Thursday , August 17 2017
Home / عرب دنیا / سنیما اور کنسرٹ سے اخلاقی زوال ‘ سعودی مفتی اعظم

سنیما اور کنسرٹ سے اخلاقی زوال ‘ سعودی مفتی اعظم

ریاض 14 جنوری ( سیاست ڈاٹ کام ) سعودی عرب کے اعلی ترین مفتی نے فلموں اور موسیقی کے کنسرٹس سے اخلاقی زوال کا انتباہ دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ فلموں اور موسیقی کو اگر ملک میں رواج دیا جاتا ہے تو اس سے اخلاق متاثر ہوجائیں گے ۔ مفتی اعظم عبدالعزیز الشیخ نے سبق نیوز کی ویب سائیٹ پر پیش کئے گئے اپنے ٹی وی انٹرویو میں کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ موسیقی کے کنسرٹس اور فلمیں اخلاقی زوال کا سبب ہیں۔ علما کی سعودی سپریم کونسل کے سربراہ اس سوال کا جواب دے رہے تھے کہ کیا مملکت کی جنرل اتھاریٹی برائے تفریح کی جانب سے کنسرٹس اور فلموں کی اجازت دی جاسکتی ہے ۔ انہوں نے خبردار کیا کہ سنیما گھروں میں ایسی فلمیں دکھائی جاسکتی ہیں جو آزاد خیال ‘ فحش ‘ غیر اخلاقی اور بے کار ہوں ۔ کیونکہ یہ لوگ باہر سے آنے والی فلموں پر انحصار کرتے ہیں ایسے میں ہمارا کلچر متاثر ہوسکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ گانوں کے کنسرٹس میں بھی کوئی اچھی بات نہیں ہوتی ۔ ان کا کہنا تھا کہ موسیقی سے تفریح اور سنیما گھر قائم کرنا در اصل جنسی اختلاط کی نمائندگی کرنا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ابتداء میں خواتین کیلئے علیحدہ جگہوں کو مختص کیا جائیگا تاہم بعد میں مرد و خواتین سب ایک جگہ جمع ہوجائیں گے اور اس کے نتیجہ میں اقدار اور اخلاقیات متاثر ہونگے ۔ انہوں نے کہا کہ ثقافتی اور سائیٹنفک میڈیا کے ذریعہ تفریح ٹھیک ہے ۔ انہوں نے سعودی عرب کی جنرل اتھاریٹی سے خواہش کی کہ وہ فلموں کے ذریعہ برائی کے دروازے نہ کھولے ۔

TOPPOPULARRECENT