Thursday , August 17 2017
Home / دنیا / سمندری تنازعہ پر آسیان کا چین پر تنقید سے گریز

سمندری تنازعہ پر آسیان کا چین پر تنقید سے گریز

وینٹین (لینز) چین کو آج اس وقت غیرمعمولی سفارتی کامیابی حاصل ہو ئی جب جنوبی مشرق ایشیاء کے اہم مالک نے جنوبی چین کے سمندر میں اس کے توسیع پسندانہ عزائم پر نکتہ چینی سے گریز کیا حالانکہ اس بلاک کے بعض ارکان بھی بیجنگ کی اس کارروائی کا نشانہ بنے ہوئے ہیں۔ اسوسی ایشن آف ساؤتھ ایسٹ ایشین نیشنس ( آسیان) کے 10 ارکان نے کافی بحث و مباحث کے بعد ہلکا تنقیدی بیان جاری کیا جو کسی کی گوش مالی کے مترادف بھی نہیں ہے ۔ اس سے آسیان میں پائی جانے والی تفریق کا اندازہ کیا جاسکتا ہے حالانکہ اسے اپنے اتحاد پر غیرمعمولی فخر ہے ۔بات چیت کے بعد مشترکہ بیان جاری کرتے ہوئے آسیان کے وزرائے خارجہ نے کہاکہ جنوبی چین کے سمندر میں جاری حالیہ سرگرمیوں پر انھیں تشویش ہے ۔ اس بیان میں سرگرمیوں کے حوالے سے چین کانام بھی نہیں لیا گیا ۔ یہاں تک کہ فلپائن اور چین کے مابین تنازعہ کے سلسلہ میں انٹرنیشنل ثالثی پینل کے فیصلہ کا بھی تذکرہ نہیں کیا گیا جس نے جنوبی چین کے سمندر میں بیجنگ کے دعوے کو غیرقانونی قرار دیا تھا اور یہ بھی کہا تھا کہ فلپائن منصفانہ طورپر مظلوم فریق ہے ۔ چین نے اس فیصلہ کو جعلی قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا تھا ۔ اس نے کہاتھا کہ ہیگ کے ٹریبونل کو اس باہمی تنازعہ میں فیصلہ کا اختیار نہیں ہے چین نے اس کے برعکس فلپائن سے راست مذاکرات کی خواہش ظاہر کی تھی ۔

TOPPOPULARRECENT