Friday , August 18 2017
Home / ہندوستان / سماج وادی پارٹی کارکنوں کی فائرنگ میں لڑکے کی ہلاکت

سماج وادی پارٹی کارکنوں کی فائرنگ میں لڑکے کی ہلاکت

2 مفرور ملزمین گرفتار ، رکن اسمبلی کے خلاف بھی کیس درج
مظفر نگر ۔ 11 ۔ فروری : ( سیاست ڈاٹ کام ) : ضلع شیاملی میں جشن فتح کے موقع پر سماج وادی پارٹی کارکنوں کی فائرنگ میں ایک 8 سالہ لڑکے کی موت کے سلسلہ میں پولیس نے 2 مفرور افراد بشمول ایک کلیدی ملزم کو گرفتار کرلیا ۔ سرکل آفیسر نیشانک شرما نے بتایا کہ علاقہ کرینا میں کل رات 2 ملزمین غیور علی اور انعم کو گرفتار کرلیا گیا ۔ غیور علی جو کہ نو منتخبہ بلاک صدر نفیسہ کے شوہر ہیں اور اور انعم کے خلاف 7 فروری کے فائرنگ واقعہ میں غیر ضمانتی وارنٹ جاری کردیا گیا تھا ۔ جب کہ مقامی عدالت نے دیگر 3 ملزمین ممتاز ، نفیس اور مرسلین کو 15 فروری تک خود سپردگی اختیار کرلینے کی ہدایت دی ہے ۔ یہ واقعہ اس وقت پیش آیا تھا جب سماج وادی پارٹی کارکنوں نے مجالس مقامی کے انتخابات میں پارٹی امیدوارہ نفیسہ کی کامیابی پر جشن منا رہے تھے ۔ اس وقت ایک 8 سالہ لڑکا رکشا میں بیٹھ کر وہاں سے گذر رہا تھا کہ فائرنگ کی زد میں آکر ہلاک ہوگیا ۔ پولیس نے مختلف دفعات کے تحت 200 نامعلوم افراد کے خلاف کیس درج کیا تھا اور مفرور ملزمین کے بارے میں اطلاع دینے پر 5 ہزار روپئے کے انعام کا اعلان کیا تھا ۔ قبل ازیں کیرینا کے رکن اسمبلی ناہید حسن اور ان کے 30 حامیوں کے خلاف کیس درج کیا تھا ۔ جن پر فائرنگ کے واقعہ کی فلم بندی کرنے والے ایک نیوز چیانل کے صحافی کو دھمکیاں دینے کا الزام ہے تاہم رکن اسمبلی حسن نے اس الزام کی تردید کی کہ وہ یا ان کے حامیوں نے 2 جرنلسٹوں پر حملہ کیا تھا اور بتایا کہ حکمران جماعت کو رسواء کرنے کے لیے اپوزیشن کی دانستہ کوشش ہے ۔

TOPPOPULARRECENT