Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / سعودی عرب میں 2000 روپئے ہندوستانی کرنسی نہیں چلے گی

سعودی عرب میں 2000 روپئے ہندوستانی کرنسی نہیں چلے گی

عازمین حج میں تشویش بعض اخبارات اور چیانلس کی خبروں سے الجھن
حیدرآباد ۔ 18۔ جولائی (سیاست نیوز) کیا 2000 روپئے کی ہندوستانی کرنسی سعودی عرب میں قابل قبول نہیں ہے ؟ یہ سوال عازمین حج میں تشویش پیدا کر رہا ہے کیونکہ حج کمیٹی آف انڈیا کے حوالے سے مختلف اخبارات اور چیانلس نے یہ خبر نشر کی ہے کہ جاریہ سال عازمین حج 2000 روپئے کی نئی کرنسی سعودی عرب نہیں لیجا پائیں گے۔ کسٹمس حکام نے اس سلسلہ میں رہنمایانہ خطوط جاری کئے۔ مختلف ذرائع سے پھیلائی جارہی ہے ، ان خبروں سے عازمین حج الجھن کا شکار ہیں اور وہ تلنگانہ حج کمیٹی سے اس بارے میں استفسار کر رہے ہیں ۔ ملک کے ایک قومی انگریزی اخبار اور بعض ٹی وی چیانلس نے سنٹرل حج کمیٹی عہدیداروں کے حوالے سے بتایا ہے کہ سعودی عرب حکومت نے 2000 کی نئی کرنسی نوٹ کو ریال میں تبدیل کرنے سے انکار کردیا ہے۔ لہذا عازمین حج اگر 2000 کی کرنسی ساتھ رکھیں گے تو اسے ایرپورٹ پر ہی جمع کرلیا جائے گا ۔ عازمین حج کو مشورہ دیا گیا کہ وہ 100 اور 500 روپئے کے کرنسی نوٹ اپنے ساتھ رکھیں تاکہ انہیں کوئی دشواری نہ ہو۔ ان نوٹوں کو بآسانی سعودی ریال میں تبدیل کیا جاسکے گا۔ بتایا جاتا ہے کہ 2000 کی نئی کرنسی کے بارے میں ہندوستان میں مختلف شبہات اور جعلی کرنسی کی تیاری کی اطلاع پر سعودی حکام نے نئی کرنسی کو قبول نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔ اگرچہ حج کمیٹی کے سابق چیف اگزیکیٹیو آفیسر کے حوالے سے یہ خبر عام کی گئی لیکن موجودہ چیف اگزیکیٹیو آفیسر نے اس طرح کی کسی بھی پابندی سے لاعلمی کا اظہار کیا ہے۔ سنٹرل حج کمیٹی کا کہنا ہے کہ اس سلسلہ میں کسٹمس حکام کی جانب سے کوئی ہدایات وصول نہیں ہوئی ہیں۔ اسی دوران اسپیشل آفیسر تلنگانہ حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور نے کرنسی کے تنازعہ پر سنٹرل حج کمیٹی سے تحریری وضاحت طلب کی ہے ۔ واضح رہے کہ فی عازم 25000 روپئے ہندوستانی کرنسی یا 10,000 امریکی ڈالر ساتھ رکھنے کی اجازت ہے۔

TOPPOPULARRECENT