Wednesday , October 18 2017
Home / ہندوستان / سونیا ‘ پوار ‘ کرت ‘ مایا وتی اور راجناتھ کو سی آئی سی کی نوٹسیں

سونیا ‘ پوار ‘ کرت ‘ مایا وتی اور راجناتھ کو سی آئی سی کی نوٹسیں

مرکزی اطلاعاتی کمیشن کے رجسٹرارپر دوہرے معیار اپنانے کا الزام آر کے جین کی شکایت
نئی دہلی ۔17جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی اطلاعاتی کمیشن ( سی آئی سی ) نے تازہ نوٹسیں تقریباً تمام قومی سیاسی پارٹیوں کے اعلیٰ سطحی قائدین راجناتھ سنگھ ‘ مایاوتی ‘ سونیا گاندھی ‘ پرکاش کرت ‘ شرد پوار اور سدھاکر ریڈی کو روانہ کرتے ہوئے انہیں سماجی کارکنوں کی جانب سے آر ٹی آئی کے سوالات کا جواب نہ دینے پر اپنے اجلاس پر حاضری کا حکم دیا ہے ۔ نام بنام نوٹسیں اُس وقت جاری کی گئیں جب کہ شکایت کرنے والوں میں سے ایک آر کے جین نے الزام عائد کیا کہ سی آئی سی کے رجسٹرار نے دوہرے معیار اختیار کررکھے ہیں اور چھ قومی سیاسی پارٹیوں بی جے پی  ‘ کانگریس ‘ بی ایس پی ‘ این سی پی ‘ سی پی آئی ایم اور سی پی آئی کے قائدین کے ساتھ مختلف رویہ اختیار کررہا ہے ۔ انہوں نے صرف سونیا گاندھی کو نوٹس جاری کی ہے جب کہ دیگر قائدین کو نوٹسیں جاری نہیں کی گئی ۔ سی آئی سی نے اعلان کیا ہے کہ یہ پارٹیاں آر ٹی آئی قانون 2013ء کے تحت معلومات فراہم کرنے کے پابند ہیں ۔ جین نے آر ٹی آئی درخواستیں داخل کی تھیں اور کانگریس و دیگر سیاسی پارٹیوں سے معلومات طلب کی تھیں کہ داخلی انتخابات کیلئے انہیں مالیہ کہاں سے فراہم کیا جاتا ہے ‘۔ فبروری 2014ء میں روانہ کی گئی ان درخواستوں کا کوئی جواب نہیں دیا گیا اس کے بعد سی آئی سی میں شکایت کی گئی ۔ جن قائدین سے جواب طلب کیا گیا ہے کہ ان کی تعداد 22ہیں اور انہیں کمیشن کے اجلاس پر پیش ہوکر کمشنروں بمل جولکا ‘ سریدھر آچاریولو اور سدھیر بھارگو کو معلومات فراہم کرنے کی ہدایت دی گئی ہے ۔ قبل ازیں ایک نوٹس سونیا گاندھی کے نام روانہ کی گئی تھی اور باقی پارٹیوں کے قائدین پر توجہ دینے سے گریز کیا گیا تھا اس پر شکایت کنندہ جین نے اعتراض کرتے ہوئے چیف الیکشن کمیشن سے اس کی شکایت کی تھی ۔ اپنی شکایت میں چیف انفارمیشن کمشنر آر کے ماتھر سے کہا گیا تھا کہ سی آئی سی کے رجسٹرار ایم کے شرما نے سیاسی پارٹیوں کے قائدین کے درمیان فرق و امتیاز کا رویہ اختیار کیا ہے ۔ صرف صدر کانگریس سونیا گاندھی کو نوٹس جاری کی گئی ہے جب کہ شکایت میں راجناتھ سنگھ ‘ پرکاش کرت ‘ شرت پوار ‘ مایاوتی اور بی سدھاکر ریڈی کے نام بھی تھے لیکن انہیں نوٹسیں جاری نہیں کی گئیں ۔ جین نے الزام عائد کیا کہ بی جے پی کے اس وقت کے صدر راجناتھ سنگھ کا نام بھی ان کی شکایت میں شامل تھا۔

TOPPOPULARRECENT