہے ۔ دونوں کھلاڑیوں پر تاحیات امتناع نامی گرامی لیگ کو دہلادینے والے اسکینڈل کے بعد بورڈ نے عائد کیا تھا۔

 

خود پر الزامات کے بعد خودکشی کا سوچا تھا : سریسانت
کوچی۔29 جولائی ۔(سیاست ڈاٹ کام) آئی پی ایل اسپاٹ فکسنگ کیس میں بری ہونے والے ہندوستانی کرکٹر ایس سریسانت نے کہا ہے کہ انہوں نے فکسنگ الزامات پر خود کشی کا بھی سوچا تھا لیکن پھر انہوں نے خود کو مضبوط کیا اور اپنا کیس لڑنے کیلئے تیار کیا۔ ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ آئی پی ایل میں فکسنگ الزامات میری زندگی کا سب سے مشکل دور تھا، اس دور میں گھر والوں کے علاوہ اور کسی نے ساتھ نہیں دیا۔ انہوں نے کہا کہ تہاڑ جیل میں ایک بار میں ان الزامات سے اتنا پریشان تھا کہ خود کشی کرنے کا سوچ لیا تھا لیکن شکر ہے کہ اب میں الزامات سے بری ہو چکا ہوں، یہ میرے لئے سب سے پرسکون وقت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب میں پھر سے ہندوستان کیلئے کرکٹ کھیلنے کے خواب دیکھ رہا ہوں۔ میں جلد ہی انڈین کرکٹ بورڈ کے سکریٹری انوراگ ٹھاکر سے ملاقات کروں گا اور خود پر لگائی گئی پابندی اٹھائے جانے پر بات کروں گا۔

TOPPOPULARRECENT